صحیح مسلم مع مختصر شرح نووی جلد۔3

مع مختصر شرح نووی جلد۔3

 

مصنف : امام مسلم بن الحجاج

 

صفحات: 936

 

امام مسلم ﷫(204ھ۔261ھ) کی مرتب کردہ شہرہ آفاق مجموعہء ہے جو کہ صحاح ستہ کی چھ مشہور کتابوں میں سے ایک ہے۔ امام کی کے بعد دوسرے نمبر پر سب سے مستند کتاب ہے۔امام مسلم کا پورا نام ابوالحسین مسلم بن الحجاج بن مسلم القشیری ہے۔ 202ھ میں ایران کے شہر نیشاپور میں پیدا ہوئے اور 261ھ میں نیشاپور میں ہی وفات پائی۔ انہوں نے مستند جمع کرنے کے لئے علاقوں بشمول عراق، شام اور کا کیا۔ انہوں نے تقریباًتین لاکھ احادیث اکٹھی کیں لیکن ان میں سے صرف7563 احادیث میں شامل کیں کیونکہ انہوں نے کے مستند ہونےکی بہت سخت شرائط رکھی ہوئی تھیں تا کہ کتاب میں صرف اور صرف مستند ترین جمع ہو سکیں۔ صحیح مسلم کی اہمیت کے پیش صحیح کی طرح اس کی بہت زیادہ شروحات لکھی گئیں۔ میں لکھی گئی شروحات ِ صحیح مسلم میں امام نوویکی شرح نووی کو امتیازی مقام حاصل ہے ۔پاک وہند میں بھی کئی اہل نے واردو میں اس کی شروحات وحواشی لکھے ۔عربی زبان میں نواب صدیق حسن خاںاور میں علامہ وحید الزمان کا قابل ذکر   ہے اورطویل عرصہ سے یہی ترجمہ متداول ہے لیکن اب اس کی کافی پرانی ہوگئی ہے اس لیے ایک عرصے سےیہ ضرورت محسوس کی جارہی ہے تھی کااردو زبان کے جدید اسلوب میں نئے سرے سے کتب ستہ کے ترجمے کرکے شائع کیے جائیں۔ زیر کتاب ’’ مع مختصر شرح نووی وتخریج‘‘ علامہ وحید الزمان کی ترجمہ شدہ ہے۔لیکن اس میں اس ترجمہ کی قدم اردو کو تسہیل کےساتھ پیش کیا گیا ہے ۔صحیح مسلم کے کئی نسخے بازار میں دستیات ہیں مگر مکتبہ اسلامیہ، لاہور نےاس عظیم کتاب کو منفرد انداز اورامتیازی خوبیوں کےساتھ قارئین کی خدمت میں پیش کرنے کی سعادت حاصل کی ہے۔ یہ نسخہ درج ذیل امتیازات اور خصوصیات سے مزین ہے۔ مختلف نسخوں سےتقابل کے بعدصحیح ترین عبارت نقل کی گئی ہے، کریمہ کی تخریج کا اہتمام کیا گیا ہے،تخریج اور رقم الحدیث کے ذریعے دیگر کتب کی طرف رہنمائی کامنفرد کام، مسلسل نمبر کا انتخاب، ہر حدیث مبارکہ کی مکمل تشریح حدیث کے ساتھ ہی مکمل کی گئی ہے،قارئین کی سہولت کے لیے حدیث کےمتن یعنی آپ ﷺ کے الفاظ کو سند اور دیگر عبارات سے الگ فونٹ کے ذریعے واضح کیا گیا ہے۔ ناشرین کی اس کاوش کو قبول فرمائے۔ (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
مقدمہ
فہرست
مضمون
کتا ب الجہا دوالسیر 9
جن کافروں کو کی دعوت پہنچ چکی ہو ان پر بغیر
دعوت دئیے حملہ کرنے کابیان 9
امام امیروں کولڑ ائی پر کیو نکر بھیجے اور ان کو طر یقے
کیو نکر بتلائے 10
معاملہ میں آسانی پیداکرنے اورنفرت کو ترک کرنا 12
عہد شکنی حرام ہے 13
لڑائی میں مکر اور حلیہ درست ہے 14
جنگ کی آرزو کرنا منع ہے اورجنگ کے وقت صبر کرنا 14
دشمن سے ملاقات (جنگ) کے وقت فتح کی مانگنا 15
لڑائی میں عورتوں اور بچوں کے مارنے کی ممانعت 16
روات کو اگر چھا پاماریں توعورتوں اور بچوں کا قتل 16
کافروں کے درخت کاٹنا اور جلانا درست ہے 17
اس امت کے لیے خاص لوٹ کا حلال ہونا 18
لو ٹ کا بیان 19
قا تلو ں کو مقتول کا سامان دلانا 21
قیدیوں کے ذریعے قیدیوں کو آزاد کروانا 26
جو مال کافروں کا بغیر لڑائی کے ہاتھ ا ٓئے 27
رسول ﷺ کا قول کہ جو مال ہم چھو ڑ جائیں
اسکا کو ئی وارث نہیں بلکہ وہ صدقہ ہو تا ہے 31
غنیمت کا مال کیوں کر تقسیم ہو گا 36
فر شتوں کی مدد غزوہ بد ر میں اور مبا ح ہونالوٹ کا 36
قیدیوں کو باند ھنا اور بند کرنا اور اس کو مفت چھوڑ دینا 39
یہو دیوں کو حجاز مقدس سے جلا وطن کردینے کابیان 41
و نصار ی کو جزیرہ سے نکالنے کا بیان 42
جو عہد توڑ ڈالے اس کو مارنا درست ہے اور قلعہ والوں
کو کسی عادل شخص کے فیصلے پر اتارنا درست ہے 42
میں جلدی کرنا اور دونوں کا م ضروری ہوں تو؟ 45
انصار نے جو مہاجرین کو دیا تھا وہ ان کو واپس ہونا ۔۔۔الخ 46
غنیمت کے مال میں اگر کھانا ہو تو دارالحرب میں ۔۔۔الخ 47
رسول اللہﷺ کے کا بیان جو ا ٓپ ﷺ نے
لانے کے لیے شام کے بادشاہ ہر قل کو لکھا تھا 48
رسول اللہﷺ کے کا فر با دشا ہوں کی طرف 53
جنگ حنین کابیان 53
طائف کی لڑائی کابیان 57
بدرکی لڑائی کابیان 58
مکہ کے فتح ہونے کابیان 59
مکہ کے ارد گرد کو بتوں سے پاک کرنے کا بیان 62
فتح (مکہ ) کے بعد ( تک ) کسی قریشی کو باندھ
کر قتل نہ کیے جانے کابیان 63
حد یبیہ میں جو صلح ہو ئی اس کابیان 64
اقرار کو پورا کرنا 68
غزوہ احزاب یعنی جنگ خندق کے بیان میں 69
جنگ احد کابیان 71
جس کو رسول اللہﷺ خود قتل کریں ۔۔الخ 73
رسول ﷺنے مشرکوں اورمنا فقوں کے ہاتھ
سے جو تکلیف پا ئی اس کا بیان 73
رسول ﷺ کی اور منا فقین کی تکالیف پر صبر 77
ابوجہل مرد ود کے مارے جانے کابیان 79
کعب بن اشر ف کے سر غنہ کے قتل کابیان 80
خیبر کی لڑائی کابیان 82
غزوہ احزاب یعنی جنگ خندق کابیان 86
ذی قر دوغیر ہ لڑائیوں کا بیان 87
تعالیٰ کے فرمان ( وھو الذی کف ایدیھم
عنکم ) کےنزول کابیان 97
عورتوں کا مر دوں کے ساتھ لڑائی میں شریک ہونا 97
جو عورتوں میں شریک ہوں ان کو انعام ملے گا
اور حصہ نہیں ملے گا اور بچوں کوقتل کرنا منع ہے 99
رسول ﷺ نے کتنے کیے 102
ذات الر قا ع کےجہا کابیان 104
کافر سے جاہد میں مد د لینا منع ہے مگر ضرورت سے 104
کتاب امارت کےبیان میں 106
خلیفہ قریش میں سے ہونا چاہیے 106
خلفیہ بنا نا اور نہ بنانا 109
امارت کی درخواست اور حرص کرنا منع ہے 111
بےضرورت حاکم بننا اچھا منع نہیں ہے 113
حاکم عادل کی فضیلت اور حاکم ظالم کی برائی 114
غنیمت میں چوری کرنا کیساگنا ہ ہے 117
جو شخص سر کاری کام پر مقر ر ہو نہ لے 119
بادشاہ یا حاکم یا امام کی اطاعت واجب ہے ۔۔الخ 121
امام مسلمانوں کی سپر ہے 127
جس خلیفہ سے پہلے بیعت وہ اسی کو قائم رکھنا چاہیے 127
حاکموں کےظلم اور بے جاتر جیح پر صبر کرنے کابیان 129
اُمر ا کی اطاعت کا حکم اگر چہ وہ تلفی ہی کریں 130
فتنہ اور فساد کے وقت بلکہ ہر وقت مسلمانو ں کی
جماعت کے ساتھ رہنا 130
جو شخص مسلمانو ں کے اتفاق میں خلل ڈالے 134
جب دو خلیفوں سے بیعت ہو 135

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
31.2 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Leave A Reply