تاریخ حرمین شریفین

حرمین شریفین

 

مصنف : عباس کرارہ مصری

 

صفحات: 206

 

حرم مکی سے مراد حرام ہے مسجد حرام دینِ کا مقدس ترین مقام ہے۔ صاحب حیثیت مسلمانوں پر زندگی میں ایک مرتبہ بیت کا کرنا فرض ہے۔سیدنا ابراہیم﷤ کا قائم کردہ بیت بغیر چھت کےایک مستطیل نما عمارت تھی جس کےدونوں طرف دروازے کھلے تھےجو سطح زمین کےبرابر تھےجن سےہر خاص و عام کو گذرنےکی اجازت تھی۔ اس کی تعمیر میں 5 پہاڑوں کے پتھر استعمال ہوئےتھےجبکہ اس کی بنیادوں میں آج بھی وہی پتھر ہیں جو سیدنا ابراہیم﷤ نےرکھےتھے۔ خانہ کا یہ انداز صدیوں تک رہا تاوقتیکہ قریش نے 604ء میں اپنےمالی مفادات کےتحفظ کےلئےاس میں تبدیلی کردی کیونکہ زائرین جو نذر و نیاز اندر رکھتےتھےوہ چوری ہوجاتی تھیں۔قریش نےبیت اللہ کے شمال کی طرف تین ہاتھ جگہ چھوڑ کر عمارت کو مکعب نما (یعنی کعبہ) بنادیا تھا۔اور اس پر چھت بھی ڈال دی تاکہ اوپر سےبھی محفوظ رہے، مغربی دروازہ بند کردیا گیا جبکہ مشرقی دروازےکو زمین سےاتنا اونچا کردیا گہ کہ صرف خواص ہی قریش کی اجازت سےاندر جاسکیں۔ اللہ کےگھر کو بڑا سا دروازہ اور تالا بھی لگادیا گیا جو مقتدر حلقوں کےمزاج اور سوچ کےعین مطابق تھا۔ حالانکہ نبی پاک ﷺ (جو اس تعمیر میں شامل تھےاور حجر اسود کو اس کی جگہ رکھنےکا مشہور زمانہ واقعہ بھی رونما ہوا تھا) کی خواہش تھی کہ کو ابراہیمی تعمیر کےمطابق ہی بنایا جائے۔سیدنا بن زبیر﷜ (جو حضرت عائشہ ؓ کے بھانجے تھے اور سیدنا حسین﷜ کی کےبطور احتجاج بن معاویہ سےبغاوت کرتےہوئےمکہ میں اپنی خود مختاری کا اعلان کیا تھا) نےنبی پاک﷜ کی خواہش کا احترام کرتےہوئے685ءمیں بیت کو دوبارہ ابرہیمی طرز پر تعمیر کروایا تھا مگر نے693ء میں انہیں شکست دی تو دوبارہ قریشی طرز پر تعمیر کرادیا جسےبعد ازاں تمام حکمرانوں نےبرقرار رکھا۔ کےاندر تین ستون اور دو چھتیں ہیں۔ کعبہ کےاندر رکن عراقی کےپاس باب ہےجو المونیم کی 50 سیڑھیاں ہیں جو کعبہ کی چھت تک جاتی ہیں۔ چھت پر سوا میٹر کا شیشے کا ایک حصہ ہےجو قدرتی روشنی اندر پہنچاتا ہے۔ کعبہ کی موجودہ عمارت کی آخری بار 1996ء میں تعمیر کی گئی تھی اور اس کی بنیادوں کو نئےسرےسےبھرا گیا تھا۔ کعبہ کی سطح مطاف سےتقریباً دو میٹر بلند ہےجبکہ یہ عمارت 14 میٹر اونچی ہے۔ کعبہ کی دیواریں ایک میٹر سےزیادہ چوڑی ہیں جبکہ اس کی شمال کی طرف نصف دائرےمیں جوجگہ ہےاسےحطیم کہتےہیں اس میں تعمیری ابراہیمی کی تین میٹر جگہ کےعلاوہ وہ مقام بھی شامل ہےجو حضرت ابراہیم﷤ نے حضرت ہاجرہ ؑ اور حضرت اسماعیل﷤ کےرہنےکےلئےبنایا تھا جسےباب اسماعیل کہا جاتا ہے۔اب بھی حرم مکی کی توسیع وتعمیر کا کام جاری ہے ۔ حرم مدنی سے مردا ہے۔ یہ وہ ہے جس کی بنیاد اول سے ہی تقویٰ پر ہے ۔اسے خود سرور ﷺ اورآپ کے نے اپنے ہاتھوں سےتعمیر کی۔ جن لوگوں نے اس کی تعمیر میں حصہ لیا ان کےلیے خیرفرمائی۔یہ سب سے پہلا گھر (مدرسہ ) تھا جس سے ایسے آدمی حاصل کر کے نکلے جنہیں کاروبار ، خرید وفروخت کے ذکر سےغافل نہ کرسکی۔ جنہوں نےنماز کی اقامت کی اور زکاۃ کی ادائیگی میں کوتاہی نہیں کی۔ جنہوں نے اللہ کی حدود کو قائم رکھا اور شہروں، قصبات کو فتح کیا اور مشرق ومغرب ان کےماتحت ہوگئے اس میں حضور اکرم ﷺ کےزمانہ سے لے کر اس آخری بڑی عمارت کے تعمیر ہونے تک بڑے بڑے تغیرات آئے اور وقتا ً فوقتاً مسجد کی عمارت و سیع ہوتی گئی۔ زیر کتاب’’ حرمین شریفین ‘‘علامہ الحاج عباس کرارہ مصری کی تصیف کا ہے۔ یہ کتاب دوحصوں پر مشتمل ہے حصہ اول میں حرم مکی، خانہ کعبہ، مقام ابراہیم، چاہ زمزم، او رملحقہ مقامات کی مکمل اور جامع تاریخ ہے۔ اور حصہ ثانی میں نبوی ، روضۂ پاک، حجرہ شریف، اور محراب نبوی ﷺ وغیرہ کا مکمل اورجامع تذکرہ کے علاوہ تعمیر جدید کے حوالے بھی تفیلاً تحریر کی ہیں۔عربی کتاب کو قالب میں ڈھالنے کا فریضہ مولانا سیف الرحمن الفلاح نے انجام دیا کے ساتھ ساتھ کتاب پر مفید حواشی بھی تحریر کیے۔

 

عناوین صفحہ نمبر
مآخذ کتاب 7
آغاز سخن 11
مقدمہ
حرم مکی   ۔مسجدالحرام 17
مسجدالحرام کے اوصاف 19
اول بیت کی 20
حدود حرم 23
حرام کی پیما ئش 25
دارالندوہ کی پیما ئش 27
تعظیم حرم شریف 28
چاہ زمزم کی پیما   ئش 27
مسجدحرام کاارادہ 31
مسجدحرام کے دروازے 33
حرام کے گنبد 38
حرام کی تعمیر 40
حرام میں توسیعات 39
ملک عبدالعزیز کی تعمیر 40
مسجدحرام کا اولین   موْْْْْْْذن 42
مسجدحرام کا منبر 44
فرشتوں کی حفاظت حرم 50
قرآن پاک میں حرام کا ذکر 52
کعبہ شر یف 53
حضرت آدم کا تعمیر کعبہ 55
حضرت کا 55
فرشتوں کا طواف 60
کعبہ شریف کا اندرونی حصہ 61
کیفیت تعمیرابراھیمِؑ 63
میں داخلہ کے کا بیان 70
میں داخلہ کے آداب 72
کعبہ شریف میں 72
کعبہ شریف کی چابی کا ذکر 79
دورجاہلیت میں غلاف کعبہ کی رسم 80
کعبہ شریف کو معطر کرنا 83
کعبہ شریف کوسونےسےآراستہ کرنا 86
سونے سےمزین کرنےوالاپہلاشخص 88
مصلی جبریلؐ 88
بیت کی تعمیرواصلاح 93
شاذردان 97
باب کعبہ شریف 98
میزاب رحمت 99
بیت تعمیر ابراھیمیؐ 103
بیت نوحؐ اور ابراھیمؐ کےدرمیانی زمانہ میںَ۔ 105
غلاف کعبہ کے اوقات 106
حضرت اسما عیلؐ اور ان کی والدہ کا مکہ میں قیام۔ 107
حضرت ابراھیمؐ کی دوبارہ مکہ میں آمد۔ 110
غلاف کعبہ کعبہ کی بیع کا حکم 112
تعمیرات کعبہ شریف 114
کیفیت تعمیر ابن زبیرؓ 120
کیفیت تعمیر قریش 121
مطاف کعبہ شریف 122
خزانہء کعبہ شریف 125
کعبہ شریف کی پیمائش 126
فضیلت کعبہ شریف 127
بیت الحرام اور حرم کی فضیلت 129
زیارت کعبہ کی فضیلت 133
حطیم بیت میں شامل ہے 134
طواف کعبہ کی فضیلت 136
میزاب کعبہ کے پاس دعا   اور 137
کعبہ کے اردگرد صف باندھنے والا۔ 138
غسل اندرون کعبہ شریف 140
کی دربانی 142
حجر اسود 142
تقبیل حجر اسود 146
استلام حجر اسود اور تقبیل کی کیفیت 153
استلام حجر اسود اور رکن یمانی کی فضیلت۔ 157
کعبہ شریف 159
کعبہ شریف کا بقاتا 161
مقام ابراھیمؐ 164
صفت مقام ابراھیمؐ 166
غلاف مقام ابراھیمؐ 170
مقصورہ مقام ابراھہمؐ 172
شرح آب زمزم 180
توسیعات سعودیہ 185
کے گرد عمارات ٍ185
بیت ظہوراسلام کے بعد 185
سعی کا قدیمی میدان 187
میدان سعی کی تفصیل 189
مطاف 190
مقام ابراھیمؐ 190
حرم شریف کے گرد میدان 191
کے ٹونٹیاں 192
مقامات اذان 192
فضا ئل مسجدحرام 193
از قلم فضیلت السید علوی مالکیؒ 193

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
12.7 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Leave A Reply