اسلام کا نظام قانون

کا نظام

 

مصنف : عبد القادر عودہ

 

صفحات: 291

 

کا معنی ہے کے سامنے سر تسلیم خم کر دینا اور جس سے وہ روکے بلا اعتراض رک جانا۔اسلام ایک عالمگیر ہے جس کا مقصد پوری انسانیت کی اور فلاح ہے۔ کے بنائے ہوئے کو کے بنائے ہوئے قوانین کی بالاتری سے محدود کرتا ہے۔منبر ومحراب سے لے کر حکومت واقتدار تک ہر شعبہ زندگی میں اسلام ہماری مکمل رہنمائی کرتا ہے۔ ساری کا خالق ،مالک اور رازق تعالی ہے۔وہی اقتدار اعلی کا بلا شرکت غیرے مالک اور انسانوں کا رب رحیم وکریم ہے۔انسانوں کے لئے مقرر کرنا اسی کا اختیار کلی ہے۔اس کا عدل بے گناہ افراد میں اطمینان خاطر پیدا کرتا ہے اور بڑے جرائم پر اس کی مقرر کردہ سخت سزائیں مجرموں کو ارتکاب جرم سے روکنے ،انہیں کیفر کردار تک پہنچانے اور دوسرے افراد کے لئے عبرت وموعظت کا سامان مہیا کرنے کا باعث ہیں۔ عدل وانصاف کی ضمانت فراہم کرتا ہے،معاشرتی کا تحفظ کرتا ہے اور عزت وحرمت کی حفاظت کو یقینی بناتا ہے۔انسانوں اور رب کے باہمی تعلق کا تقاضا یہ ہے کہ کے کے نفاذ کے نتیجے میں زندگی میں وہ راحت،آرام اور آسائشیں پیدا ہوں جن کا حکیم میں بار بار وعدہ کیا گیا ہے۔ زیر کتاب” کا نظام قانون” کے معروف عالم اور اخوان المسلمون کے نائب مرشد عام محترم جناب عبد القادر عودہ شہید ﷫کی تصنیف “الاسلام واوضاعنا القانونیۃ” کا اردو ہے۔ترجمہ محترم جناب غلام علی صاحب نے کیا ہے۔جو قبل ازیں جماعت اسلامی کے جریدے میں بالاقساط چھپ چکا ہے۔کتاب کے آخر میں اسی موضوع سے متعلقہ چند اور مولف مصوف کی ہی ایک دوسری کتاب کا بھی ترجمہ کر یکجا کر دیا گیاہے۔ تعالی سے ہے کہ وہ مولف اور مترجم کی اس کوشش کو اپنی بارگاہ میں قبول فرمائےاور ان کے میزان حسنات میں اضافہ فرمائے۔آمین

 

عناوین صفحہ نمبر
پیش لفظ 5
تقدیم و اعتذار 23
موجودہ سے معذرت 23
اظہار خیال قانوناً ممنوع ہے 24
کیا ایسا تجرد تعطل ممکن ہے ؟ 25
جج لاقانونیت کا تماشائی بن کے نہیں رہ سکتا 27
جج کے انحراف کو بھی خاموشی سے نہیں دیکھ سکتا 29
جج غیر جانبدار کب رہ سکتا ہے 30
میں جج ہوں لیکن ہوں 31
میری غیر جانبداری کفر ہے 32
امر بالمعروف اور نہی عن المنکر پر فرض ہے
کی اہمیت 214

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
5.3 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...