سیرت عثمان غنی ؓ

عثمان غنی ؓ

 

مصنف : سیف خالد

 

صفحات: 275

 

خلیفۂ سوم سیدنا عثمان غنی کا تعلق قریش کے معزز قبیلے سے تھا۔ سلسلہ نسب عبد المناف پر رسول ﷺ سے جا ملتا ہے ۔ سیدنا عثمان ذوالنورین کی نانی نبی ﷺ کی پھوپھی تھیں۔ آپ کا نام عثمان اور لقب ” ذوالنورین “ ہے۔ قبول کرنے والوں میں آپ ” السابقون الاولون “ کی فہرست میں شامل تھے، آپ نے خلیفہ اول سیدنا ابوبکر صدیق کی دعوت پر اسلام قبول کیا تھا۔ ۔ حضور ﷺ پر ایمان لانے اور کلمہ پڑھنے کے جرم میں سیدنا عثمان غنی کو ان کے چچا حکم بن ابی العاص نے لوہے کی زنجیروں سے باندھ کر دھوپ میں ڈال دیا، کئی روز تک علیحدہ مکان میں بند رکھا گیا، چچا نے آپ سے کہا کہ جب تک تم نئے مذہب (اسلام ) کو نہیں چھوڑو گے آزاد نہیں کروں گا۔ یہ سن کر آپ نے جواب میں فرمایا کہ چچا ! کی قسم میں کو کبھی نہیں چھوڑ سکتا اور اس ایمان کی دولت سے کبھی دستبردار نہیں ہوں گا۔ سیدناعثمان غنی اعلیٰ و کردار کے ساتھ ثروت و سخاوت میں بھی مشہور تھے ۔ رسول ﷺ نے فرمایا کہ جنت میں ہرنبی کا ساتھی و رفیق ہوتاہے میرا ساتھی ”عثمان “ ہوگا۔ سیدنا عثمان کے دائرہ اسلام میں آنے کے بعد نبی اکرم نے کچھ عرصہ بعد اپنی بیٹی سیدہ رقیہ رضى الله عنها کا آپ سے کردیا۔ جب کفار مکہ کی اذیتوں سے تنگ آکر مسلمانوں نے نبی کریم ﷺ کی اجازت اور حکم الٰہی کے مطابق ہجرت حبشہ کی تو سیدنا عثمان بھی مع اپنی اہلیہ حضرت رقیہ رضى الله عنها حبشہ ہجرت فرماگئے، جب حضرت رقیہ رضى الله عنها کا انتقال ہوا تو نبی ﷺ نے دوسری بیٹی حضرت ام کلثوم رضى الله عنها کوآپ کی زوجیت میں دے دی۔ اس طرح آپ کا لقب ” ذوالنورین“ معروف ہوا۔ میں پانی کی قلت تھی جس پر سیدنا عثمان نے نبی پاک ا کی اجازت سے پانی کا کنواں خرید کر مسلمانوں کے ليے وقف فرمایا ۔اور اسی طرح غزوئہ تبوک میں جب رسول ﷺنے مالی اعانت کی اپیل فرمائی تو سیدنا عثمان غنی نے تیس ہزار فوج کے ایک تہائی اخراجات کی ذمہ داری لے لی ۔جب رسول اکرم ﷺنے زیارت کا ارادہ فرمایا تو حدیبیہ کے مقام پر یہ ہواکہ قریش مکہ آمادہ جنگ ہیں ۔ اس پر آپ ﷺنے سیدنا عثمان غنی کو سفیر بنا کر مکہ بھیجا۔ قریش مکہ نےآپ کو روکے رکھا تو افواہ پھیل گئی کہ سیدنا عثمان کو شہید کردیا گیا ہے ۔ اس موقع پر چودہ سو سے نبی ﷺنے بیعت لی کہ سیدنا عثمان غنی کا قصاص لیا جائے گا ۔ یہ بیعت تاریخ میں ” بیعت رضوان “ کے نام سے معروف ہے ۔ قریش مکہ کو جب صحیح صورت حال کا ہوا تو آمادۂ صلح ہوگئے اور سیدنا عثمان غنی واپس آگئے۔خلیفہ اول سیدنا ابوبکر صدیق کی مجلس مشاورت کے آپ اہم رکن تھے ۔ المومنین سیدنا عمر کی کا نامہ آپ نے ہی تحریر فرمایا ۔ دینی معاملات پر آپ کی رہنمائی کو پوری اہمیت دی جاتی ۔ سیدنا عثمان غنی صرف کاتب ہی نہیں تھے بلکہ مجید آپ کے سینے میں محفوظ تھا۔ قرآنی کے شان نزول سے خوب واقف تھے ۔ بطور تاجر دیانت و امانت آپ کا طرۂ امتیاز تھا۔ نرم خو تھے اور فکر ہر دم پیش رکھتے تھے ۔ نبی کریم ﷺ کا ارشاد ہے عثمان کی سے فرشتے بھی شرماتے ہیں ، و اشاعت کے ليے فراخ دلی سے دولت صرف فرماتے۔ نبی کریم ﷺنے فرمایا کہ اے عثمان تعالٰی تجھے کی قمیص پہنائیں گے ، جب منافق اسے اتارنے کی کوشش کریں تو اسے مت اتارنا یہاں تک کہ تم مجھے آملو۔ چنانچہ جس روز آپ کا محاصرہ کیا گیا تو آپ نے فرمایا کہ مجھ سے حضور نے عہد لیا تھا ( کہ منافق خلافت کی قمیص اتارنے کی کوشش کریں گے تم نہ اتارنا ) اس ليے میں اس پر قائم ہوں اور صبر کر رہا ہوں ۔ 35ھ میں ذی قعدہ کے پہلے عشرہ میں باغیوں نے سیدنا عثمان ذوالنورین کے گھر کا محاصرہ کیا اور آپ نے صبر اوراستقامت کا دامن نہیں چھوڑا، محاصرہ کے دوران آپ کا کھانا اور پانی بند کردیاگیا تقریبا چالیس روز بھوکے پیاسے82سالہ مظلوم مدینہ سیدنا عثمان کو جمعة المبارک 18ذو الحجہ کو انتہائی بے دردی کے ساتھ کی حالت میں پاک کی تلاوت کرتے ہوے شہید کردیا گیا۔سیدنا عمر فاروق کے بعد امت کی زمامِ اقتدار سنبھالی اور خلیفۂ ثالث مقرر ہوئے ۔ ان کا دورِ حکومت تاریخ کا ایک تابناک اور روشن باب ہے ۔ ان کے عہد زریں میں عظیم الشان فتوحات کی بدولت سلطنت کی حدود اطراف ِ عالم تک پھیل گئیں اور انہوں نے اس دور کی بڑی بڑی حکومتیں روم ، فارس ، کےبیشتر علاقوں میں پرچم بلند کرتے ہوئے عہد فاروقی کی عظمت وہیبت اور رعب ودبدبے کو برقرار رکھا اور باطل نظاموں کو ختم کر کے ایک مضبوط مستحکم اورعظیم الشان اسلامی مملکت کواستوار کیا ۔ زیر کتاب ’’ عثمان غنی ‘‘ دعوۃ القرآن کے مصنف مولانا سیف خالد ﷾ کی تصنیف ہے جو کہ سیدنا عثمان کےحالات زندگی ، طرز ِ حکومت اور کارناموں پر مشتمل ہے مصنف موصوف نے وحدیث اورمستند روایات کی روشنی میں عہد عثمان میں رونما ہونے والے کا تذکرہ کیا ہے اوران تاریخی کا ذکر کرتے ہوئے ثقاہت وصداقت کو ملحوظ خاطر رکھا ہے ۔ موضوع اور ضعیف روایات سے مکمل اجنتاب کیا ہے۔ موجودہ فتنوں کےدور میں کتاب وسنت پر مبنی صحیح موقف اور منہج اور خلیفۂ ثالث کی شخصیت او ران کے دورِ حکومت کی حقیقی اور سچی پیش کی ہے ۔ تاکہ قارئین کے سامنے مستند اور قابل اعتماد تاریخی آنے کے بعد ان کےطرزِ حکمرانی پراٹھائے جانے والے اعتراضات واشکالات کا ازالہ ہوسکے۔کتاب ہذا کتب ِ سیرو وتواریخ میں ایک منفرد اور شاندار اضافہ ہےجسے دار الاندلس نے انتہائی خوبصورتی کےساتھ شائع کیا ہے ۔مصنف موصوف اس سے پہلے ابو بکر صدیق اور سیرت عمرفاروق قارئین کی نذر کر چکے ہیں ۔ ان کی قابل قدر تصنیفات اہل اور عام قارئین میں دادِ تحسین حاصل کرچکی ہیں۔ تعالیٰ ان کے علم وعمل میں اضافہ فرمائے اور ان کی دینی کو قبول فرمائے ۔ اور اس کتاب کوقارئین کےلیے خلیفۂ راشد سیدنا عثمان کی وکردار کواپنانے کا ذریعہ بنائے ( آمین)

عناوین صفحہ نمبر
مقدمہ
فہرست
عرض ناشر 13
عرض مولف 17
باب 1
ولادت تا قبل از
سیدنا عثمان ؓ کا نام و نسب 29
کنیت 29
پیدائش 30
حلیہ 30
والدہ 31
سیدنا عثمان ؓ کے القاب 32
ذو النورین 32
الامین 33
عمدہ اور نفاست پسندی 34
سیدنا عثمان ؓ زمانہ جاہلیت میں 35
قبول 35
سیدہ قیہ بنت رسول اللہﷺ سے 36
رقیہ بنت رسو ال اللہﷺ کے ہمرا ہ ہجرت حبشہ 36
سید ہ رقیہ ؓ کی وفات 37
سیدہ ام  کلثو م ؓ سے 38
سید ہ ام کلثو م ؓ کی وفات 39
مواخات مدینہ اور سید نا عثمان ؓ 40
سیدنا عثمان  ؓ کا قر آ ن سے تعلق 41
قرآن کریم کی کا بہترین انداز 41
کاتب قرآن ہونے کی اعزاز 42
سورہ یوسف کی قراءت کا ممول 43
بحیثیت خلیفہ ر عایا سے قرآن کے متعلق سوال کرنا 44
سیدنا عثمان ؓ اور علم میں احتیاط 45
 رسول ﷺ کی ر فاقت 47
غزوہ بدر 49
غزوہ احد 52
بیعت رضوان اور سید نا عثمان ؓ 56
فتح مکہ اور سیدنا عثمان ؓ 60
غزوہ تبوک میں سیدنا عثمان ؓ کا کردار 64
باب:2
مدنی میں کردار اور بعض
مدنی معاشرے کا استحکام کے لیے مالی تعاون 69
بئر رومہ کی خریداری 69
بنوی کی تو سیع 70
تنگی کے حالا ت میں سخاوت 71
سیدنا عثمان ؓ کے 73
جنت  کی بشارت 73
 احد! حرکت نہ کر 74
شرم و کے پیکر 75
فرشتے بھی سیدنا عثمان ؓ سے کرتے ہیں 76
عثمان ؓ سے متعلق بنوی پیش گوئی 77
سیدنا عثمان ؓ کو گالی دینے والے کا بد ترین انجام 82
عہد صدیقی اور عہد فاروقی میں کردار 83
سیدنا ابوبکر ؓ کے بعد والے کے لیے عہد نامہ  لکھنے کا اعزاز 83
امہات المو منین کے ساتھ سفر 83
مال کی تقسیم  کی ذمہ داری 84
باب:3
عثمان ؓ
عثمان ؓ 89
دوران سیدنا عثمان ؓ کی سے متعلق حُدی خوانی 89
سیدنا عمرؓ کے بعد ایک صالح خلیفہ کی پیش گوئی 89
سیدنا عمرؓ کی مقرر کردہ مجلس شوریٰ 91
سیدنا عثمان ؓ کا کا زیادہ مستحق ہونا 104
عثمان ؓ پر اجماع 109
سیدنا علی ؓ کو سیدنا عثمان ؓ پر فو قیت  دینے کاحکم 111
سید نا عثما ن ؓ  کا طر ز حکومت 113
خلیفہ وقت کا محاسبہ 117
عثمان میں نظام مشاورت 119
عثمان میں نظام احتساب 120
زرد رنگ کا کپڑا پہننے پر سر زنش 120
چو سر اور شطر نج کھیلنے پر پابندی 120
شراب سے منع کر تے ہو ئے 122
سیدنا عثمان ؓ اور مکار م اخلاق کی و تذ کیر 124
بھر اقول 125
عہد عثمانی میں کا اہتما م 126
مسنون کی 127
کا گناہوں کےلیے کفارہ بننا 128
و ضوا ور دو رکعت گناہوں کی معافی سبب ہیں 129
عقیدہ کی 129
باقیات و صالحات  کی 130
رسول ﷺ کی طرف جھوٹ منسوب کرنے  پر وعید 131
سیدناعثمان ؓ کے اوصاف و مکارم 132
حلم و برد باری 132
عفت و پاک دامنی 133
جو و و سخا 133
صبر و استقامت 135
عدل و انصاف 136
محاسبہ نفس اور خشیت الہیٰ 137
زہد و ورع 138
عوام کی خبر گیری 139
کیطرف رجو ع 140
سیدنا عثمان ؓ کے عہد میں مالی ادارے 144
بیت الما ل سے مسلمانوں کا ادا  کرنا 146
زکوٰ ۃ کی ادائیگی کے لیے لو گو ں کو تر غیب دلانا 147
صدقات کے سلسلے میں رسو ل ﷺ کے دستور کی پیروی 148
مال غنیمت کا خمس اور جزیہ 150
عہد عثمانی میں  مال غنیمت میں بچو ں کا حصہ مقر ر نہیں کیا گیا 150
عہد عثمانی میں حکومت کے عام اخراجات میں ذمیوں کی شرکت 151
سر کاری چراگاہوں کی عملی 153
بیت المال سے نبو ی کی از سر نو تعمیر 155
بازاروں کی توسیع 156
عہد عثمانی میں عطیات کا نظام 157
سیدنا عثمانی  میں عطیات کا نظام 157
سیدنا عثمانی ؓ اور اقر با پروری کے حقیقت 159
عدالتی نظام اور سیدنا عثمان ؓ کے فقہی اجتہادات 162
عہد فاروقی میں تنفیذ حدود کا فریضۃ ادا کرتے ہوئے 162
عدالتی امور کے لیے اہل وو عقد سے مشاورت 163
جا دو گر کو سزا 163
شراب کی حد 164
اخیافی بھائی ولید بن عقبہ ؓ پر حد کانفاذ 165
عبادات اور  معاملات میں 170
جمعہ کے دن دوسری اذان کا اضافہ 171
نماز 172
روزانہ غسل کرنا 172
افراد کی ترغیب 173
ارکا ن میں کی پیروی 174
دوران شکار کے گوشت سے احتراز 174
خلع سے متعلق سیدنا عثمان ؓ کا مو قف 175
مفلس مقروض پر مالی تصر ف کی پابندی 175
ذخیرہ اندوزی  کی مذمت 176
عہد عثمانی کی چند فتوحات 177
معرکہ آذر بائیجان اور ارمینیہ 177
معرکہ طبر ستان 178
بلخبر پر حملہ 179
فتح توج 182
فتح 183
بحری جنگ کا آغاز 185
امت کو ایک مصحف پر جمع کرنے کا عظیم کارنامہ 187
عہد نبو ی میں کتابت قرآن 187
عہد ابی بکر میں تدوین قرآن 188
عہد عثمان میں تدوین قرآن 191
سید نا عثمان اور ابو ذر ؓ کے باہمی تعلقات 196
قصہ عثمان ؓ 207
سیدنا عثمان ؓ کی علالت 207
عثمان ؓ کی پیش گوئی 208
فتنہ عثمان ؓ اور فسادیوں کی آمد 215
دوران محاصرہ سیدنا عثمان ؓ کا باغیوں کو خطاب 220
سید نا عثمان ؓ کا فسادیوں سے لڑائی سے گریز 226
بلوائیوں کے پیچھے سے متعلق رائے 228
دوران محاصرہ ابن عمر ؓ سے مشاورت 230
محاصرین کی طرف سے قتل کی دھمکی 232
سید نا علی ؓ کا سیدنا عثمان ؓ کا دفاع  کرنا 234
بن عمر ؓ سیدنا عثمان ؓ کا دفاع کرتے ہوئے 238
سیدنا عثمان ؓ کی 239
دوران محاصرہ کے متعلق سیدنا عثما ن ؓ کا 239
سیدا نا عثمان ؓ کی مظلو مانہ کا المناک واقعہ 239

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
5.5 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Leave A Reply