انتہا پسندی سے نجات ممکن ہے

انتہا پسندی سے نجات ممکن ہے

 

مصنف : نا معلوم

 

صفحات: 268

 

انتہا پسندی ایک ایسا نفسیاتی رویہ ہے جس کے باعث اپنے روزمرّہ کے معمولات خصوصاَ سیاسی اورعقیدتی معاملات میں برداشت، رواداری اور اعتدال کی حد پار کرجاتا ہے ۔ ایسے میں وہ نہ صرف اپنی سوچ ، نظریے یا عقیدے کو ہی برحق قرار دیتا ہے بلکہ انہیں دوسروں پر بھی مسلط کرنے کی کوشش کرتا ہے جس سے معاشرے میں انتشار کی کیفیت پیدا ہوتی ہے اور معاشرے کا نظم درہم برہم ہوجاتا ہے ۔ اس نفسیاتی کیفیت کو شدت پسندی اور جنون بھی کہتے ہیں جس میں اگر تشدد اور زور زبردستی کا عنصر بھی شامل ہو تو یہ رویہ دہشت گردی میں بدل جاتا ہے ۔ ایک معتدل و متوازن ہے جو میانہ روی کو پسند کرتاجبکہ غلو اور انتہا پسندی کے خلاف ہے۔اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اعتدال کسے کہتے ہیں ، اس کی حدود کیا ہیں اوران کا تعیّن کیسے کیا جائے جن کے اس پارانتہا پسندی کی حد شروع ہوتی ہے ؟انتہا پسندی کی اتنی ہی پرانی ہے جتنی حضرت کی عمر ہے۔ زیر کتاب’’ انتہا پسندی سے نجات ممکن ہے ‘‘ عاصمہ جہانگیر کےادارے ’’ کمیشن برائے انسانی حقوق‘‘ کی طرف سے شائع کردہ ہے ۔ اس کتاب میں انسانی اور انتہائی پسندی کے متعلق مختلف لبرل وحضرات کے تحریر کردہ کو مرتب کر کے سات ابواب میں تقسیم کیا گیا ہے ۔اس کتاب کےمندرجات سے ادارہ کا اتفاق ضروری نہیں ہے کیونکہ یہ کتاب عاصمہ جہانگیر اورحنا جیلانی جیسی لبر ل مغرب زدہ خواتین وحضرات کے مضامین پر مشتمل ہے ۔ محض اور اس پرنقد،تجزیہ وتبصرہ کی غرض سے قارئین کتاب وسنت کے لیے پبل کیا گیا ہے ۔(م۔ا)

 

عناوین صفحہ نمبر
پہلاباب:انسانی کی تحریک کا پس منظر ارتقاء اور انسانی حقوق کا آغاز
انسانی حقوق ۔مذہبی اورتاریخی پس منظر(محترمہ زارا ادریس 7
انسانی کا ارتقاء عصری تقاضے اور اقوام متحدہ کاکردار(اشرف شریف) 14
انسانی کی تحریک ترقی یاتنزلی (سارای مینڈلسن) 29
دوسرا باب:جمہوریت اور انسانی انسانی حقوق اور معاشی ترقی کے مابین تعلق
جمہوریت تاریخی پس منظر اور عصری تقاضے (محترمہ حنا جیلانی) 37
جمہوری کلچر کے فروغ کےلیے سیاسی جماعتوں کا کردار(ڈاکٹرمہدی حسن) 71
میں آمریت کے مختلف ادوار ایک سرسری (ڈاکٹر مہدی حسن ) 82
بجٹ میں انسانی کےلیے مختص شدہ رقم ۔ایک جائزہ(ڈاکٹر طاہرہ ڈاکٹر نادیہ طاہر) 86
جمہوریت انسانی اور ترقی(ڈاکٹر رضوی) 100
تیسراباب: انتہا پسندی اس کے پھیلا اور انسداد میں ریاست کا کردار
انتہا پسندی تاریخی پس منظر(ڈاکٹر منظور آغا) 109
کی من مانی تشریح انتہا پسندی کےلیے آلہ کار ایک تاریخی جائزہ (اجمل کمال 112
میں انتہا پسندی کی مختلف صورتیں(عامررانا) 124
میں انتہا پسندی پس منظر اور اسباب (آئی ۔اے رحمٰن) 119
جدیدیت سےدوری انتہاری پسندی سے قربت (خالد احمد) 127
انتہا پسندی کے فروغ میں جاگیرواری نظام کا کردار (مہتاب راشدی) 130
انتہا پسندی کی راہ ہموار کرنا نظام تعلیمی (آئی۔اے۔رحمٰن) 133
پاکستانی میں مذہبیت کا بڑھتا ہوا رجحان (عامر رانا) 139
قدامت پرستی انتہا پسند نہ سوچ کی محرک (پریوز ہوا بھائی 142
ریاست کامعذرت خواہانہ رویہ انتہا پسندوں کی قوت کا موجب (آئی ۔اے۔ رحمٰن) 145
انتہاپسندوں کےمشترکہ مقاصد(عامررانا) 148
انتہاپسندی کے عوامل اور اثرات (آئی۔اے۔رحمٰن) 151
انتہاپسندی کی وجوہات اور ساخت مختلف ممالک سےچند ایک مثالیں(خالداحمد) 158
انتہا پسندی کے خاتمے کےلیے ہماری ذمہ داریاں (آئی۔ اے۔ رحمٰن) 162
چوتھا باب :انتہاپسندی کے انسدادیافروغ میں میڈیاکاکردار
جاننے کاحق(آئی۔ اے۔ رحمٰن) 169
الیکٹرانک میڈیامیں غیرتربیت یافتہ عملہ کی بھرمار اوراس کے اثرات (ڈاکٹرمہدی حسن) 177
نوزائیدہ نجی ٹی وی چینلزکی مقابلہ بازی اور لاشعوری طورپر انتہا پسندی کا فروغ (ڈاکٹر مہدی حسن) 180
انتہا پسندی کے انسداد یافروغ میں میڈیا کا کردار(امجدعلی شاکر) 183
فکر کے زاویے (حفیظ بزدار) 186
ذرائع میں اخلاقی اقدار کافروغ اور عملہ کی تربیت وقت کی اہم ضرورت(زہرہ یوسف) 188
پانچواں باب: میں بین المذاہب آہنگی اور عدم برداشت کے
مذہبی رواداری ۔تاریخی پس منظر(ڈاکٹر مبارک علی) 195
رواداری مفہوم تاریخی حوالہ اور عصری تقاضے(جہدحق) 200
مذہبی ہم آہنگی اور رواداری (حفظ بزدار) 205
ذاتی مقاصد کےلیے کا استعمال ۔تکفیر مذہب کے چند اہم مقدمات (جہدحق) 206
کی لبرل اقدار۔ رواداری اوربھائی چارہ کےلیے مشعل راہ (خالدرحمان) 209
فرقہ واریت سے نجات کا راستہ (ڈاکٹر مہدی حسن) 215
چھٹا باب: مختلف میں انسانی کا تصور
انسانی کاتصور مذہبی اور تاریخی پس منظر (پروفیسر رفیق محمد) 221
میں کی عظمت اور کا تصور (عدنان عادل) 231
اقلیتوں کو درپیش کو مذہبی نہیں سیاسی بصیرت سے دیکھنے کی ضرورت (آئی۔اے۔رحمٰن) 235
ساتواں باب :انسانی کے نفاذ حقوق کے فروغ حقو ق کی تحریک کو مستحکم کرنے کےلیے کی تشکیل اور عوام تک رسائل حاصل کرنے میں سول سوسائٹی کا کردر
میں انسانی پر عملدرآمد آمد کی راہ میں رکاوٹیں (حناجیلانی) 241
ریاستی سرپرستی میں بنیادی انسانی کی پامالی ناقابل تلافی نقصان(آئی ۔اے۔رحمٰن) 246
تک رسائی حاصل کرنے میں سول سوسائٹی کا کردار(ایم ابو الفضل) 250
جاگیردارانہ نظام انسانی کے حصول میں رکاوٹ (آئی۔ اے ۔رحمٰن) 252
قائدگی سوچ کے فروغ کےلیے مشعل راہ (اورشیرکاؤس جی) 256
انتظامیہ کی بے حسی کی حصول میں بڑی روکاٹ ( آئی۔ اے ۔رحمٰن) 259
کے فروغ کےلیے عملی ( ہود بھائی) 263

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
6.1 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Leave A Reply