چہرے اور ہاتھوں کا پردہ،شرعی حیثیت اور شبہات کا ازالہ

چہرے اور ہاتھوں کا ،شرعی حیثیت اور شبہات کا ازالہ

 

مصنف : علی بن النحی

 

صفحات: 231

 

ایک پاکیزہ اور ہے ،جو اپنے ماننے والوں کو عفت وعصمت سے بھرپور زندگی گزارنے کی ترغیب دیتا ہے۔ایک خاتون کے لئے عفیف وپاکدامن ہونے کا مطلب یہ کہ وہ ان تمام شرعی واخلاقی حدود کو تھامے رکھے جو اسے مواقع تہمت و فتنہ سے دور رکھیں۔اور اس بات میں کوئی شک وشبہ نہیں ہے کہ ان امور میں سے سب سے اہم اور سرفہرست چہرے کو ڈھانپنا اور اس کا کرنا ہے۔کیونکہ چہرے کا حسن وجمال سب سے بڑھ کر فتنہ کی برانگیختی کا سبب بنتا ہے۔امہات المومنین اور جو عفت وعصمت اور حیاء وپاکدامنی کی سب سے اونچی چوٹی پر فائز تھیں،اور پردے کی حساسیت سے بخوبی آگاہ تھیں۔ان کا طرز عمل یہ تھا کہ وہ پاوں پر بھی کپڑا لٹکا لیا کرتی تھیں،حالانکہ پاوں باعث فتنہ نہیں ہیں۔زیر کتاب” چہرے اور ہاتھوں کا ،شرعی حیثیت اور شبہات کا ازالہ”سعودی کے معروف عالم فضیلۃ الشیخ علی بن عبد النمی کی تصنیف ہے۔جس پر فضیلۃ الشیخ بن عبد الرحمن الجبرین اور فضیلۃ الشیخ عبد ناصر رحمانی کی تقدیم ہے۔مولف نے اس کتاب میں وسنت کی روشنی میں مضبوط سے چہرے اور ہاتھوں کے پردے کو ثابت کیا ہے۔اور چہرے کے پردے کا انکار کرنے والوں کا مدلل رد کیا ہے۔ تعالی مولف کی اس کاوش کو قبول فرمائے اور تمام ماؤں اور بہنوں کو عفت وعصمت کا مجسمہ بننے اور کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔آمین

 

عناوین صفحہ نمبر
مقدمہ ( ناصر رحمانی) 11
مقدمہ ( بن عبد الرحمٰن الجبرین) 20
مقدمہ (مؤلف) 21
اس موضوع پر لکھنے کا سبب 25
کی اہمیت 27
مہم 27
کا اسلوب 28
کا منہج 29
کی تشکیل اور تخطیط 29
تمہید 32
پہلا 33
دوسرا 33
تیسرا 33
چوتھا 37
پانچواں 38
چھٹا 38
ساتواں 38
آٹھواں 40
نواں 40
دسواں 42
ان شبہات کا بیان، جو چہرے کے پردے کے وجوب پر اٹھائے گئے ہیں۔ 59
ان شبہات کا بیان جو معترضین نے وجوب کے پر وارد کیے ہین 60
کی 62
کپڑے اتار رکھنے کی 67
الخمار کی اور صوت 86
الجلباب کی اور صفت 91
بے پردگی کے قائل حضرات 99
ان شبہات کا بیان جو آیات میں قلت فہم کی بناء پر پیدا ہوئے 102
عبد للہ بن مسعود کی 103
ان شبہات کا بیان جو ایسی پر مشتمل ہیں جن کی تصحیح میں تساہل کارفرما ہے 113
ایسے شبہات سے استدلال ، جو کسی عذر شرعی کی بناء پر محل نزاع سے خارج ہوجاتے ہیں 128
ایسے شبہات جو کسی احتمال کے پیدا ہونے کی وجہ سے قابل استدلال نہیں رہتے 133
ایسے شبہات کا بیان جو غلط استنباطات پر مبنی ہیں 148
ایسے شبہات کا بیان، جن میں مذکور بعض اشیاء یا مسمیات کی حقیقت کے تعین یا فہم میں لوگ وہم کا شکار ہو گئے) 154
رائے اور تقلید کی بناء پر استدلال 159
ایسے شبہات سے استدلال جو کسی طرح بھی ان کے مؤقف پر دلالت نہیںکرتے 173
کچھ عقلی شبہات جو ناقابل تسلیم ہیں 194
ایسے شبہات جو باطل قسم کے اعتراضات پر قائم ہیں 197
ان شبہات کا بیان جو ہاتھوں کے پردے کے وجوب پر اٹھائے گئے ہیں 202
ایسے شبہات کا بیان جن کی سند ہی ضعیف ہے 205
ایسے شبہات کا بیان جو محل نزاع ہی سے خارج ہیں 207
ایسے شبہات کا بیان، جو ردی اور فاس قسم کے استنباطات پر قائم ہیں 214

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
5.3 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...