اسلام کا انتظامی قانون

کا انتظامی

 

مصنف : ڈاکٹر لیاقت علی خان نیازی

 

صفحات: 491

 

قرآنِ حکیم میں انتظامی امور کے لیے تدبیر کی اصطلاح استعمال کی گئی ہے جیسے سورۃ ’’ الرعد‘‘ اور سورۃ ’’ یونس‘‘ اور ’’ السجدۃ‘‘ میں ’’ یدبر الامر‘‘ کے الفاظ استعمال ہوئے ہیں ۔ انتظامی اداروں کےاختیارات کو کنٹرول میں رکھنے کے لیے انتظامی یا ادارت کی بڑی اہمیت ہے ۔کیونکہ اس طرح عوام الناس کےحقوق کی بھی بطرز احسن پاسبانی ہوجاتی ہے۔ یہ عظمت اورخصوصیت دینِ کو ہی حاصل کہ شروع اسلام سے ہی انتظامی واضح کردئیے گئے تھے۔نبی اکرم ﷺ نےولایت مظالم جیسےادارے کا سنگ بیناد رکھا۔ اس لحاظ سےحضور اکرم دنیا کےپہلے محتسب ہیں ۔لہذااہل مغرب کا یہ دعویٰ غلط ہے کہ احتساب کا نظام سویڈن میں 1809ء میں پہلی دفعہ قائم کیا گیا ۔نبی کریم ﷺ نےایسے انتظامی قوانین مقرر فرمائے کہ جس کی نظیر دنیا میں نہیں ملتی حتی کہ ماضی قریب کے ترقی یافتہ ممالک اور انگلینڈ میں 19ویں صدی کے اواخر تک نظام ادارت یا ادارت کا تصور مکمل طورپر نہیں تھا۔ زیر کتا ب’’ کا انتظامی قانون ‘‘ جناب ڈاکٹر لیاقت علی خان نیازی کی اہم تصنیف ہے ۔ ڈاکٹر صاحب کا اسلوب بیان نہائیت سادہ اور دلنشین ہے۔ مواد کی فراہمی میں بساط بھر وتفتیش سے کام لے کر ایک مبسوط کتاب مرتب کی ہےفاضل مصنف نے کتاب کے شروع میں کا خاکہ پیش کیا ہے ۔ اسلامی دستور کے خدوخال اور نظام شوریٰ پر بھی باب دوم میں بحث کی گئی ہے ۔اسلامی انتظامی قانون کے مطابق عورت سربراہ مملکت نہیں بن سکتی فاضل مصنف نےاس موضوع پر بھی بحث کی ہے۔ اور مختلف انتظامی اداروں مثلاً اور نظام احتساب پر بھی گفتگو کی گئی ہے۔اس کتاب میں بیان کئے گئے وحدیث سے ماخوذ ہیں۔اسلامی کا کوئی بھی قابل ذکر پہلو انداز نہیں کیا گیا ہے۔مصنف نے اس کتاب میں علمائے ومعاصرین کےاقوال کےعلاوہ کی آراء بھی نقل کی ہیں۔یہ کتاب اپنی افادیت کےپیش نظر اس لائق ہے کہ اس کے کچھ ابواب تعلیمی اداروں میں بطور نصاب پڑھائے جائیں۔ تعالیٰ مصنف کی اس کاوش کو شرف قبول یت سے نوازے ۔

 

عناوین صفحہ نمبر
تقدیم 11
پیش لفظ 12
تاثرات 14
باب نمبر1:باب نمبر1: کا انتظامی قانون :اجمالی تعارف 17
نبی اکرمﷺ کے دورمیں انتظام وانصرام 44
نبی اکرمﷺ کا انتظام سلطنت اور پاکستانی معاشرے کےلیے رہنمائی 46
نبی اکرمﷺ کے انتظام وانصرام پر اور کا 49
میں انتظام وانصرام 61
کا انتظام سلطنت اورپاکستانی معاشرے کےلیے رہنمائی 65
پر اور کا 67
باب نمبر2:مختلف انتظامی ادارے: اور نظام احتساب وغیرہ 73
73
عدالت مظالم کی اہمیت 75
کوتوال کامحکمہ 78
عامل السوق 79
میں احتساب کاتصور 79
احتساب ۔عرفی 81
احتساب ۔شرعی 81
محتسب کا ادارہ کے آئینے میں 84
سربراہ مملکت اور احتساب 85
احتساب کاعمل میں 91
باب نمبر3: دستورکے خدوخال 114
ریاست کا آئین 115
سربراہ مملکت کی جوابدھی 120
خلیفہ کا انتخاب 121
عہدنبویﷺ کی خصوصیات اور اجتہادات 125
عورت بطورسربراہ مملکت 129
کامفہوم 130
باب نمبر4:عدلیہ(نظام قضاء) 132
عدل کی اہمیت 132
کابورڈ 138
ایک علاقہ میں متعدد قاضیوں کا تقرر 140
عدل گستری (مراسلہ حضرت عمرؓ) 141
حضرت ابوموسی اشعری کےنام حضرت عمرؓ کےخطوط 144
حضرت معاویہ ؓکےنام حضرت عمرؓ کاخط 147
حضرت ابوعبیدہ ؓ کےنام حضرت عمرؓ کاخط 150
قاضی شریحؓ کےنام حضرت عمرؓ کاخط 150
قاضی کاتقرر 150
قاضی کی صفات 151
قاضی کے اوصاف 152
خاتون بطورقاضی 152
قاضی کی معزولی 152
مشیران عدالت 153
عدالت میں کی موجودگی 154
دوران سماعت قاضی کےلےی ہدایات 154
مفتی 160
مخاصمانہ عدالتی کاروائی 163
حکم کا ادارہ 164
انسانی حریت کاتصور 168
باب نمبر5: میں انتظامیہ (بیورہ کریسی)کاکردار 170
بیورہ کریسی کیاہے؟ 170
اولی الامرکون ہیں؟ 170
حضوراکرمﷺ کےدورمیں انتظامیہ 174
سرکاری افسران کی صفات 183
سرکاری ملازمین کےلیے نبی اکرمﷺ کے فرامین کامجموعہ کتاب الصدقۃ 184
کیاہتھیار ڈالے جاسکتےہیں ( نقطہ نظر؟) 186
غیرہ قانونی حکم میں اطاعت نہیں 189
حضرت ابوبکرؓ کےدومبارکہ میں حکام کی نگرانی 192
حضرت عمرؓ اوراحتساب 193
حضرت علیؓ کےدورمبارکہ مین احتساب 200
حضرت عثمانؓ کےدورمبارکہ میں حکام کی نگرانی 201
میں بیورہ کریسی(ڈپٹی کمشزکاادارہ ایک تجزریہ) 203
باب نمبر6: کا بلدیاتی نظام 216
میں بلدیاتی نظام کاتصور 217
بلدیاتی مالیات 218
مختلف محکمہ جات 218
میئرکاعہدہ 220
دیوان الشوریٰ 221
نظام بلدیات میں فرائض کاخلاصہ 222
آئین اکبری میں کوقوال کےفرائض 223
صاحب الشرط 224
بلدیاتی ملازمین کےحقوق وفرائض ضابطہ اخلاق 224
کے بلدیاتی نظام کی چند تجاویز 226
باب نمبر7: میں فوج کا ادارہ 229
کا نظریہ 229
داخلی 230
فکری 231
مسلح 231

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
9.5 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...