شرک کیا ہے

کیا ہے

 

مصنف : محمد عطاء بندیالوی

 

صفحات: 51

 

یہ حقیقت ہےکہ ظلمِ عظیم ہےشرک اکبر الکبائر ہے ،شرک رب کی بغاوت ہے شرک ناقابلِ معانی جرم ہے ، شرک ایمان کےلیے زہر قاتل ہے ، شرک اعمالِ صالحہ کے لیے چنگاری ہے ۔اور شرک ایک ایسی لعنت ہے جو کوجہنم کے گڑھے میں پھینک دیتی ہے کریم میں کوبہت بڑا ظلم قرار دیا گیا ہے اور شرک ایسا گناہ کہ تعالی انسان کے تمام گناہوں کو معاف کردیں گے لیکن شرک جیسے گناہ کو معاف نہیں کریں گے ۔شرک اس طرح انسانی عقل کوماؤف کردیتا ہےکہ انسان کوہدایت گمراہی اور گمراہی ہدایت آتی ہے ۔پہلی قوموں کی تباہی وبربادی کاسبب شرک ہی تھا بہت سارے لوگ ایسے ہیں کہ جو شرک کے مفہوم کونہیں سمجھتےشرک کرنے کےباوجود وہ کہتے ہیں کہ وہ شرک نہیں کر رہے ان کے نزدیک شرک صرف یہ ہے کہ تعالیٰ جیساکوئی اور رب بنالیا جائے او راس کی عبادت کی جائے اصل میں وہ شرک کی حقیقت سےناواقف ہیں اسی لیے تو وہ کہتے ہیں انہوں نے کونسا کو ئی اور رب بنایا ہے۔شرک جیسی مہلک بیماری سے بچنے اور تو حید کواختیار کرنے کا انسانیت تک پہنچانےکے لیے اللہ تعالیٰ نےانبیاء کرام کو مبعوث کیا اور مجید نےسب سے زیادہ زور کےاثبات اورشرک کی تردید پر صرف کیا ہے ۔سید البشر حضرت محمد ﷺ نے بھی زندگی بھر لوگوں کو اسی بات کی دعوت دی اورزندگی کے آخری ایام میں بھی اپنی امت کو شرک سے بچنے کی تلقین کرتے رہے ۔بعد میں کرام ، تابعین ، محدثین اور علمائے عظام نے دعوت وتبلیغ ، تحریر وتقریر کے ذریعے لوگوں کو شرک تباہ کاریوں سے اگاہ کیا ہنوز یہ سلسلہ جاری وساری ہے۔ زیر کتابچہ ’’ کیا ہے؟‘‘ مولانا محمد عطاء بندیالوی صاحب کے1421ء کےرمضان المبارک میں سرگودھا شہر کی جامع حنفیہ میں ’’شرک کیا‘‘ کےعنوان پر دروس کا مجموعہ ہے موصوف کے ان دروس کاسلسلہ تقریباً دس روز جاری رہا ۔جسے سامعین نے بہت زیادہ پسند کیا تو موصوف نے افادہ عام کےلیے اسے مرتب کرکے شائع کیا۔ تعالیٰ اسے عوام الناس کےلیے نفع بخش بنائے (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
تمہید 5
کیا ہے 9
سماع موتی کا چور دروازہ 11
مشرکن مکہ کا اصل شرک  کیا تھا 12
قریش مکہ کو مانتے تھے 13
مشرکین مکہ کو پکارتے ہیں 15
مشرکین مکہ کا اصل 16
نے کی وضاحت کس طرح فرمائی 24
ہند نے فرمایا 24
کی اقسام 25
فی الدعاء 26
فی الذات 26
فی المال 29
غیر کی نذر و نیاز عقل کے بھی خلاف 30
فی الذات اور شرک مالی کا پس منظر 32
فی التصرف 38
فی الحیاۃ 43
فی  العادت 44
فی الحلف 45
فی الطواف 46
فی السجود 46

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
2.4 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...