اسلامی نظام ایک فریضہ ایک ضرورت

نظام ایک فریضہ ایک ضرورت

 

مصنف : ڈاکٹر یوسف القرضاوی

 

صفحات: 315

 

ایک کامل اورمکمل دستور ہے، جوزندگی کے تمام شعبوں میں انسانیت کی راہ نمائی کرتا ہے، اسلام جہاں انفرادی زندگی میں فردکی پر زوردیتاہے وہیں اجتماعی زندگی کے زرین وضع کرتاہے، نظامِ میں جہاں عبادت کی اہمیت ہے وہیں معاملات ومعاشرت اور کو بھی اولین درجہ حاصل ہے، کاجس طرح اپنانظامِ ہے اوراپنے اقتصادی ہیں اسی طرح اسلام کا اپنانظامِ وحکومت ہے، کا نظامِ سیاست وحکم رانی موجودہ جمہوری نظام سے مختلف اوراس کے نقائص ومفاسد سے بالکلیہ پاک ہے،لیکن اسلام میں سیاست شجرِ ممنوعہ نہیں ہے،یہ ایسا کامل ضابطہٴ ہے جو نہ صرف کو ومعاشرت کے وآداب سے آگاہ کرتا ہے، بلکہ زمین کے کسی حصہ میں اگراس کے پیرو کاروں کواقتدار حاصل ہو جائے تووہ انہیں شفاف حکم رانی کے گربھی سکھاتاہے، کی طرح اسلام”کلیسا“ اور” ریاست“ کی تفریق کاکوئی تصورپیش نہیں کرتا۔ زیر کتاب” نظام ،ایک فریضہ ،ایک ضرورت “عالم کے مشہور ومعروف اسکالر اور مفکر محترم ڈاکٹر یوسف القرضاوی کی تصنیف “الحل الاسلامی فریضۃ وضرورۃ” کا ہے۔ محترم انصاری صاحب نے کیا ہے۔مولف نے اپنی اس کتاب میں نظام کی اہمیت وضرورت پر روشنی ڈالی ہے۔ تعالی سے ہے کہ وہ مولف کی اس کاوش کو قبول فرمائے اوران کے میزان حسنات میں اضافہ فرمائے۔آمین

 

عناوین صفحہ نمبر
مقدمہ
عرض متر جم 5
مقدمہ ازمولف
تبدیلی کی ضرورت
واحد متبادل نطام صرف 13
غیر نظام کی ناکامیا
اقتصاد ی شعبہ میں ناکامی 14
حریت فکر او طمانیت قلب 1
کے میدان ناکامی 15
عسکری شعبہ میں ناکامی 16
اخلاقی میدان میں ناکامی 17
روحانی میدان میں ناکامی 48
اور میدان  میں  ناکامی 19
کی وطنی حکومت پر
المیشاق کی تنقید 23
اجتماعی تبدیلی سے چشم پو شی 23
عربوں سے رابطہ قائم کرنے
میں غفلت
نام نہاد آزادی سے فریب خوردگی 24
سو شلز  کی نا کامی
نمایاں اسباب
اجتماعی تبدیلی کی حقیقت 25
عالم اور کے
درمیان حقیقی رشتہ 31
عالم  کیلئے عملی
کی تشکیل 33
عددی قوت کی تنطیم 33
سیاسی میدان میں سے مر کز سے گریز
عالم کے لئے اقتصادی
نظام کی تشکیل
افرادی عنصر
روحانی و تہذیبی رشتہ 35
عربی کیلئے ایک ہمہ گیر
نظریہ و ضع کر نیکی ایک موہوم کوشش 40
ردکمیو نزم کی وجوہات 45
نطام ہی نعم البدل ہے 48
روحانی اور ا خلاقی خاکہ 54
روحانی 45
منزل کے روشن نشانات
ربانی اور روحانی او صاف کا احیاء
تقویٰ کی ا ٓپیاری 55
اخلاقی اقدار  کی ترویج 55
نظام پر فخر 56
شعائر سے محبت 56
پیغام کا احیاء 57
بدعات و خرافات کی بیح گئی 58
تعلیمی اور ثقافتی خاکہ
تعلیمی عمارت کی بنیادیں 59
تحریک 56
اسلامی کابنیادی عنصر 60
نصابی کتب پر نظرثانی 61
با کردار اساتذہ کا اتنخاب 61
واضح  ہد ف کا تعین 62
نظام ثقافت کا خاکہ 63
ثقافت پر کام 64
ادبی تخلیق 67
اجتماعی خاکہ
اجتماعی 67
چند اجتماعی پہلو 69
اقتصادی خاکہ
اور 73
انفرادی ملکیت 75
چند اہم ا قتصادی پہلو 76
عسکری خاکہ
حربی قوت کی فراہمی 81
اسلحہ سازی کا اہتمام 82
کی آبیاری 83
سیاسی خاکہ
داخلی 85
انسانی حریت کے پہلو 86
خارجہ 90
قیادت صالحہ 91
سازی کا خاکہ
نظام کی بنیادی
نظام رحمت 99
ریاست کی ضرورت 100
تحفظ عقیدہ 102
اقامت عبادات 102
102
زکوٰۃ 104
105
105
اخلاق و آداب 106
اجتماعی  کا نفاذ 107
فریضہ 108
مصادر سے استفادہ
کتاب وسنت سے استفارہ 109
غیر ماخذ ساے استفادہ
استفادہ کی حدود دو شرائط 118
کاغلط مفہوم 119
نظام میں
کامقام 120
غیر اور متشا بہات 122
ایک ناقبل تجزیہ مکمل نظام 122
اسلامی کی ہمہ گیر اطاعت 123
اسلا م یا ہلیت 124
اسلام ۔۔ایک و حدت 125
اور و کردار 125
کی ہمہ گیر فرمانروائی 131
صرف عنوان 131
غیر عنوانات
واصطلا حات 133
کسی کا آلہ کار نہیں 136
نظام کے ثمرات
نظام کے ثمرات 143
ایمان اور وجود کی تکمیل 144
زندگی میں توازن کاقیام 152
و کا مکمل علاج 159
صالح کی تیاریق 169
امت کی زندگی میں استقرار
اور طما نیت کا حصول 173
وحدت و اخوت امت 180
امت اسلامیہ کا اتحاد 187
امت میں زندگی اور قوت
کی کا احیاء 193
امت کی آزادی
استحکام کا حصول 200
ایک ، آزمودہ ِ، بار آور نظام 202
نظام کے قیام کا راستہ
اسلامی  نظام ۔ قیام کی راہیں
پہلا راستہ ۔ حکومتی 217
کا مفہوم 218
بلاداسلامیہ میں استعماری
تخریب کادائرہ 219
تبدیلی میں اقتدار کا  دائرہ 223
نظام کے عملی نفاذ کیلئے
حکام کے  ارادہ کی وسعت 225
حقیقی کے قیام
کے عالمی قوتوں پر اثرات 226
دوسرا راستہ ۔ فوجی 229
اس رائے پر بحث 232
فوجی کی کیفیت 240
تیسرا راستہ ۔ وعظ ارشاد 251
وعظ ارشاد کافی نہیں 252
چو تھا راستہ ۔ اجتماعی خد مات
اجتماعی عمل کا راستہ 255
اجتماعی کی اہمیت 256
چند ضروری امور 261
اصل راستہ ۔ تحریک
کا احیاء 262
اجتماعی سر گرمی 262
ذمہ دار قیادت 264
شر عی قیادے کب وجود میں
آ تی ہے 265
اطاعت گزار فوج 268
منصوبہ بندی کی ضرورت 269
منصوبہ بندی کے عناصر 272
منصوبہ  بندی اور 275
تحریک کا فریضہ 278
تحریک کامیابی 280
مسلم نسل 281
اکثریت کا 283
رکاوٹوں کااسلامی ٍ283
رکاوٹوں پر غلبہ 584
عوامی رکاوٹیں 284
مخالف قوتوں کی رکا وٹیں 285
تحریک کی داخلی ر کاوٹیں 286
کمزور تنظیم اور منصوبہ بندی 294
کا فقدان 295
کل کی تحر یک 296
تحریک کا مستقبل 298

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
6.2 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...