علامہ عبد العزیز میمن سوانح اور علمی خدمات

علامہ عبد العزیز میمن سوانح اور علمی

 

مصنف : محمد ارشد شیخ

 

صفحات: 651

 

علامہ عبدالعزیز میمن 23 اکتوبر، 1888ء کو پڑدھری، راجکوٹ، برطانوی میں پیدا ہوئے۔راجکوٹ اور جوناگڑھ سے ابتدائی حاصل کرنے کے بعد پہنچے جہاں سید نذیر حسین محدث دہلوی سے شرف تلمذ حاصل کرنے کےعلاوہ اور دیگر سے اکتساب کا موقع ملا۔ 1913ء میں یونیورسٹی سے مولوی فاضل کا امتحان دیا اور پوری یونیورسٹی میں اول آئے۔ ایڈورڈ کالج پشاور، اورینٹل کالج لاہور اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے شعبہ سے بطور استاد وابستہ رہے۔ قیام کے بعد کراچی میں شعبہ تحقیقات اور کراچی یونیورسٹی میں شعبۂ قائم کیا پھر 1964ء سے 1966ء تک پنجاب یونیورسٹی میں صدر شعبہ عربی کے فرائض انجام دیے۔پروفیسر علامہ عبدالعزیز میمن پاکستان سے تعلق رکھنے والے عربی و کے نامور عالم، استاد اور 30 سے زیادہ کتابوں کے مصنف، علی گڑھ مسلم یونیورسٹی، پنجاب یونیورسٹی اور کراچی یونیورسٹی کے شعبۂ عربی کے صدر تھے۔موصوف عربی کی باریکیوں سے واقفیت کی بناپر دنیا پر چھاگئے اور کی عربی دانی کا پوری دنیا میں ڈنکا پیٹا اور عربوں نے کھل کر نہ صرف یہ کہ ان کا اعتراف کیا بلکہ اس میں ان کی استاذیت تسلیم کی ۔آپ سرعام ادیبوں کوان کی غلطیوں پر ٹوکنےکی جرءت رکھتے تھے اورعرب ان کو شکریے کےساتھ قبول کرتےتھے۔حکومت نے ان کی ادبی کے اعتراف کےطور پر انہیں14 اگست، 1965ء کو صدارتی تمغا برائے حسن کارکردگی عطا کیا۔موصوف نے 17اکتوبر 1978 ءکو کراچی میں وفات پائی ۔ زیرتبصرہ کتاب ’’علامہ عبد العزیز میمن سوانح اور خدمات ‘‘ کی تصنیف ہے یہ کتاب علامہ میمن کے حالات زندگی اور علمی خدمات پر میں اولین کتاب ہے فاضل مصنف یہ کتاب کسی یونیورسٹی سے حصول ڈگر ی کےلیے نہیں لکھی بلکہ سے محبت اور عربی زبان وادب کی ایک عبقری شخصیت سے اردو قارئین کوآگاہ کرنے کےلیے مرتب کی ہے

 

عناوین صفحہ نمبر
پیش لفظ 5
مقدمہ 10
باب نمبر 1:خاندان ،ولادت ،ابتدائی حالات
میمن قوم 33
میمنون کاقبول 33
آباواجداد 34
علامہ میمن کےوالد محترم 35
اہل کاٹھیاواڑ کادینی جذبہ 37
مولانا عبدالخالق اوران کی صحبت کااثر 38
ولادت اورجائے ولادت 39
علامہ عبدالعزیز میمن سوانح اورعلمی 39
ابتدائی 39
راجکوٹ اورجوناگڑھ کےدوست احباب 41
سفر برائے حصول 42
حواشی باب نمبر 1 43
باب نمبر 2:قیام بحیثیت  طالب
آمد 45
قیام کی بعض تفصیلات 47
ایام طالب کایادگار واقعہ 48
اس دور کےاساتذہ کرام 51
میاں نذیر حسین صاحب محدث 51
سےتلمذ 52
ڈپٹی نذیراحمد کی میں مہارت 55
سےمفارقت 57
مولوی محمد اسحاق رامپوری 58
حصول کی خاطر جدوجہد 58
سندحدیث از شیخ حسین بن محسن انصاری 59
پہلی اورعلیحدگی 60
حواشی باب نمبر 1 62
باب نمبر 3:قیام امروہبہ ورامپور بحیثیت  طالب
سےامروبہ روانگی اورقیام 67
امروہبہ سےرامپور اورقیام  رامپور 69
منشی فاضل اورمولوی فاضل کےامتحانات میں نمایاں کامیابی 70
مدرسہ عالیہ رامپور کےاساتذہ 73
رامپور سےلاہور 74
حواشی باب نمبر 3 76
باب نمبر 4۔قیام پشاور (1913ءتا1920ء)  
پشاور آمدکی وجہ 79
قیام پشاور کی بعض تفصیلات 81
دوسری 82
پشاور میں مشاغل 84
قیام  پشاور کےدور کےایک اہم خدمت 84
حواشی باب نمبر 4 92
باب نمبر 5:پہلا قیام لاہور (1920ءتا 1925ء)
اورنیشنل کالج میں ملازمت 93
قیام  لاہور کی بعض تفصیلات 95
مولنا سید طلحہ صاحب سےمصاحبت 96
نزہۃ الخواطر مین عدم شمولیت کی وجہ 98
ندوۃ  العلماء لکھنو میں 99
اورنیشنل کالج کےرفقاء 101
اورنیشنل کالج میں 101
حواشی باب نمبر 5۔ 107
باب نمبر 6:قیام علی گڑھ (1925ءتا1954ء)
مسلم یونیورسٹی علی گڑھ میں تقریر کی پہلی کوشش 109
تقرر کےلئے دوسری کوشش 109
مولانا شروانی کانصیحت آمیز 113
مولانا سید سلیمان ندوی کی تحسین 114
مسلم یونیورسٹی جوبلی تقریبات میں شرکت 115
بوقت تقرری شعبہ وعربی کی صورت حال 115
نصاب میں مفید اصلاحات 116
علی گڑھ میں علامہ میمن کی رہائش گاہ 116
قیام علی گڑھ کی اہمیت 117
علی گڑھ میں روزمرہ کےمعمولات 119
مجلس کےاجلاس میں شرکت 122
امجمعمع العلمی  العربی کی رکنیت 124
ہندکی کانفرنس (لاہور )میں شرکت 126
عالم اسلام  کاطویل 126
ادارہ معارف اسلامیہ لاہور کےاجلاس میں شرکت 129
مولانا سورتی کےالزامات  اورعلامہ  میمن کاجواب 129
علی گڑھ کےدورآخر میں بعض تلخ حالات 139
حواشی باب نمبر 6 140
باب نمبر 7:قیام کراچی (1954ءتا1964ء)
قیام کراچی کی وجوہات 147
شعبہ جامعہ کراچی کی صدارت 149
مرکزی ادارہ تحقیقات کےلیے حصول کتب 150
ادائیگی فریضہ 151
حصول کتب کےلیے مزید کوششیں 153
عالمی مذاکرہ  زیراہتمام یونیورسٹی میں شرکت 157
مرکزی ادارہ تحقیقات میں  منصوبوں کی نگرانی 159
شعبہ جمعہ کراچی اورمرکزی  ادارہ تحقیقات سبکد وشی 160
مرکزی ادارہ تحقیقات علامہ میمن کےبعد 161
بہاولپور 161
حواشی باب نمبر 7: 164
باب نمبر 8:دوسراقیام لاہور (1964ءتا1966)
عالمی کانفرنس میں شرکت 167
قیام لاہور کےمعمولات 170
فیض رسانی کاایک واقعہ 172
پرائڈآف پرفارمنس منجانب حکومت  173
مولوی شمس الدین سے تعلق اوران کی دکان پر گفتگو 173
حواشی باب نمبر 8: 177
باب نمبر 9:قیام کراچی وحیدرآباد (1966ءتا1978ء)
لاہور سےکراچی واپسی اورقیام کراچی وحیدرآباد 179
نگاری پر 179
نزول کانفرنس میں شرکت 180
قومی عجائب گھر کی حصول مخطوطات کمیٹی کےلیےخدمات 182
دورآخرکی تفصیلات 182
اہلیہ کی وفات 183
مستعاد کاآخری دن 185
کی کےثمرات 186
علامہ میمن کےانتقال کےبعد ان کی یاد میں مطبوعات 187
اولاد 190
حواشی باب نمبر 9 192
باب نمبر 10: اورعلامہ میمن
سےتعلق کاآغاز اوردرجہ کمال تک ترقی 193
علامہ میمن کاعربی اسلوب تحریر 196
مخطوطات کےبارے میں وسیع 199
ایک نادر مخطوطہ اورعلامہ میمن کی خدمت 202
نصوص کافن اورعلامہ میمن 202
مفردات قرآنی کی 203
عربی پر خاص توجہ 204
حواشی باب نمبر 10 207
باب نمبر 11:علامہ میمن کی وتحقیقی
علامہ میمن کی تصنیفات وتالیفات 209
علامہ میمن کی غیر مطبوعہ کتب 220
علامہ میمن کاذخیرہ کتب 221
کتب خانہ جامعہ سندھ جام شورو 221
فہرست مخطوطات (درکتب خانہ جامعہ سندھ) 228
کتب خانہ جامعۃ العلوم الاسلامیہ 230
کتب خانہ بیت لالحکمت 231
کتب خانہ ڈاکٹر محمدعمر میمن 231
ودیگر تحریریں 232
علامہ میمن کےاردومقالات 236
حواشی باب نمبر 11 238
باب نمبر 12:عادات وخصائل
شکل وشمائل 239
خوراک 240
سادگی وسخت کوشی 241
نوشی 243
سحرخیزی اورپیدل چلنے کی عادت 244
قوی 245
استغنا وخودداری 250
انداز تدرس 252
مسلک اورعقیدہ 258
گوئی 258
تلامذہ پر شفقت 259
کتابوں سےمحبت 272
خوش مزاجی اورزندہ دلی 274
علامہ میمن کےپسندیدہ اہل قلم 281
ابو العلاءالمقری 282
امام صاغانی 282
مرزاغالب 283
ابن دراج القسطلی 283
کفایت شعاری 283
مالی اورعلمی امداد کی نادر مثال 286
حواشی باب نمبر 12 288
باب نمبر 13:تلامذہ
بحیثیت منفرد استاد 293
ڈاکٹر سید 295
297
ڈاکٹر مختار الدین احمد 299
ڈاکٹر نبی بخش خان بلوچ 303
شبیراحمد خان غوری 306
محمد نظیر کاشمیری 306
مزمل حسین 307
عبدالرحمن آخوندکار 307
ڈاکٹر ریاض الرحمن خان شروانی 307
مولانا امتیاز علی خان عرشی 308
ڈاکٹر محمد چغتائی 310
310
ڈاکٹر شیخ عنایت 312

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
15.3 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...