اسلامی تحریک کے 30 بنیادی اصول

تحریک کے 30 بنیادی

 

مصنف :

 

صفحات: 138

 

تحریک  کا لفظ حرکۃ سے ماخوذ ہے ۔ تحریک اس جدوجہد کا نام  ہے جو کسی نصب العین کے حصول کےلیے منظم طور پر کی جائے۔تاریخ کسی قوم کی نہیں ہے  بلکہ ایک تحریک کی تاریخ ہے اور ایک نظریے کےعروج وزوال کی داستان ہے۔محترم جناب صاحب   نے زیر کتاب ’’ تحریک کے 30 بنیادی ‘‘ میں  تیس ایسے بنیادی پیش کیے ہیں کہ جن کی روشنی میں تحریک سے وابستہ افرادد اپنے ملک میں اپنے اپنے مخصوص حالات کے پیش کی عالمگیر دعوت کے لیے جدوجہد  کرسکتے ہیں ۔چشتی صاحب نے اس مختصر کتاب میں  بہت سے اہم سوالات اور اشکالات کے جوابات پیش کیے ہیں ۔ ان سوالات میں اسلام کیا ہے ؟،تحریک کیا ہے ؟، کیا ہے ؟،اقامت دین کامفہوم کیا ہے ؟ اداروں کی تشکیل کیوں ضروری ہے ؟تنظیم اور اجتماعیت کی ضرورت اور اہمیت کیا ہے ۔جیسے اہم  سوالات شامل ہیں ۔یہ  کتاب در اصل مصنف کے  اس موضوع پر مختلف ممالک میں  دئیے گئے لیکچرز  کی  کتابی صورت ہے۔

 

عناوین صفحہ نمبر
ابتدائیہ 7
نمبر 1:ہم ایک تحریک ہیں 10
کیاہے؟ 10
ہی نجات کاذریعہ ہے 12
مسلم تھے 13
حضرت لوط مسلم تھے 14
حضرت یعقوب علیہ السلام کےبارے بیٹے مسلم تھے 15
تورات پرعمل کرنےوالے بھی مسلم تھے 16
فرعون نےبھی مرنے سےپہلے کہاکہ میں مسلم ہوں 17
ملکہ سباکااسلام 18
حضرت عیسی علیہ السلام کےحواریوں کااسلام 19
رسول کواسلام کاحکم 19
تحریک کیاہے؟ 22
تحریک زندگی کی علامت ہے 22
انعام یافتہ لوگوں کاراستہ ہے 23
جامع پرمشتمل 24
آخری رسول کی پیروکارہے
نمبر2:ہمارامقصد رضائے الہی کاحصول ہے 27
نمبر3:ہمارانصب العین اقامۃ الدین ہے 29
اقامۃ کامطلب 29
الدین کامطلب 34
اقامۃ الدین کامطلب 39
ایک شبہ کاازالہ 39
کےقرآنی استعمالات 42
اقامت ،اداروں کےبغیر ممکن نہیں 44
کےپانچ مفہوم 46
نمبر4: ایک نہیں،بلکہ بندگی کاایک جامع نظامِ زندگی ہے۔ 47
نمبر5:ہم اکمال پریقین رکھتےہیں 48
نمبر6: ہی ’’الدین‘‘ہے

کےعلاوہ کوئی اوردین کےہاں مقبول نہیں ہوگا۔

51
ہم کی جزوی پیروی پریقین نہیں رکھتے 52
میں پوری طرح داخل ہوناضروری ہے 52
جزوی ایمان قابلِ قبول نہیں 53
استطاعت کےمطابق عمل کیاجائےگا 53
رسول صلی اللہ علیہ وسلم کوپورے کی کاحکم دیا 54
نمبر8:ہم آخری کتاب اورآخری کےداعی اورمبلغ ہیں 54
شہادت ہماری ذمہ داری ہے 59
نمبر9:ہم ساری دنیاکےانسانوں کےہمدرد،غم گساراورخیرخواہ ہیں 63
نمبر10:ہم دعوتِ کوکسی شخص پرزبردستی مسلط کرنانہیں چاہتے 67
نمبر11:ہم اقداراوراخلاقیات کےپابندہیں 69
نمبر12:ہمارے لیے ہدایت کےدومستقل اوردائمی سرچشمے وحدیث ہیں 71
قرآن ّت،سند اورسرچشمہ ہدایت ہے 72
بھی حجت،سند اورسرچشمہ ہدایت ہیں 75
نمبر13:تحریک کی عالمگیریت اورمحلیت 83
مغربی ممالک میں تحریکی کام 84
نمبر14:تحریک مقامی کی پاسداری کرتی ہے 86
نمبر15:تحریک کوئی خفیہ گروہ،یاکوئی زیرزمین فرقہ نہیں ہے 87
نمبر16:تحریک اورفقہ کےدرمیان تمیز کرتی ہے 89
نمبر17:تحریک اورلچک دارفقہ پریقین رکھتی ہے

ہم جامد مقّلد نہیں ہوسکتے

93
نمبر18:ہم نبوی روحانیت پریقین رکھتےہیں اوررہبانیت سے لاتعلقی کااعلان کرتےہیں 95
ہم احسان کےقائل ہیں 97
نمبر19:ہم تجدید پرایمان رکھتےہیں اورتجّدد کےخلاف برسرپیکار ہیں 100
تجدید کی نوعیتیں 101
نمبر20:ہم احیائے سنّت پریقین رکھتےہیں اوربدعات کومٹانا چاہتےہیں 103
نمبر21:ہم اجماع امت پریقین رکھتےہیں 106
نمبر22: تحریک،امت محمدیہ کی بیداری کی خواہاں ہے 107
نمبر23:تحریک،اتحادِ امت کی داعی ہے 108
نمبر24: تحریک کی ترجیحات کاواضح تصوررکھتی ہے 110
نمبر25: تحریک ،سمع وطاعت پرمشتمل ایک مضبوط تنظیم کی اہمیت کواجاگرکرتی ہے 111
نمبر26: تحریک مشاورت کےاسلامی اصولوں کی پاسداری کرتی ہے 113
نمبر27: تحریک وسنت کےکسی بھی حکم پرشرمندہ نہیں ہوسکتی 116
نمبر28: تحریک انتہاپسندی پرنہیں،بلکہ اعتدال پریقین رکھتی ہے 117
نمبر29: تحریک خوداحتسابی پریقین رکھتی ہے 118
نمبر30:ہمارے کام کاسارادادرومدار،اِخلاص نیت پرہے 121
مصنف کی کتابوں کاتعارف 126

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
8.4 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...