بدعات مروجہ

بدعات مروجہ

 

مصنف : عبد العزیز بن بن باز

 

صفحات: 66

 

دینِ ایک سیدھا اور مکمل دستورِ ہے جس کو اختیار کرنے میں دنیا و کی کامرانیاں پنہاں ہیں۔ یہ ایک ایسی روشن شاہراہ ہے جہاں رات دن کا کوئی فرق نہیں اور نہ ہی اس میں کہیں پیچ خم ہے ۔ تعالیٰ نے اس کو انسانیت کے لیے پسند فرمایا اوررسول پاکﷺ کی زندگی ہی میں اس کی تکمیل فرمادی۔عقائد،عبادات ، معاملات، اخلاقیات، غرضیکہ جملہ شبہائے زندگی میں کتاب وسنت ہی دلیل ورہنما ہے ۔ہر میدان میں کتاب و کی ہی پابندی ضروری ہے۔ کرام﷢ نے کتاب وسنت کو جان سے لگائے رکھا۔ ا ن کے معاشرے میں کتاب وسنت کو قیادی حیثیت حاصل رہی اور وہ اسی شاہراہ پر گامزن رہ کر دنیا وآخرت کی کامرانیوں سے ہمکنار ہوئے۔ لیکن جو ں جوں زمانہ گزرتا گیا لوگ کتاب وسنت سے دور ہوتے گئے اور بدعات وخرافات نے ہر شعبہ میں اپنے پیر جمانے شروع کردیئے اور اس وقت بدعات وخرافات اور سوء نے پورے کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے۔ جید اہل نے بدعات اور اس کے نقصانات سے روشناس کروانے کے لیے   وعربی میں متعدد چھوٹی بڑی کتب   لکھیں ہیں جن کے مطالعہ سے اہل اپنے دامن کو بدعات سے خرافات سے بچا سکتے ہیں۔ زیر کتابچہ ’’مروجہ بدعات‘‘ سعودی کے شیخ ابن باز﷫ کےرد بدعات کے موضوع پر ایک کتابچہ التحذیر من البدع کا ہے۔ شیخ﷫ نے اس کتابچہ میں نبی کریمﷺ کی ولادت کے سلسلے میں کی جانے بدعات، کی رات خاص اہتمام کا حکم، شعبان کی پندرھویں رات کو لوگوں کا عبادت کے لیے اکٹھا ہونا، ایک جھوٹے نامے کی حقیقت جیسے موضوعات کا قرآنی اوراحادیث نبویہ کی روشنی میں جائزہ لیا ہے اور ثابت کیا کہ ان کا وحدیث سے کوئی ثبوت نہیں یہ ساری بدعات ہیں جو گمراہی وضلالت پر مبنی ہیں۔شیخ ابن باز﷫ کے اس رسالے کا مختلف اہل نے کیا ہے۔ زیر ترجمہ شیخ الحدیث کرم الدین سلفی ﷫ کا ہے اللہ   تعالیٰ شیخ مرحوم اورمترجم کی اس کاوش کو قبول فرمائے اور اس کتابچہ کو عوام الناس کی کا ذریعہ بنائے۔ آمین

 

عناوین صفحہ نمبر
میلاد النبیﷺ کا شرعی حکم 7
میلاد رسول اللہﷺ اور صحابہؓ نے نہیں منایا 11
الٰہی سے ان محفلوں کا کوئی تعلق نہیں 13
رسول اللہﷺ کی میں میلاد منانے کا کوئی ثبوت نہیں 13
کی پہچان 14
میلاد میں اور خلاف شرع امور کا ارتکاب ہوتا ہے 15
اکثر میلادی لوگ جمعہ، با جماعت بلکہ نماز کے تارک ہوتے ہیں 16
رسول اللہﷺ کی تشریف آوری 16
کوئی مدفون یا اس کی دنیا میں نہیں آ سکتی 17
درود و سلام 20
شب 24
صحیح اور یقینی طور پر شب نہیں 25
شب کے منانے کا کوئی ثبوت نہیں 25
پندرھویں شعبان کی محفل اور 32
و کا فیصلہ 33
شب نصف شعبان کے قیام کا آغاز 34
اور فقہاء کا فیصلہ 37
جھوٹا نامہ 45
ماہ 59
رجب کے کونڈے 62
ماہ صفر اورآخری بدھ 65
مولانا احمد رضا خان کا فتویٰ 66

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
1.8 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...