حضرت ابراہیم کی قربانی، تفسیر و دروس

حضرت ابراہیم کی قربانی، و دروس

 

مصنف : ڈاکٹر فضل الٰہی

 

صفحات: 101

 

کریم کاایک بہت بڑا حصہ انبیائے سابقین ﷩ او ردیگر لوگوں کے قصوں پر مشتمل ہے۔ بعض اہل کی رائے میں یہ حصہ کریم کے آٹھ پاروں کے برابر ہے۔ قرآنی قصوں کی اہمیت او رفائدہ کوواضح کرنے کےلیے یہ بذات خود ایک بہت بڑی ہے۔ علازہ ازیں تعالیٰ نےنبی کریم ﷺ کوحکم دیا کہ وہ لوگوں کوتدبر وتفکر پرآمادہ کرنے کےلیے ان کے روبروقصے بیان کریں۔قرآنی قصوں میں کتنے فوائد ہیں ! ان سے انسانی معاشروں میں ہمیشہ سے موجود سنن الٰہیہ سے آگاہی ہوتی ہے۔قرآنی انسانیت کو اس بات کی خبر دیتے ہیں کہ انسانوں کےاعمالِ خیر سے کیا بہاریں آئیں او راعمال ِ شر کن بربادیوں کاسبب بنے۔ قرآنی قصے تاریخی نوادرات ہیں، جوانسانیت کو سے فیض یاب ہونے کا سلیقہ سکھاتے ہیں۔ اوران قصوں میں نبی کریم ﷺ اور آپ کے بعد امت کےلیے دلوں کی تسکین اور مضبوطی کاسامان ہے۔ اللہ تعالی نے مجید میں ﷩کے بیان کرنے کامقصد خودان الفاظ میں واضح اور نمایا ں فرمایا ’’اے نبیﷺ جونبیوں کے واقعات ہم آپ کے سامنے بیان کرتے ہیں ان سے ہمارا مقصد آپ کے دل کو ڈھارس دینا ہے اور آپ کے پاس پہنچ چکا ہے اس میں مومنوں کے لیے بھی نصیحت وعبرت ہے۔‘‘ قرانی قصوں میں ایک اہم قصہ سیدنا ابراہیم ﷤ کابڑھاپے میں ملنے والے لخت جگر کودوڑ دھوپ کی عمر کوپہنچنے پر حکم الٰہی کی بجا آوری میں ذبح کرنے کا ارادہ کرنا ہے۔ سیدنا حضرت ابراہیم ﷤ تعالی کے جلیل القدر تھے ۔ مجید میں وضاحت سے حضرت ابراہیم ﷤ کا تذکرہ موجود ہے ۔قرآن مجید کی 25 سورتوں میں 69 دفعہ حضرت ابراہیم ﷤ کا اسم گرامی آیا ہے۔ اور ایک سورۃ کا نام بھی ابراہیم ہے۔ حضرت ابراہیم ﷤نے یک ایسے میں آنکھ کھولی جو خرافات میں غرق اور جس گھر میں جنم لیا وہ بھی شرک وخرافات کا مرکز تھا بلکہ ان ساری خرافات کو حکومتِ وقت اورآپ کے والد کی معاونت اور سرپرستی حاصل تھی۔ جب حضرت ابراہیم ﷤ پربتوں کا باطل ہونا اور کی واحدانیت آشکار ہوگی تو انہوں نے سب سے پہلے اپنے والد آزر کو کی تلقین کی اس کے بعد عوام کے سامنے اس دعوت کو عام کیا اور پھر بادشاہ وقت سےمناظرہ کیا اور وہ لاجواب ہوگیا ۔ اس کے باجود قوم قبولِ سے منحرف رہی حتیٰ کہ بادشاہ نے انہیں آگ میں جلانے کا حکم صادر کیا مگر نے آگ کوابراہیم﷤ کے لیے ٹھنڈی اور سلامتی والی بنا دیا اور دشمن اپنے ناپاک اردادوں کے ساتھ ذلیل ورسوار ہوئے اور اللہ نے حضرت ابراہیم﷤کو کامیاب کیا۔ زیر کتاب’’حضرت ابراہیم کی کاقصہ ودروس‘‘ شہید ملت علامہ احسان الٰہی ظہیر شہید کے برادر محترم مصنف کتب کثیرہ جناب ڈاکٹر فضل الٰہی ﷾ کی تصنیف ہےیہ کتاب سیدنا ابراہیم ﷤کی واقعہ پر مشتمل تفصیلی کتاب ہے۔ڈاکٹر صاحب نےاس کوسمجھنے سمجھانے اوراس میں موجود دروس اور عبرتوں سے فیض یاب ہونے اور دوسروں کوفیض کرنے کےلیے اس کتا ب کومرتب کیا ہے۔ انہوں نے اس قصے سےمتعلقہ کی اوران سے اخذ کردہ دروس اور عبرتوں کے تحریر کرنے میں معتمد تفسیروں سے استفادہ کیا ہے۔ اور ضعیف اوراسرائیلی روایات سے کلی طور پر اجنتاب کیا ہے کیوں کہ ثابت شدہ تھوڑی غیر ثابت شدہ زیادہ معلومات سے کہیں بہترہیں۔مصنف موصوف نے سے متعلقہ آیات پندرہ حصوں میں تقسیم کی کیں ہیں او ر ہر حصے میں اس کی اوراخذ کردہ دروس بیان کیے گئے ہیں۔ بیان کردہ دروس کی مجموعی تعداد بتیس ہے۔ اپنے موضوع پر یہ کتاب انتہائی جامع اور مستند ہے۔ تعالیٰ ڈاکٹر صاحب کی تمام دعوتی وتبلیغی اور تحقیقی وتصنیفی قبول فرمائے۔(آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
تمہید 17
کتاب کی تیاری میں پیش باتیں 20
کتاب کا خاکہ 20
شکر و 20
کے بارے میں کریمہ اور ان کا 22
تعالیٰ کی خاطر ہجرت کرنا 26
ابراہیم ؑ اور عالم کی 28
مقصود عمل رضائے الٰہی کا حصول 28
اس میں رہنمائی 30
میں راہنمائی
میں راہنمائی کے دع معانی 30
میں کمال یقین کے اظہار کا سبب 31
ہدایت کا من جانب ہونا 31
حضرات انبیاءؑ کا اپنے رشتہ داروں کو ہدایت نہ دے پانا 33
قبولیت کا یقین 36
ابراہیم ؑ کا بیٹا طلب کرنا 36
(وہب) کا بلا قید بیٹے کے عطا کرنے کے لیے استعمال 37
ہجرت کے وقت احساس تنہائی پر اس کا کرنا 38
ابراہیمؑ کا بیٹے کے صالحین میں سے ہونے کی کرنا 38
(الصلاح) کا علیٰ ترین صفات میں سے ہونا
ابراہیم یوسف اور سلیمان ؑ کا صالحین میں شمولیت کا سوال 38
اولاد دینے کا اختیار صرف رب العزت کو ہونا 39
ولادت سے قبل بیٹے کے نیک ہونے کی فکر 41
ابراہیم ؑ کو دونوں بیٹوں کا بڑھاپے میں ملنا 44
بوڑھے والد کے لیے (حلیم) بیٹے کی اہمیت 44
(غلا حلیم) سے اسماعیل کا مراد ہونا 44
(غلام حلیم) اور غلام علیم) بشارتوں میں فرق، پہلی اسماعیل اور دوسری اسحاقؑ کے متعلق ہیں 46
ظاہری اسباب کی کمزوری کے باوجود تعالیٰ کا فریادوں کو سننا 47
تعالیٰ کا بندے کی طلب سے زیادہ عطا فرمانا 48
ابراہیم ؑ کو طلب سے زیادہ عطا فرمانا 48

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
4 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...