اسلام انسانی حقوق کا پاسبان

انسانی کا پاسبان

 

مصنف : سید جلال الدین انصر عمری

 

صفحات: 174

 

حقوق ِانسانی کے سلسلہ میں کا تصور بہت ہی واضح اور اس کا کردار بالکل نمایاں ہے ۔ اس نے فرد اور  جماعت اور مختلف سطح کے افراد اور طبقات کے کا تعین کیا اور عملاً یہ  حقوق فراہم کیے  ۔ جن افراد اور طبقات کے حقوق ضائع ہور ہے تھے  ان کی نصرت وحمایت میں کھڑا ہوا اور جو لوگ ان حقوق پر دست درازی کر رہے تھے ان پر سخت تنقید کی اور انہیں دنیا اورآخرت کی وعید سنائی ، کو ان کے  ساتھ بہتر سلوک کی وترغیب دی۔ مجید انسانی کی ان کوششوں کی اساس ہے اور میں ان کی قولی وعملی تشریح موجود ہے ۔قرآن وحدیث کا اندازِ بحث ونظر مروجہ قانونی کتابوں کا سا نہیں ہے۔کسی کو جاننے کےلیے  پورے قرآن اور ذخیرۂ کودیکھنا چاہیے۔ فقہاء کرام او رماہر ین نے تفصیل سے اس پر غور کیا ہے اور کےتعین کی اپنے دور کےحالات وظروف کے لحاظ سے   کوشش کی ہے ۔ اسلامی کے سمجھنےمیں اس سے بڑی مدد ملتی ہے ۔ زیر  کتاب ’’ انسانی کا پاسبان‘‘ کے ممتاز عالم دین  محترم  مولانا سید جلال الدین عمری ﷾ کی  تصنیف ہے ۔موصوف ایک جید عالم دین ،بہترین خطیب، اورممتاز مصنف کی حیثیت سےمعروف ہیں ۔ قرآن وسنت کا گہرا رکھتے ہیں ۔ موضوع کا تنوع،اسلوب کی انفرادیت، طرزِ استدلال کی ندرت اور وبیان کی شگفتگی ان کی نمایاں خصوصیات ہیں ۔موصوف  مختلف موضوعات پر دودرجن سےزائد کتب کےمصنف ہیں ۔کتاب ہذا میں مصنف نے  بڑے عالمانہ  انداز میں انسانی اور اس کےتاریخی پس منظر کا معروضی مطالعہ کر کے  اس کے بنیادی تصورات کو  واضح کیا ہے ۔ تعالیٰ  کتاب کو عوام الناس کے لیے نفع بخش بنائے (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
پیش لفظ 7
انسانی کا تصور ( تاریخی پس منظر 11
بنیادی تصورات
بنیادی تصورات 21
خالق ومالک ہے 22
کا وجود کی مشیت کے تابع ہے 23
سےاستفادہ کا ہر شخص کوحق ہے 25
صرف ایک کا بندہ ہے 26
مذہبی غلامی کا جواز نہیں ہے 28
محرتم ہے 29
فرماں روائے حقیقی ہے 31
کا حاصل ہے 34
اخلاق اور کا تعلق 35
کے سامنے جواب دہی کا احساس 36
فرد کے شخصی اورذاتی
زندہ رہنے کا 40
حق 44
عدل و انصاف کا قیام 47
کی برتری 51
ریاست کی نگراں ہے 53
کسی کو غلام نہیں بنایا جاسکتا 54
کسی کو ناحق سزا نہیں دی جاسکتی 55
عزت و آبرو کاحق 56
کا 58
مظلوم کاحق 59
بنیادی ضروریات کی تکمیل کاحق
معاشی جدوجہد 62
64
مکان 65
خادم اور سواری 67
معاشی خوش حالی 67
حکومت کی ذمہ داری 69
سماجی و معاشرتی
فکر کی 74
عمل کی 76
اظہار خیال کی 78
خاندان بسانے کا 80
نجی زندکی میں عدم مداخلت 82
ملک وملت کی خدمت کا 86
تنقید اور کا 88
کم زور افراد اور طبقات کے
عورت کے 92
کے 93
بیوہ کے ساتھ حسن سلوک اور اس کےحقوق 95
یتیموں کے ساتھ حسن سلوک اور ان کےحقوق 96
غلاموں اور محکوموں کے ساتھ حسن سلوک اوران کےحقوق 102
محتاجوں اور مسکینون کےساتھ حسن سلوک اور ان کےحقوق 106
ضعیفوں کےساتھ حسن سلوک اور ان کے 108
معذور کےاخلاقی اور قانونی
صبر کی تلقین 113
ذمہ داریوں میں تخفیف 113
صلاحیتون کا اعتراف 116
معذور دہرے اجر کا مستحق ہے 119
معاشرے کی ذمہ داری 120
حسن سلوک کیا جائے 122
دل جوئی کی جائے 124
بدسلوکی نہ کی جائے 126
پاگل غیر مکلف ہے 127
پاگل سےمتعلق بعض 128
کم زور عقل والوں کی رعایت 129
دفاع کا
دفاع میں جان دینا ہے 133
اپنی ذات کا دفاع 136
کیا اپنی کا دفاع واجب ہے؟ 136
مال کا دفاع 137
کیا مال کا دفاع واجب ہے ؟ 139
عفت و عصمت کا دفاع 141
دفاع میں تعاون 142
دفاع کرنے والے پر حملہ آور کےنقصان کی ذمہ داری نہیں ہے 145
دفاعی اقدام میں الاسہل فالاسہل کے 148
کسی بھی اقدام کا فیصلہ حالات کےتحت ہو گا 150
دفاعی اقدام کے لیے ثبوت چاہیے 151
خلاصہ بحث 153
کی کا
عقیدہ اور کے لیے جبر کی اجازت نہیں ہے 156
کے رسولوں کا احترام 161
ذمیوں کے 162
شخصی پر عمل کاحق 163
پر گفتگو ہوسکتی ہے 163
پر گفتگو کےحدود 164
کتابیات

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
3.9 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...