اسلام میں مذہبی رواداری ( سید صلاح الدین )

میں مذہبی رواداری ( سید صلاح الدین )

 

مصنف : عبد الرحمن

 

صفحات: 311

 

اسلام  کے بڑے بڑے محاسن اور خوبیوں میں سے ایک  خوبی یہ بھی ہے کہ یہ دین، رواداری، عفوودرگذر، رحمت، آسانی اور انسانیت کا ہے۔ تمام بنی نوع کے لیے یہ دین خوشخبری دینے والا اور ڈرانے والا ہے۔ کی خوبصورتی حسن اور تاثیر کی بنیاد عفوودرگذر، رحمت وعدل اور بلند ترین اخلاق پر قائم ہے۔ انہی اخلاقِ عالیہ ہی کی بدولت لوگ دینِ اسلام میں جوق در جوق داخل ہوئے۔ دین اسلام کی بلندترین بے مثال اخلاقی، عقدی اور ایمانی اقدار کی بناء پر یہ لوگوں میں مقبول ہوا۔ اسلام کی بلند ترین اور لوگوں کے دلوں پر اثر انداز ہونے کے لحاظ سے گہری ترین قدروں میں سے یہ بھی ہے کہ عفوودرگذر اور رواداری کو اپنایا جائے۔ اسی لیے و میں بے شمار اور مسلسل نصوص شرعیہ بیان ہوئی ہیں جو کو اس عظیم خوبی سے متصف ہونے پر ابھارتی ہیں۔ نبی کریم ﷺکی طیبہ میں اس کی عملی مثالیں ملتی ہیں تاکہ الٰہی کا روشن چہرہ لوگوں کے سامنے واضح ہو جائے۔ کرام، تابعین عظام آج تک اور تک آنے والے لوگوں نے یہ خوبی آپﷺکی طیبہ سے ہی سیکھی ہے۔ نے دوسرے مذھب کے پیرؤوں کے ساتھ رواداری کی بڑی فراخ دلی کے ساتھ دی ہے ۔ خاص طورپر جو غیر مسلم کسی ریاست کے باشندے ہوں ، ان کے جان ومال ، عزت وآبرو اور کے تحفظ کو اسلامی ریاست کی ذمہ داری قراردیا ہے ۔ اس بات کی پوری رعایت رکھی گئی ہے کہ انہیں نہ صرف اپنے مذھب پر عمل کرنے کی آزادی ہو ، بلکہ انہیں روزگار ، اور حصولِ انصاف میں برابر کے مواقع حاصل ہوں ، اُن کے ساتھ حسن ِ سلوک کا معاملہ رکھا جائے اور ان کی دلآزاری سے مکمل پرہیز کیا جائے ۔ زیر کتاب” میں مذہبی رواداری “ کے معروف عالم عبد الرحمن صاحب کی تصنیف ہے جس میں انہوں نے کی رواداری پر گفتگو کی ہے۔ تعالی سے ہے کہ وہ مولف کی اس عظیم خدمت کو اپنی بارگاہ میں قبول فرمائے اور ان کے میزان حسنات میں اضافہ فرمائے۔ (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
دیباچہ 7
تمہید 18
کی نوعیت 25
میں آلام مصائب 27
کی راہ میں کرام کےمصائب 28
ہجرت 34
غزوات جارحانہ تھے یامدافعانہ 35
فتح مکہ 52
اشاعت 55
کی کامیابی کابڑا سبب 58
رسول ﷺ کے پیرووں کی جان نثاری 59
اصلی 62
آسمانی کتابوں کی صداقت پر ایمان 63
دنیاکی قوموں کےساتھ رویہ 65
روادارسی میں رسول اکرم ﷺ کااسوہ حسنہ 67
اورمسلمان 68
رسول ﷺ اوریہود 69
رسول ﷺ اورعیسائی 79
دعوتی خطوط میں نرمی 81
سفراء کےساتھ رواداری 83
روادارسی کامفہوم 83
کی لڑائیاں 84
انسانیت کوسلام کاپیغام 86
لڑائیوں کےلیے جنگ وصلح 89
94
سپہ سالاری کامثالی نمونہ 95
کرام کااسوہ حسنہ 97
حضرت ابوبکرصدیق ؓ کی رواداری 97
انسانیت کی حمایت 98
عفوودرگذرکی مثالیں 98
جنگ میں انسانی رحمدلی 99
غیر مسلموں کےحقوق کی نگہبانی 99
نجران کےعیسائیوں کومراعات 100
عہد صدیقی میں کااحترام 101
حضرت عمرفاروق کی روارداری 114
حضرت عثمان ؓذی النورین کی روراداری 114
حضرت علی ؓ کی مذہبی روارداری 115
اصلی 117
عیسائیوں کی عدم روادای 119
رومۃ الکبری کی عدم رواداری 119
ساتویں صدی عیسوی میں عیسائیوں کےمظٰالم 123
کاعروج 124
راشدہ اوورمی 124
بنوامیہ اوررومی 129
بنواامیہ کی روادرای 129
سسلی میں مسلمانوں کی حکومت 130
کے اورعیسائی 134
142
الحمراء 145
الحمراء کی 146
میں عیسائیوں کےمظالم 147
انیوزیشن 152
فرانس کے مسلمانوں پر عیسائیوں کےمظالم 154
رومن امپائر اورعباسی خلفاء 156
شارلمین اورہارون رشید 159
ہارون رشید کی رواداری 160
مامون الرشید کی رواداری 162
معتصم باللہ کی روادرای 163
صقلیہ میں عیسائیوں کےمظالم 164
غیر قوموں کےساتھ عباسیوں  کی عام رواداری 165
مقتفی بامراللہ کی رواداری 167
عباسیوں کی رواداری 171
آل سلجوق اورعیسائی 176
الپ ارسلان کی روادراسی 177
صلیبی جنگ 179
صلاح الدین ایوبی کی روادری 185
عیسائیوں کی انتقامی جذبات 191
دولت عثمانیہ اورعیسائی 192
عثمان خان کی خوبیاں 193
اورخان کی رواداری 194
مراہ اول اورمسیحی حکومتیں 196
بایزید اول یلدرم اورشہزادی ڈسپنا 197
بایزید یلدرم کے زمانہ میں صلیبی جنگ 198
محمد اول کی قوت اورکشادہ دلی 200
مراد ثانی کےخلاف مسیحی اتحا د 201
محمد دوم فاتح کی تاتحانہ رواداری 205
بایزید ثانی 207
سلطان بایزید کی برداباری اورروسی سفیر یک بدتمیز ی 207
سقوط قسطنطنیہ کابدلہ میں 208
سلیم اول کی مقبولیت 208
سلیمان اعظم قانی کی رواداری اورعدل پر وری 208
سلیم ثانی کےخلاف عیسائیو ں کی لڑائیاں 212
مرادثالث کےخلاف ہنگری اور آسٹریا کی جنگ 212
محمد ثالث کےخلاف 213
حکومتوں کی محاذ آرائی 213
احمد اول سےعیسائیوں کی چھیڑچھاڑ 213
مصطفی اول وعثمانی ثانی کےزمانہ میں 213
انتشار پھیلانے کی کوشش 213
مراد اربع کی تعمیری کو شش 214
ابراہیم کے زمانہ میں  عیسائیوں 214
کی انتقامی کاروائیاں 214
محمد رابع کےخلاف عیسائیون  کی سازشیں 214
احمد کو پریلی کی رواداری 217
سلیمان ثانی کی روادرای 217
احمد ثانی کےخلاف عیسائیوں کی جارحیت 219
مصطفی ثانی کےخلاف معاندانہ اقدام 219
احمد ثالث کی شرافت اخلاف کے  خلاف عیسائیون کاتعصب 219
محمد اول کی قسطنطنیہ پر قبضہ کرنےکی کوشش 221
عثمان ثالث کاشریفانہ رویہ 222
مصطفی ثالث کےخلاف پر فریب ریشہ دوانیاں 222
عبدالحمید اول کے خلاف ی 222
ملکہ کیتھرائن کےمنصوبے 224
سلیم ثالث کےزمانہ میں ملکہ کیتھرائن  کاخواب  اورعیسائی حکومتوں کی دشمنی 224
مصطفی رابع کےعہد میں سے ترکوں کےخراج کی کوشش 231
محمود ثانی سے نپولین کی غداری اورعیسائی حکومتوں کی تخریبی کارروائیاں 231
سلطان عبدالمجید خان کی حکومت 238
سلطان عبدالعزیز 344
برطانوی سامراجیت کاعروج 244
روس   کی سامراجیت 245
بلقان میں بغاوت کرانے کی کوشش 246
سلطان مراد خامس 248
سلطان عبدالحمید خان ثانی کی مذہبی رواداری 248
عیسائیوں کی مخالفت 253
طرابلس کاحملہ 253
بلقان کی جنگ 254
جنگ عظیم اول 254
ترکوں کےکارناموں پر ایک 257
مسیحی عورتوں کی سازش 263
ترکوں کی خوبیاں 265
ترکوں کاتمدن 268
قدرت کاانتقام 269
عیسائیوں سے قدرت کاانتقام 270
271
کی مغلیہ سلطنت اورعیسائی 280
عیسائیوں کی اصلسی فطرت 288
حکمرانوں کےمظالم 289
پاپا ئیت 292
تتمہ 298

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
7.3 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...