تقویٰ کے ثمرات اور گناہوں کے اثرات

تقویٰ کے ثمرات اور گناہوں کے اثرات

 

مصنف : سعید بن علی بن وہف القحطانی

 

صفحات: 171

 

تقویٰ کا مطلب ہے پیرہیز گاری ، نیکی اور ہدایت کی راہ۔ تقویٰ دل کی اس کیفیت کا نام ہے جس کے حاصل ہو جانے کے بعد دل کو گناہوں سے جھجک معلوم ہونے لگتی ہے اور نیک کاموں کی طرف اس کو بے تاہانہ تڑپ ہوتی ہے۔ ۔ تعالیٰ کو تقوی پسند ہے۔ ذات پات یا قومیت وغیرہ کی اس کی نگاہ میں کوئی وقعت نہیں۔ اللہ تعالیٰ کے ہاں سب سے قابل عزت و احترام وہ شخص ہے جو سب سے زیادہ متقی ہے۔ ۔ تقویٰ دینداری اور راہ ہدایت پر چلنے سے پیدا ہوتا ہے۔ بزرگان کا اولین وصف تقویٰ رہا ہے۔ پاک متقی لوگوں کی ہدایت کے لیے ہے۔افعال و کے عواقب پر غوروخوض کرنا تقویٰ کو فروغ دیتا ہے۔اور تقویٰ حاصل کرنے کا ایک بہترین ذریعہ ہے۔ دوسرے الفاظ میں ہم یوں کہہ سکتے ہیں کہ روزے، ترسی کی طاقت کے اندر محکم کر دیتے ہیں۔ جس کے باعث انسان اپنے نفس پر قابو پا لیتا ہے اور تعالیٰ کے حکم کی عزت اور عظمت اس کے دل میں ایسی جاگزیں ہو جاتی ہے کہ کوئی جذبہ اس پر نہیں آتا اور یہ ظاہر ہے کہ ایک کے حکم کی وجہ سے حرام ناجائزاور گندی عادتیں چھوڑ دے گا اور ان کے ارتکاب کی کبھی جرات نہ کرے گا۔ تقویٰ اصل میں وہ صفت عالیہ ہے جو تعمیر و کردار میں بنیادی حیثیت رکھتی ہے۔ عبادات ہوں یا اعمال و معاملات۔ کی ہر کا مقصود و فلسفہ، روحِ تقویٰ کے مرہون ہے۔ یہی وجہ ہے کہ قرآن و میں متعدد مقامات پر تقویٰ اختیار کرنے پر زور دیا گیا ہے۔ خوفِ الٰہی کی بنیاد پر حضرت کا اپنے دامن کا صغائر و کبائر گناہوں کی آلودگی سے پاک صاف رکھنے کا نام تقویٰ ہے۔اور اور اس کے رسول اکرم ﷺ کی نافرمانی کاہر کام گناہ کہلاتا ہے۔ زیر کتاب’’تقویٰ کے ثمرات اورگناہوں کے اثرات‘‘مملکت سعودی کے معروف عالم دین فضیلۃ الشیخ ڈاکٹر سعید بن علی قحطانی﷫ کی کتاب کا ہے۔جس میں شیخ مرحوم نے قرآن و کی متعدد نصوص سے تقویٰ کے موضوع پر سیر حاصل بحث کی ہے۔ کتاب کودوحصوں میں تقسیم کیا ہے ۔ پہلے حصہ میں تقویٰ کےثمرات ،تقوی کا معنیٰ ومفہوم ،تقویٰ کی اہمیت اور متقین کےاوصاف بیان کیے ہیں۔ اور دو سرے حصے میں گناہ کی لغوی واصطلاحی تعریف ،گناہ کا مفہوم اوراس کےمترافات، گناہوں کے راستے، گناہوں کی بنیادیں ،گناہ کی انواع واقسام ،فرد ،معاشرے، کی ذات ،دین، روزی اور اعمال پر گناہوں کےاثرات اور اس کے علاج کو بڑے عام فہم انداز میں پیش کیا ہے ۔شیخ قحطانی اس کتاب کےعلاوہ بھی کئی اصلاحی کتب کے مصنف ہیں وعجم میں مقبول عام کتاب ’’حصن المسلم‘‘ بھی آپ ہی کی تصنیف ہے۔ا تعالیٰ اس کتاب کو عوام الناس کی کاذریعہ بنائے اور ہمیں تقوی ٰ اختیار کرنے اور گناہوں سے بچنے کی توفیق دے (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
پہلا حصہ
تقوی کے ثمرات تقوی کیا ہے ؟
تقوی کالغوی مفہوم 16
تقوی کا اصطلاحی مفہوم 1+6
تقوی کی اہمیت
اول : تعالی کی طرف سے تما م امتوں کو تقوی کی 19
دوم : تقوی اختیار کرنے کا حکم الہی ٰ 20
سوم : تقوی کی ترغیب اور نبویہ 22
چہارم : جنت میں داخلے کا سب سے بڑا ذریعہ تقوی ہے 25
پنجم: بہترین تقوی ہے 26
ششم : بہتر ین زاد راہ تقوی ہے 27
متقین کے اوصاف
متقین کے پانچ اوصاف 29
متقین  کے دیگر گیا رہ اوصاف 30
سورہ آل عمران میں متقین کے مختلف اوصاف کابیان 31
متقین کے مزید چار اوصاف کاتذکرہ 34
تقوی کے ثمرات
کریم سے استفاد کی توفیق 36
کی معیت 36
قیامت  کے روز کے نزدیک بلند مقام زمرتبہ 37
نفع بخش کے حصول کی توفیق 38
جنت میں داخلہ اوراس کی خاص نعمتوں کاحصول 3
کی محبت کا حصول 45
دشمنوں کی مکروہ فریب اور ضرررسانی سے بے خوفی 46
آسمان سےمدد نصرت کانزول 47
لوگوں پر ظلم کرنے اور انھیں ایذ اپہنچانے سے حفاظت 48
اعمال صالحہ کی قبولیت 48
کامیابی کا حصول 49
گمراہی سے حفاظت 49
خوف اورغم سے نجات 50
برکتوں کا نزول 50
اللہ  کی رحمت کا حصول 51
اہل تقوی ہی کے ولی ہیں 52
وباطل میں تمیز کی توفیق 53
شیطان سے تحفظ 54
دنیوی زندگی اورآخرت میں بشارت 55
اجروثواب کا حفاظت 56
دنیا میں نیک انجام 57
دنیا وآخرت کی فلاح وکارمرانی 58
مومن کے لیے طعرائے امتیاز 59
شعائر کی تعظیم کا سبب 60
اعمال کی 60
تعالی کے ہاں اعزازواکرام 61
پریشانیوں اور مصیبتوں سے نجات 62
معاملات میں آسانی 63
گناہوں کی معافی اور اجر وثواب 63
ہدایت اور نصیحت کاحصول 63
دوسرا حصہ
گناہوں کے نقصات  گنا ہ کامفہوم اور اس  کے مترادفات
معصیت (نافرمانی /گناہ ) کی لغوی تعریف 66
معصیت کی اصطلاحی تعریف 66
معصیت کے مترادف الفاظ 67
فسوف وعصیان 68
حُوب 68
ذَنْب 68
خَطِية 69
سَيِة 69
اِثْم 69
فَسَاد 70
عُتُّو 70
لوگ گناہ کیوں کرتے ہیں؟
اول : نفس امار ہ (برائی پر آمادہ کرنے والانفس) 79
دوم : شیطان 80
سوم : شیطان کےانسان تک پہنچنے کے راستے 80
چہار م: چارراستے جن کی حفاظت ہلاکتوں سے نجات کا ذریعہ ہے 81
گناہوں کی بنیادیں
گناہوں کے تین محرکات 86
کفر کے چار ارکان 87
گناہ ؟
ملکی گناہ 89
شیطانی گناہ 89
وحشیانہ گناہ 89
حیوانی گنا ہ 90
گناہوں کی انواع
کبیرہ اور صغیرہ گناہ 91
کبیرہ گناہ کی تعریف 94
صغیرہ گناہ کب کبیرہ بن جاتے ہیں؟ 94
صغیرہ گناہوں پرڈھٹائی اوراصرار کرنا 94
گناہ کو معمولی اورحقیر سمجھنا 95
صغیرہ گناہو ں پر راضی ہونا او ر ان پر فخر کرنا 96
اہل کاگناہ کرنا 96
گنا ہ کی تشہیر کرنا 96
فرداور معاشرے پر گناہوں کے اثرات کی ذات پر گناہوں کے اثرات دل پر گناہوں کی اثرات
گناہ دل کے لیے زہر قاتل 99
سےمحرومی 99
دل میں وحشت 100
دل میں تاریکی 101
گناہ دل کوبزدل او رکمزور کردیتاہے 102
بندے اور رب تعالی کے درمیان 104
گناہوں سے محبت 104
گناہ کو معمولی اور حقیر سمجھنا 105
ذلت ورسوائی کاسبب 106
گناہوں سے عقل پرپردہ 108
دل پر مہر لگ جانا 108
غیرت سے محرومی 109
شرم وحیا کاخاتمہ 112
دل میں ڈر اور خوف 114
دل کی بیماری 114
نفس انسانی کی تذلیل 115
دلوں کامسخ ہوجانا 116
دل کاالٹ جانا 116
سینے کی تنگی 116

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
3.8 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...