کتابت حدیث عہد رسالتؐ و عہد صحابہ ؓ میں

کتابت عہد رسالتؐ و عہد صحابہ ؓ میں

 

مصنف : مفتی رفیع عثمانی

 

صفحات: 171

 

دورِجدید میں بعض یافتہ حضرات کے ذہنوں میں یہ خیال پایا جاتا ہے کہ رسول اللہﷺ کی احادیثِ مبارکہ اپنے اولین دور میں ضبطِ تحریر میں نہیں لائیں گئیں بلکہ صرف زبانی نقل وروایت پر اکتفاء کیاگیا۔اور حضرت عمر بن عبدالعزیز کے دروخلافت میں کم از کم ایک صدی گزرجانے کے بعد کے لکھے جانے اور ان کو مدون کئے جانے کے کام کا آغاز ہوا۔ یہ خیال بالکل غلط ہے اورعلمی وتاریخی کے خلاف ہے ۔ کے نزدیک سے مراد علم ِنبوت تھا (یعنی وحدیث) انہوں اپنی تمام زندگیاں قرآن وحدیث کے کے حصول میں لگا دیں۔ حضرت ابو ھریرہ نےزندگی میں کوئی مشغلہ اختیارنہیں کیا سوائے رسول ﷺ کے حفظ کرنے اوران کی تعلیم دینے کے ۔حضرت بن عمر و العاص، حضرت انس ، کے پاس کے تحریر ی مجموعے موجود تھے ۔ زیر کتاب’’ کتابت عہد رسالت وعہد میں ‘‘مولانا رفیع عثمانی کی تصنیف ہے ۔اس کتاب میں انہوں نے جاہلیت میں کتابت کی ابتداء، مکہ مدینہ کے اہل قلم حضرات، عہد رسالت میں کتابت ، کتابت کےبارے میں کی روش اوراس کے اجتماعی زندگی پر اثرات، عہد رسالت میں کتابتِ حدیث، کے تحریری مجموعے، تبلیغی خطوط، انتطام مملکت کے مختلف شعبوں کے لیے وہدایات کی تحریری نقول، اوراس ضمن میں اسلوب واندازِ تحریر پر مفصل ومدلل مباحث پیش کیے ہیں ۔ نیز عہد وتابعین﷭ میں کتابتِ حدیث، لکھنے والے صحابہ کرام ، تابعین عظام اور دوسری صدی ہجری میں تدوین اور کے مجموعات وغیرہ کا تعارف پیش کیا ہے ۔کتاب کےابتدائی صفحات میں حجیت حدیث ، منکرین حدیث اور کی اعتراضات کی حقیقت اوران کے جوابات اور حفاظت حدیث کے طریقوں پر سیر حاصل بحث کی گئی ہے ۔یہ کتاب حفاظت حدیث کے طریقۂ کتابت اوراس کے متعلق امور کی وضاحت کے موضوع پر میں مفید کتاب ہے ۔

 

عناوین صفحہ نمبر
پیش لفظ 9
اوراس کی حفاظت 12
کےلئے معلم کی ضرورت 13
معلم کون ہے 14
آپ کی کااتباع بھی نےلازم کیا 15
کااجمالی اسلوب اورآپ کی وتشریح 16
کےبغیر پر عمل ممکن نہیں 17
کےخلاف سازشیں 18
اورمنکرین 18
حدیثیں نہ لکھنے کااعتراض 20
حفاظت کی ذمہ داری بھی نےلی ہے 21
کےحفظ ورایت کی تاکید 22
حدیثیں گیارہ ہزار نےروایت کیں 23
حفظ میں تابعین کی کاوشیں 24
روایت میں کڑی احتیاط 25
سند کی پابندی 26
فن اسماءالرجال 27
فن جرح وتعدیل 28
چند 28
یورپی کااعتراف 30
حفاظت کےتین طریقے 30
بہلا طریقہ زبانی یادکرنا 31
دوسراطریقہ تعامل 32
تیسرا طریقہ کتابت 33
تحریرکتابت اوراہل 35
عربی کی ابتداء 35
کتابت عہد جاہلیت میں 38
مکہ  کےاہل قلم 41
مدینہ کےاہل قلم 42
ایک اورمثال 43
کتابت عہد رسالت میں 43
کتابت کےبارےمیں کی زوش 43
ہجرت میں  بھی لکھنے کاانتظام 45
تاریخ  کاپہلا تحریر ی دستور مملکت 46
مردم شماری کی پہلی تحریر 47
مجاہدین کی فہرست 47
دربارنبوی  کےکاتب 48
مختلف سرکاری تحریر یں 49
سرکاری مہر 50
ناخن کانشان 52
کتابت سکھانے کاانتظام 52
کولکھنے کی 54
کتابت 55
غیر زبانوں میں تحریری ترجمے 55
عہد رسالت میں کاترجمہ 56
عہد رسالت میں کتابت 58
کتابت کاحکم 59
اس حکم کےنتائج 61
کےتحریری مجموعے 62
الصحیفۃ الصادقۃ 63
اس صحیفہ کی ضحامت 65
ایک شبہ 67
اس کاجواب 67
اس صحیفے کی حفاظت 68
اس کی علامت 69
صحیفہ علی 71
حضرت انس کی تالیفات 72
آپ ﷺ کی املاء کرائی ہوئی حدیثیں 73
کتاب الصاقۃ 74
اس کتاب کاتحفظ 75
کئی اورصحیفے 76
صحیفہ عمرو بن حزم 77
عمرو بن حزم کی اہم تالیف 79
نومسلم وفود کےلئے صحائف 79
تبلیغی خطوط 81
حیرت ناک 82
ان خطوط کی اصلیں 82
نئی دستیابی 83
طرز املاء 85
اسلوب نگارش 87
سیاسی وسرکاری دستاویز یں 88
جنگی ہدایات 88
عدالتی فیصلے 89
تحریری معاہدے 92
جاگیروں کےملکیت نامے 92
امان نامے 93
بیع نامے 94
وقف نامے 95
نبویہ کاتحفظ 96
سرسری اشارے 97
ممانعت کتابت کی حقیقت 101
عہدصحابہ ؓمیں کتابت 108
اس دور میں حدثیں لکھنے والے کرام ؓ 108
حضرت ابوبکر صدیق ؓ 108
کیا حضرت صدیق ؓکتابت کوجائز نہ سمجھتے تھے 109
آپ ﷺ کی یہ تالیف کیوں جلائی گئی 110
حضرت عمر فاروق ؓ 112
آپ کی تالیف 113
ایک اور تالیف کاارادہ 113
ایک مغالطہ اوراس کاجواب 114
قابل قدر احتیاط 116
مرتضی 116
قرون اولی میں لفظ علم کےلئے استعمال ہوتاہے 117
حضرت علی ؓکی مرویات کاتحریر مجموعہ 118
حضرت ابوہریرہ ؓ 119
آپﷺ کی تالیفات 120
ان تالیفات کےمتعدد نسخے 121
الصحیفۃ لصحیۃ 122
حیرت ناک حافظے 123
حضرت ابن عباس 123
آپ کی تالیفات 124
ان تالیفات کےنسخے 124
روایت بذریعہ وکتابت 125
شاگردوں کوکتابت کی تلقین 126
تفسیر کااملاء 127
شاگردوں کاذوق وشوق 127
حضرت جابر بن عبداللہ ؓ 128
صرف ایک کےلئے مدینہ سےشام کاسفر 129
آپ  کی تالیفات 129
صحیفہ جابر 130
قتادہ کاحافظہ 130
کچھ اورنوشتے 132
حضرت سمرۃ بن جندب 133
حضرت سعدبن عبادۃ 134
حضرت بن مسعود ؓ 134
حضرت انس ؓ 135
کتابت کااہتمام 136
حضرت عائشہ صدیقہ 137
روایت بذریعہ کتابت 137
آپ کی مرویات کےتحریر ی مجموعے 139
حضرت عمر بن عبدالعزیز کافرمان 140
حضرت بن عمر ؓ 141
آپ کی کتابیں 141
کتابت کااہتمام بلیغ 142
روایت بذریعہ وکتابت 142
شاگردوں میں کتابت کاذوق وشوق 143
کتابت میں احتیاط 145
حضرت مغیرہ بن شعبہ 146
روایت بذریعہ کتابت 146
حضرت زید بن ثابت ؓ 147
ان کی مرضی کےبغیر ان کی مرویات بھی لکھی گئیں 148
حضرت معاویہ ؓ 149
حضرت براءبن عازب ؓ 150
حضرت بن ابی اوفی 151
حضرت ابوبکرہؓ 152
حضرت جابر بن سمرۃ 156
حضرت ابی بن کعب ؓ 154
حضرت نعمان بن بشیر ؓ 154
حضرت فاطمہ بنت قیس ؓ 154
حضرت سبیۃ الاسلیمۃ 155
حضرت حسن بن علی ؓ 156
عہد میں تابعین کی تحریر ی 157
دوسری صدی ہجری میں تدوین 158
دوسری صدی کی چند تالیفات 159
کتاب السیرۃ 159
مغاذی موسی بن عقبہ 159
کتاب الاآثار 159
سنن ابن جریح 159
السیرۃ 160
جامع معمر 160
جامع سفیان الثوری 160
مصنف حماد 160
کتاب غرائب شعبۃ 160
الموطا 160
کتاب الجہاد 161
کتاب الزہد الرقائق 161
کتا ب لاستندان 161
کتاب الذکر والدعاء 161
مغازی المعتمر بن سلیمان 161
مصنف وکیع بن الجراح 161
جامع سفیان بن عینہ 162
سفیان بن عینیہ 162
اختتامیہ 162
اس کتاب کی تیاری میں جن کتابوں سےمدد لی گئی ہے ان کامختصر تعارف 165

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
3.8 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Leave A Reply