اسلام کا قانون شہادت

کا

 

مصنف : سید محمد متین ہاشمی

 

صفحات: 475

 

مجید میں پر  ابدی اور عالمگیر کلیات واصول بیان ہوئے ہیں اور رسول ﷺ کا جو مبارک اور قیمتی ذخیرہ کتب کی صورت میں موجود ہے اس میں اس کی مزید تشریح ، اور عملی صورت اور حالات وواقعات کے مزید کے کرنے کا کافی وشافی اور مستند مواد موجود ہے۔اس کے بعد واعمال کرام ،تابعین عظام آئمہ مجتہدین اور فقہائے ممالک اسلامیہ واسلامی عدالتوں کے فیصلے بڑی اہمیت رکھتے ہیں۔ان کی روشنی میں کی مزید راہیں کھلتی رہتی ہیں۔اسی طرح کرام نے  بے شمار تصانیف وتالیفات  کے ذریعے بے شمار فتاوی اور کی کتب تدوین کی ہیں جن میں کو سائنٹیفک ،اور جدید خطوط میں پیش کرنے کی کامیاب کوشش کی ہے۔شہادت کے موضوع پر جو سرمایہ کے دامن میں موجود ہے ۔اس کے مقابلے میں دنیا کے تمام دیگر ممالک کا کل سرمایہ بلا مبالغہ عشر عشیر کی حیثیت نہیں رکھتا۔بد قسمتی کی بات یہ ہے کہ اسلام کا بیشتر سرمایہ عربی، اور میں ہے،جو معروف کتب خانوں میں موجود ہے۔اسی کمی کو دور کرنے کے لئے یہ کتاب” کا شہادت ” لکھی گی ہے۔جو دیال سنگھ ٹرسٹ لائبریری لاہور کے ریسرچ ایڈ وائزر مولانا  سید محمد متین ہاشمی صاحب کی تصنیف ہے اور  ان کی دوستی اور خدمت کا منہ بولتا ثبوت ہے۔آپ نے اس کتاب میں اسلام کا قانون کے حصہ فوجداری کو ٹچ کیا ہے۔اور اس سلسلہ میں معروف مصادر سے استفادہ کیا ہے۔آپ جہاں مناسب محسوس کرتے ہیں وہاں اپنے رائے کا بھی اظہار فرماتے ہیں۔یہ کتاب قانون کے طلباء کے لئے انتہائی مفید اور  ایک شاندار ہے۔ تعالی سے ہے کہ وہ مولف موصوف کی اس کاوش کو قبول فرمائے اوران کے میزان حسنات میں اضافہ فرمائے۔آمین

عناوین صفحہ نمبر
تشکر 3
فہرست 4
تقاریظ 17
مقدمہ 25
باب اول
تمہیدی مباحث 35
کے لغوی معنی 35
کی تعریف 35
کی تعریف 35
کے اقسام 36
پہلی فصل : کی اہمیت 37
دوسری فصل : کی  بنیادی شرائط 41
باب دوم
کےبنیادی 44
پہلی فصل: ادائے 44
دوسری فصل : قبضہ کی 50
تیسری فصل :قطعی 54
چوتھی فصل : بلا دعویٰ 60
پانچویں فصل : بیان کےبعض حصوں کا باطل ہونا 62
چھٹی فل : میں شناخت کامسئلہ 63
ساتویں فصل : دستاویزی اور اس کے متعلقات 66
آٹھویں فصل : سماعی 69
نویں فصل : شہادۃ علی الشہادۃ 74
دسویں فصل: بیان میں ترمیم 78
گیارھویں فصل : ظنی 80
بارہویں فصل :منفی 82
تیرھویں فصل : غیر عادل کی 84
چودھویں فصل: اختلاف فی الشہادۃ 86
پندرھویں فصل : اختلاف بین الدعویٰ والشہادۃ 94
سولہویں فصل: غیر مسلم کی 101
ستر ھویں فصل : میں تقدم زمانی 107
اٹھارھویں فصل : رجوع عن الشہادت 110
الف ۔بعض گواہوں کا رجوع عن الشہادۃ 111
ب۔ حدود و قصاص میں رجوع عن الشہادۃ 114
ج: نکاح، و خلع کےمقدمات میں رجوع عن الشہادۃ 116
د۔ بیع و شراء کے مقدمات میں رجوع عن الشہادۃ 121
ہ: ہبہ کے مقدمات میں رجوع عن الشہادۃ 121
و: ولاء اور نسب کے مقدمات میں رجوع عن الشہادۃ 122
ز۔ متفرق مقدمات میں رجوع عن الشہادۃ 123
انیسویں فصل : جھوٹی  126
بیسویں فصل :گواہ کا معیار 127
اکیسویں فصل: تزکیہ الشہود 145
تزکیہ العلانیہ 146
نزکیۃ السر 147
بائیسویں فصل: قرائن قاطعہ 158
تیئسویں فصل: اقرار 159
لغوی معنی 159
مفسرین کی تعریف 159
فقہی تعریف 159
الف ۔اقرار کاتکرار 172
ب۔ اقرار مجہول 174
ج۔ مریض کا اقرار 175
د۔ و کا اقرار 179
چوبیسویں فصل: رجوع عن الاقرار 182
باب سوم
قتل کی 185
پہلی فصل :ادائے 185
دوسری فصل: اختلاف فی الشہادۃ 202
تیسری فصل : رجوع عن الشہادۃ 210
چوتھی فصل: قتل کا اقرار 213
پانچویں فصل : قسامت 219
چھٹی فصل : جدید دور کےقرائن قاصد 227
الف۔ پوسٹ مارٹم 228
ب۔ فوٹو سٹیٹ اور ٹیپ ریکارڈ کی حیثیت 231
ج۔ امتحان خون 232
د۔ بالوں اور ہاتھوں کےنقوش 233
ہ۔ نزعی بیان 235
مقدمات حدود میں
باب چہارم
پہلی فصل: زناکی 238
کی زنا کی شرائط 240
دوسری فصل: ادائے 242
تیسری فصل : رجوع عن الشہادۃ 252
چوتھی فصل: شہادۃ علی الشہادۃ 261
پانچویں فصل : احصان 262
شرائط احصان 244
چھٹی فصل: زنا کے گواہوں کی خصوصیات 266
چشم دید گواہ ہونا 266
مرد ہونا 266
بروقت ادائے 267
گواہوں کی تعداد 267
حاکم کا ذاتی 267
قرائن قاطعہ 269
ساتویں فصل : اقرار جرم 271
آٹھویں فصل : رجوع عن الاقرار 279

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
8.6 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...