Categories
Islam اسلام اقبالیات تاریخ زبان شعر نماز

شکوہ جواب شکوہ مع ترجمہ و تشریح

شکوہ جواب شکوہ مع ترجمہ و تشریح

 

مصنف : ڈاکٹرعلامہ محمداقبال

 

صفحات: 46

 

’’شکوہ“ کے جواب میں نظمیں دیکھ کراقبال کو خود بھی دوسری نظم ”جواب شکوہ“ لکھنی پڑی جو 1913ء کے ایک جلسہ عام میں پڑھ کر سنائی گئی۔ انجمن حمایت اسلام کے جلسے میں ”شکوہ “ پڑھی گئی تو وسیع پیمانے پر اس کی اشاعت ہوئی یہ بہت مقبول ہوئی لیکن کچھ حضرات اقبال سے بدظن ہو گئے اور ان کے نظریے سے اختلاف کیا۔ ان کا خیال تھا کہ ”شکوہ“ کا انداز گستاخانہ ہے۔ اس کی تلافی کے لیے اور یوں بھی شکوہ ایک طرح کا سوال تھا جس کا جواب اقبال ہی کے ذمے تھا۔ چنانچہ ڈیڑھ دو سال کے عرصے کے بعد انہوں نے ”جواب شکوہ“ لکھی۔ یہ 1913ء کے جلسے میں پڑھی گئی۔ جو نماز مغرب کے بعد بیرونی موچی دروازہ میں منعقد ہوا تھا۔ اقبال نے نظم اس طرح پڑھی کہ ہر طرف سے داد کی بوچھاڑ میں ایک ایک شعر نیلام کیا گیا اور اس سے گراں قدر رقم جمع کرکے بلقان فنڈ میں دی گئی۔ شکوہ کی طرح سے ”جواب شکوہ“ کے ترجمے بھی کئی زبانوں میں ملتے ہیں۔شکوہ میں اقبال نے انسان کی زبانی بارگاہ ربانی میں زبان شکایت کھولنے کی جرات کی تھی یہ جرات عبارت تھی اس ناز سے جو امت محمدی کے افراد کے دل میں رسول پاک سے عقیدیت کی بناءپر پیدا ہوتی ہے۔ جواب شکوہ درحقیقت شکوہ کا جواب ہے۔ شکوہ میں مسلمانوں کی زبوں حالی بیاں کی گئی تھی اور اس کی وجہ پوچھی گئی تھی پھر وہاں مایوسی اور دل شکستگی کی ایک کیفیت تھی ۔”جواب شکوہ“ اس کیفیت کی توجیہ ہے اور شکوہ میں اٹھائے جانے والے سوالات کے جواب دیے گئے ہیں۔ جواب شکوہ میں اسلامی تاریخ کے بعض واقعات اور جنگ بلقان کی طرف بھی اشارے ملتے ہیں۔زیر نظر کتاب   علامہ اقبال کی مشہور نظم   شکوہ جواب شکوہ کے متن اور اسکےمکمل مطالب  وتشریح پر مشتمل ہے۔

 

اس کی فہرست نہیں ہے

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
5.3 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam تہذیب رشد زبان علوم قرآن فضائل ومحاسن ، آداب و خصائص

قرآن کی عظمت و فضیلت

قرآن کی عظمت و فضیلت

 

مصنف : پروفیسر محمد رفیق چودھری

صفحات: 130

 

قرآن مجید اللہ تعالیٰ کا کلام ،اس کی آخری کتاب اور اس کا ایک معجزہ ہے ۔ یہ دنیا میں سب سے زیادہ پڑھی جانے والی کتاب ہے۔اس نے اپنے سے پہلے کی سب الہامی کتابوں کو منسوخ کردیا ہے۔ اوران میں سےکوئی بھی آج اپنی اصل صورت میں محفوظ نہیں ۔ البتہ قرآن تمام پہلی کتابوں کی تعلیمات کواپنے اندر سمیٹے ہوئے ہے ۔اور قرآن مجید واحد ایسی کتاب کے جو پوری انسانیت کےلیے رشد وہدایت کا ذریعہ ہے اللہ تعالی نے اس کتاب ِہدایت میں انسان کو پیش آنے والےتما م مسائل کو تفصیل سے بیان کردیا ہے جیسے کہ ارشادگرامی ہے کہ و نزلنا عليك الكتاب تبيانا لكل شيء قرآن مجید سیکڑوں موضوعا ت پرمشتمل ہے۔مسلمانوں کی دینی زندگی کا انحصار اس مقدس کتاب سے وابستگی پر ہے اور یہ اس وقت تک ممکن نہیں جب تک اسے پڑ ھا اور سمجھا نہ جائے۔ قرآن کریم کا یہ اعجاز ہے کہ اللہ تعالیٰ نے قرآن کی حفاظت کا ذمہ خود لیا۔اور قرآن کریم ایک ایسا معجزہ ہے کہ تمام مخلوقات مل کر بھی اس کی مثال پیش کرنے سے قاصر ہیں۔قرآن کی عظمت کا اندازہ اس امر سے بھی لگایا جاسکتا ہے ہ یہ کتاب جس سرزمین پر نازل ہوئی اس نے وہاں کے لوگوں کو فرشِ خاک سے اوجِ ثریا تک پہنچا دیا۔اس نےان کو دنیا کی عظیم ترین طاقت بنا دیا۔قرآن واحادیث میں قرآن اور حاملین قرآن کے بہت فضائل بیان کے گئے ہیں ۔نبی کریم ﷺ نے اپنی زبانِ رسالت سے ارشاد فرمایا: «خَيْرُكُمْ مَنْ تَعَلَّمَ القُرْآنَ وَعَلَّمَهُ» صحیح بخاری:5027) اور ایک حدیث مبارکہ میں قوموں کی ترقی اور تنزلی کو بھی قرآن مجید پر عمل کرنے کےساتھ مشروط کیا ہے ۔ارشاد نبو ی ہے : «إِنَّ اللهَ يَرْفَعُ بِهَذَا الْكِتَابِ أَقْوَامًا، وَيَضَعُ بِهِ آخَرِينَ»صحیح مسلم :817)تاریخ گواہ کہ جب تک مسلمانوں نے قرآن وحدیث کو مقدم رکھااور اس پر عمل پیرا رہے تو وہ دنیا میں غالب اور سربلند رہے ۔ انہوں نے تین براعظموں پر حکومت کی اور دنیا کو اعلیٰ تہذیب وتمدن اور بہترین نظام ِ زندگی دیا ۔ اور جب قرآن سے دوری کا راستہ اختیار کیا تو مسلمان تنزلی کاشکار ہوگئے۔شاعر مشرق علامہ اقبال نے بھی اسی کی ترجمانی کرتے ہوئے کہا :  وہ معزز تھے زمانے میں مسلماں ہوکر اور تم خوار ہوئے تارک قرآن ہوکر زیر تبصرہ کتاب ’’ قرآن کی عظمت وفضیلت‘‘ماہنامہ محدث کے معروف کالم نگار اور کئی کتب کے مصنف ومترجم محترم مولانا محمد رفیق چودھری ﷾ کی تصنیف ہے ۔اس کتاب میں انہوں نے قرآن مجید کی عظمت وفضیلت کے بعض پہلوؤں کو عام فہم انداز میں اُجاگر کیا ہے ۔ کتاب کے مصنف محترم محمد رفیق چودہری ﷾ علمی ادبی حلقوں میں جانی پہچانی شخصیت ہیں ۔ ان کو بفضلہٖ تعالیٰ عربی زبان وادب اور علوم قرآن سے گہرا شغف ہے او ر طالبانِ علم کو مستفیض کرنے کے جذبے سےسرشار ہیں۔ قرآن مجید کا لفظی وبامحاورہ ترجمہ کرنے کے علاوہ ان دنوں قرآن مجید کی تفسیر لکھنے میں مصروف ہیں جس کی دو جلدیں شائع ہوچکی ہیں ۔اللہ تعالیٰ ان کی تدریسی وتعلیمی اور تحقیقی وتصنیفی خدمات کو قبول فر ما ئے۔ (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
پیش لفظ 7
باب 1۔ قرآن کاتعارف اوراہمیت 11
باب 2۔ قرآن کی خصوصیات اورفضائل 17
کلام الہی 17
محفوظ کلام 18
معجزہ کلام 18
کامل ہدایت 19
عالمگیرکتاب 20
فصیح وبلیغ ت کلام 21
تضاد سے پاک 21
پر تاثیر کلام 22
سچی پیش گوئیاں 32
باب 3۔ احادیث میں قرآن کےفضائل 35
باب 4۔ سماء القرآن 51
باب 5۔ جمع وتدوین قرآن 75
جمع وتدوین کامفہوم 75
عہد نبوی میں قرآن کی حفاظت 76
عہد صدیقی میں قرآن کی تدوین 79
عہد عثمانی میں قرآن کی تدوین 82
باب  6۔ قرآنی احکام کےبنیادی اصول 85
اجمال واختصار 85
تدریج 86
آسانی اورسہولت 89
عدم حرج 90
باب 7۔ قرآن کی ایک تشبیہ 92
باب 8۔ قرآنی جواہر پارے 97
باب 9۔ مفید قرآنی معلومات 118
آیت سورت نقطے اوراعراب 118
منزل ،رکوع ،سیپارے ،سجدہ تلاوت 119
علوم القرآن 119
قرآن کےمضامین 120
مسلمانوں پر قرآن مجید کےحقوق 121
چند مشہور تفاسیر کےنام 123
تلاوت قرآن کےآداب واحکام 125
قرآن کی چند جامع دعائیں 127
قرآن مجید کی حقوق 130
تلاوت قرآن مجید 130

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
3 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam استشراق اسلام تاریخ علماء علوم قرآن

قرآن حکیم اور مستشرقین

قرآن حکیم اور مستشرقین

 

مصنف : ثناء اللہ حسین

 

صفحات: 328

 

مستشرقین سے مراد وہ غیرمسلم دانشور حضرات ہیں جو چاہے مشرق سے تعلق رکھنے والے ہوں یا مغرب سے کہ جن کا مقصد مسلمانوں کے علوم وفنون حاصل کرکے ان پر قبضہ کرنا اور اسلام پر اعتراضات کرنا ہے اور مسلمانوں کے ہاتھوں صلیبی جنگوں میں ذلت آمیز شکست کا بدلہ لینا ہے اور اس مقصد کے لیے انہوں نے قرآن وحدیث ،سیرت اور اسلامی تاریخ کو بطور خاص اپنا ہدف بنایا ہے وہ انہیں مشکوک بنانے کےلیے مختلف ہتھکنڈوں کو استعمال کرتے ہیں ۔مستشرقین نے اپنے خاص اہداف اوراغراض  ومقاصد کو مد نظر رکھ کر قرآن ،حدیث  اورسیرت النبی ﷺ کے مختلف موضوعات پر قلم اٹھایاتو مستشرقین کی غلط فہمیوں ،بدگمانیوں  اور انکے شکوک وشبہات کے ردّ میں علماء اسلام   نے بھی ناقابل فراموش خدمات انجام دی ہیں۔ زیر تبصرہ کتاب’’قرآن کریم اور مستشرقین‘‘  محترم ثناء اللہ  حسین کی  کاوش ہے جسے  انہوں  علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کے ایم اے علوم اسلامیہ  کے طلبہ کےلیے مرتب کیا ہے  اس میں انہوں نے مستشرقین اور قرآن کریم پر مستشرقین کےاعتراضات کاعلمی ، تنقیدی جائزہ ،علوم القرآن پر مستشرقین کے اعتراضات کا علمی  وتنقیدی جائزہ، قرآن کریم کے  متعلق بعض مستشرقین کی مثبت آراء اور ان کے اثرات مطالعہ  قرآن کےحوالے مستشرقین کےاہم  اسالیب اور قرآنیات پر مستشرقین کی مؤلفات کامختصر تعارف پیش کیا ہے۔ 

 

عناوین صفحہ نمبر
پیش لفظ 7
تعارف کورس 9
مقاصد کورس 11
مستشرقین اور قرآن کریم 13
قرآن کریم پر مستشرقین کے اعتراضات کا علمی و تنقیدی جائزہ 57
قرآن کریم پر مستشرقین کے اعتراضات کا علمی و تنقیدی جائزہ ( 1) 105
قرآن کریم پر مستشرقین کے اعتراضات کا علمی و تنقیدی جائزہ (2) 153
قرآن کریم کے متعلق بعض مستشرقین کی مثبت آراء اور ان کے اثرات 183
مطالعہ قرآن کریم کے حوالے سے مستشرقین کے اہم اسالیب 205
مطالعہ قرآن کریم کے حوالے سے مستشرقین کے اہداف کا تنقیدی جائزہ 229
قرآنیات پر مستشرقین کی مؤلفات کا مختصر تعارف 257
قرآنیات میں بعض منتخب مستشرقین کی خدمات اور ان کے ا ثرات 299

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
8.5 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام تجوید وقراءات خطبات ومقالات علماء مفسرین

قراءات قرآنیہ سے استدلال کے مناہج ، برصغیر کی تفاسیر کا تجزیاتی مطالعہ ( مقالہ پی ایچ ڈی )

قراءات قرآنیہ سے استدلال کے مناہج ، برصغیر کی تفاسیر کا تجزیاتی مطالعہ ( مقالہ پی ایچ ڈی )

 

مصنف : حافظ رشید احمد تھانوی

 

صفحات: 373

 

قرآن مجید اللہ تعالی کی طرف سے نازل کی جانے والی آسمانی کتب میں سے سب سے  آخری  کتاب ہے ۔جسےاللہ تعالی نے امت کی آسانی کی غرض سے قرآن مجید کو سات حروف پر نازل فرمایا ہے۔ یہ تمام کے تمام ساتوں حروف عین قرآن اور منزل من اللہ ہیں۔ان تمام پرایمان لانا ضروری اور واجب ہے،اوران کا انکار کرنا کفر اور قرآن کا انکار ہے۔اس وقت دنیا  بھر میں سبعہ احرف پر مبنی دس قراءات  اور بیس روایات پڑھی اور پڑھائی جارہی ہیں۔اور ان میں سے چار روایات (روایت قالون،روایت ورش،روایت دوری اور روایت حفص)ایسی ہیں جو دنیا کے کسی نہ کسی حصے میں باقاعدہ رائج اور متداول ہیں۔مگر افسوس کہ بعض مستشرقین ابھی تک اس وحی سماوی کے بارے میں شکوک وشبہات پیدا کرنے اور اس میں تحریف ثابت کرنے میں لگے ہوئے ہیں تاکہ مسلمانوں کو اس سے دور کیا جا سکے۔اہل علم نے ہر دور میں ان دشمنان اسلام کا مقابلہ کیا ہے اور مستند دلائل سے ان کے بے تکے اعتراضات کا جواب دیا ہے۔علم قراءات اور علم تفسیر کا آپس میں برا گہرا تعلق ہے، اور مفسرین کرام جا بجا اپنی تفاسیر میں قراءات قرآنیہ سے استدلال کرتے نظر آتے ہیں۔ زیر نظر کتاب ” قراءات قرآنیہ سے استدلال کے مناہج، برصغیر کی تفاسیر کا تجزیاتی مطالعہ” محترم حافظ رشید احمد تھانوی صاحب کا پی ایچ ڈی کا مقالہ ہے جو انہوں نے علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی اسلام آباد سےپی ایچ ڈی کی ڈگری کے حصول کے لئے لکھا تھا۔اس میں انہوں نے  برصغیر میں لکھی گئی تفاسیر کا تجزیاتی مطالعہ کرتے ہوئے یہ واضح کرنے کی کوشش کی ہے کہ ہر مفسر نے اپنی کتاب میں کس  منہج کے مطابق قراءات قرآنیہ سے استدلال کیا ہے۔اللہ تعالی سے دعا ہے کہ وہ مولف کی اس محنت کو اپنی بارگاہ میں قبول فرمائے اور ان کے میزان حسنات میں اضافہ فرمائے۔آمین

 

عناوین صفحہ نمبر
باب اول 7
فصل اول :علم قراءت کاتعارف 2
قراءا ت کی لغوی تعریف 2
قراءات کی اصطلاحی تعریف 2
علم القراءا ت موضوع 3
علم القراءات کاماخذ 3
عربوں کے قبائل ولہجات 7
عربوں کی مختلف بولیاں 8
فصاحت  وبلاغت میں ممتاز قبائل 10
معجزاتی کلام تحمل 13
مختلف لہجات ولغات کی حیثیت 14
فصل دوم علم تفسیر کاتعارف 15
تفسیر تاویل کامفہوم 15
تفسیر کااصطلاحی مفہوم 15
علم تفسیر کی ایک مفصل تعریف 15
تفسیر القرآن بالقراءات 17
اقوال صحابہ تابعین 19
لغت عرب 19
عقل سلیم 20
فصل سوم : قراءات وتفسیر کاباہمی تعلق 21
قراءات متواترہ اور علم تفسیر 21
قرآنی کلمات کی اقسام 21
قراءات کی اقسام باعتبار سند 22
قراءات کی اقسام باعتبار قبولیت 24
قراءات کی اقسام باعتبار معنی ومفہوم 25
قراءات شاذۃ وعلم تفسیر 26
قراءات کی اقسام باعتبار تفسیر اثرات 27
فصل چہارم : علم الاحتجاج وتوجیہ القراءات 29
احتجاج کی لغوی تعریف 29
احتجاج کی اصطلاحی تعریف 29
علم الاحتجاج کے مختلف نام 29
علم الاحتجاج کے مختلف نام 29
علم توجیہ القراءات کاآغاز وراتقاء 30
توجیہ قراءات کی انواع واقسام 30
صحابہ یاائمہ کی طرف قراءات کی نسبت کامطلب 32
علم توجیہ القراءات کاتاریخی ارتقاء 32
علم توجیہ القراءات کی بنیادی کتب 35
پہلی قسم القراءات پر مشتمل کتب 35
دوسری قسم کتب تفسیر میں شامل علم توجیہ القراءات 36
علم اتوجیہ پر جدید کتب 36
فصل پنجم : علم الرسم وعلم الضبط کاتعارف 39
علم الرسم 39
رسم عثمانی 39
مصاحف عثمانیہ سے مراد 39
مصاحف عثمانیہ کاپس منظر وتعارف 43
پہلی جمع قرآنی عہد صدیقی میں 43
دوسری جمع قرآنی عہد عثمانی میں 44
مصاحف عثمانیہ پر صحابہ  کااجماع 44
مصاحف عثمانیہ کارسم الخط 44
رسم اور خط میں اصطلاحی فرق 45
خط کی تعریف 45
رسم کی تعریف 45
رسم عثمانی کے امتیازات 46
رسم عثمانی قواعد ستہ 46
رسم عثمانی کے التزام کاحکم 49
علم الضبط ولشکل کاتعارف 52
علم الضبط کاآغاز 52
باب دوم ،قراءات کی روشنی میں تفسیر قرآن مختلف مناہج واسالیب 53
فصل اول : قراءات سے استفادہ کے چند بنیادی اصول 54
قراءاتن شاذہ کی تعریف 58
قراءات شاذۃ کی کئی اقسام 58
اقوال علماء وامثلہ قواعج 58
اس قاعدہ کے مویدات 60
اس قاعدہ کےبارے میں علماء مفسرین کے اقوال 60
فصل دوم : توجیہ القراءات میں امام قرطبی کامنہج واسلوب 67
قرآنی علوم سے استشہاد 67
آیات قرآنی سے استشہاد 67
سیاق سباق اور نظم قرآنی سےاستشہاد 68
رعایت فاصلہ سے استشہاد 70
قراءات متواترہ اور مجمع علیہ قراءات سے اشتہاد 70
مصحف عثمانی ودیگر مصاحف سے ستشہاد 71
بعض صحابہ کے ذاتی مصاحف کے استشہاد 73
اقوال صحابہ سےاستشہاد 74
اسباب نزول سےاستشہاد 75
آیت کاسبب نزول 75
قراءات قرآنیہ کی توجیہ احادیث نبویہ کی بنیاد پر 76
فصل سوم : قراءات سے استفادہ میں امام ابن عطیہ کامنہج 78
قراءات میں امام امام عطیہ کے مصادر 80
امام ابن عطیہ کی ذکر کردہ قراءات کی انواع واقسام 79
توجیہ القراءات میں امام ابن عطیہ کامنہج 80
توجیہ القراءات میں ابن عطیہ کےالفاظ 81
توجیہ القراءات کے مختلف پہلو 82
توجیہ القراءات کوذکر کرنے کامقام 82
امام ابن عطیہ کی بیان کردہ  توجیہات میں محل نظر امور 82
قراءات سے تفسیری استدلال 82
فصل چہارم : قراءات قرآنیہ مذہب علامہ آلوسی کامنہج واسلوب 83
قراءات متواترہ کی تائید توجیہ  میں قراءات شاذہ سے استفادہ 84
قبول قراءات میں امام آلوسی کامنہج 84
رسم عثمانی سے استفادہ کی مثال 85
توجیہ القراءات کے مختلف پہلو 87
توجیہ قراءات اور علامہ آلو سی 87
توجیہ القراءات میں توسع 87
قراءات قرآنیہ کاتفسیر روج المعانی پر اثر 88
فصل پنجم :  قراءات سے استدلال کے بارے میں ابن عاشور کاطریق ومنہج 89
ابن عاشور کے نزدیک قراءات کی انواع واقسام 89
ابن عاشور نے قراءات کو دوقسموں میں تقسیم کیا ہے 89
قسم اول :جن کاتفسیر سے کوئی تعلق نہیں 89
قسم اول کی مثالیں 90
قراءات  کی قسم اصل مبدا اور بنیاد کے بارے میں ابن عاشور کاموقف 90
موقف ابن عاشور کارد 91
ابن عاشور کاامام مالک کے وقول سے اپنے موقف کی تائید میں استدلال 91
ابن عاشور کی دلیل کارد 92
قسم دوم جس کاتفسیر ومعانی کے ساتھ تعلق ہے 92
قراءا ت کی اس قسم میں پائی جانے  والی خوبیاں 93
ابن عاشو ر کاشروط میں قراءات صحیحہ میں موقف 95
باب سوم 97
قراءات کی مختلف اقسام کے مابین تعارض وترجیح 97
فصل اول : تعارض وترجح کاتعارف اور عمومی اصول وضوابط 98
تعارض کالغوی معنی 98
تعارض کی اصطلاحی تعریف 98
تعارض کے معتبر ہونے  کی عمومی شرائط 100
قراءات کے مابین تعارض کے معتبر ہونے کی شرائط 100

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
8.5 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اصول حدیث

قواعد و مصطلحات حدیث برائے ایم اے علوم اسلامیہ ( یونٹ 1 تا 18) کوڈ 4555

قواعد و مصطلحات حدیث برائے ایم اے علوم اسلامیہ ( یونٹ 1 تا 18) کوڈ 4555

 

مصنف : پروفیسر ڈاکٹر علی اصغر چشتی

 

صفحات: 663

 

علم  اصولِ حدیث ایک ضروری علم  ہے ۔جس کے بغیر حدیث  کی معرفت ممکن نہیں احادیث نبویہ کا مبارک علم پڑہنے پڑھانے میں بہت سی اصطلاحات  استعمال ہوتی ہیں جن سے طالب علم کواگاہ ہونا از حدضرورری ہے  تاکہ  وہ اس  علم   میں کما حقہ درک حاصل   کر سکے ، ورنہ  اس کے فہم  وتفہیم  میں  بہت سے الجھنیں پید اہوتی ہیں اس موضوع پر ائمہ فن وعلماء حدیث نے مختصر   ومطول بہت سے کتابیں تصنیف کیں ہیں۔ زیر نظرکتاب ’’ قوعد  ومصطلحات حدیث یونٹ اتا18(کوڈ4555) ‘‘ڈاکٹر علی اصغر چشتی، ڈاکٹر سہیل حسن، محمد شریف شاکر، معین ہاشمی ،ڈاکٹر تاج الدین الازہری کی مشترکہ تصنیف ہے۔یہ کتا ب  علامہ اقبال اوپنی یونیورسٹی  کے   ایم اے  علوم اسلامیہ  کے طلبہ وطالبات کے    ’’ تخصص فی الحدیث ‘‘ کورس  کے لیے مرتب کی گئی ہے۔ مرتبین نے  قواعد ومصطلحات حدیث کورس کی ترتیب وتدوین میں اہم بنیادی موضوعات کو شامل کر نے کی بھر پور  کوشش کی ہے۔

 

عناوین صفحہ نمبر
یونٹ نمبر 1 حدیث اور علم حدیث 11
یونٹ نمبر2 حجیت سنت 39
یونٹ نمبر 3 مطالعہ حدیث 69
یونٹ نمبر4 علم الاسناد کی اہمیت 105
یونٹ نمبر5 تحمل حدیث 137
یونٹ نمبر6 اقسام حدیث 181
یونٹ نمبر7 مصطلحا حدیث 205
یونٹ نمبر8 خبر متواتر 249
یونٹ نمبر9 خبر واحد کی حجیت 289
یونٹ نمبر10 حدیث مرسل 315
یونٹ نمبر11 روات الحدیث بالمعنی 355
یونٹ نمبر12 اقسام کتب حدیث 391
یونٹ نمبر13 اصول درایۃ 423
یونٹ نمبر14 ناسخ و منسوخ فی الحدیث 461
یونٹ نمبر15 اختلاف الحدیث و غریب الحدیث 489
یونٹ نمبر16 علم الجرح و التعدیل 537
یونٹ نمبر17 علم التخریج اور اس کے اسباب و مناہج 577
یونٹ نمبر18 قواعد وضع حدیث 621
معاشرے کی تباہی کے اسباب 363
علماء اور طلباء سے خطاب 379
فکر آخرت اور اس کے تقاضے 396
استقامت آخری خطبہ جمعہ 426

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
12 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام پاکستان سیاسی نظام علماء نفاذ شریعت

پارلیمنٹ اور تعبیر شریعت

پارلیمنٹ اور تعبیر شریعت

 

مصنف : حافظ عبد الرحمٰن مدنی

 

صفحات: 76

 

ادارہ تحقیقات اسلامی نے اسلام آباد انٹرنیشنل یونیورسٹی میں ایک سہ روزہ پروگرام کاانعقاد کیا۔ جس کا موضوع ’اجتماعی اجتہاد، تصور، ارتقاء اور عملی صورتیں‘ تجویز ہوا۔ اس سیمینار میں حافظ حافظ عبدالرحمٰن مدنی حفظہ اللہ نے ’پارلیمنٹ اور تعبیر شریعت‘ کے نام سے مقالہ پیش کیا۔ یہی مقالہ اس وقت کتابی صورت میں آپ کے سامنے ہے۔ جس میں حافظ صاحب نے نفاذ شریعت سے متعلق امت کے چار مشہور نظریات پر تبصرہ کیا ہے۔ سب پہلے علامہ اقبال کے نظریہ پر روشنی ڈالی گئی ہے۔ اس حوالہ سے دوسرے نظریہ کے طور پر انہوں نے انقلاب ایران اور طالبانی طرز فکر کو لیا ہے۔ تیسرا نظریہ پاکستان کے آزاد خیال اہل علم اور دینی سیاسی جماعتوں کا ہے، اس پر بھی حافظ صاحب نے سیر حاصل اور مدلل بحث پیش کی ہے۔ چوتھا اور آخری نظریہ وہ ہے جو عالم اسلام کے بعض ممالک میں شریعت کی عمل دار ی کی حد تک عرصہ سے رائج ہے۔ تعبیر شریعت کے حوالے سے یہ کتابچہ ایک علمی دستاویز ہے۔
 

عناوین صفحہ نمبر
پیش لفظ 7
نفاذ شریعت میں امت محمدیہ ﷺ کے مشہور نظریات 11
علامہ اقبال کی آرا حتمی نہیں بلکہ فکر ونظر کے ارتقائی مراحل ہیں 14
عقیدہ کی بجائے نظریاتی ارتقا کی ایک قرآنی مثال 15
ائمہ سلف کی  مسلمہ خدمات 16
اسلام دور نبوی سے نافذ ہے! 18
اجتہاد کا حق صرف علماء دین کو حاصل ہے 21
اجتہاد میں حکومت اتھارٹی ہے ،نہ علماء دین! 22
اسلامی شریعت میں وسعت ہے،انسانی جکڑ بندی نہیں! 28
کوئی امام بھی اپنے فہم شریعت کو دوسرے علماء پر عائد نہیں کرسکتا 29
بحث کے بنیادی سوالات
تدوین فقہ 32
اجتماعی اجتہاد بصورت پارلیمانی اجتہاد 43
اولی الامر کے احکامات کی پابندی 45
پارلیمنٹ میں فقہی نمائندوں کی حیثیت 51
حوالہ جات ومصادر ومراجع 61

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
1.5 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam پاکستان تاریخ تاریخ پاکستان

پاکستان قائم رہنے کے لیے بنا ہے

پاکستان قائم رہنے کے لیے بنا ہے

 

مصنف : میجر سید حیدر حسن

 

صفحات: 386

 

” تحریک پاکستان اصل میں مسلمانوں کے قومی تشخص اور مذہبی ثقافت کے تحفظ کی وہ تاریخی جدو جہد تھی جس کا بنیادی مقصد مسلمانوں کے حقوق کا تحفظ اور بحیثیت قوم ان کی شناخت کو منوانا تھا ۔ جس کے لیے علیحدہ مملکت کا قیام از حد ضروری تھا ۔یوں تو تحریک پاکستان کا باقاعدہ آغاز 23 مارچ 1940 کے جلسے کو قرار دیا جا سکتا ہے مگر اس کی اصل شروعات تاریخ کے اس موڑ سے ہوتی ہے جب مسلمانان ہند نے ہندو نواز تنظیم کانگریس سے اپنی راہیں جدا کر لی تھی ۔ 1930 میں علامہ اقبال نے الہ آباد میں مسلم لیگ کے اکیسیوں سالانہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے باضابطہ طور پر بر صغیر کے شمال مغبر میں جداگانہ مسلم ریاست کا تصور پیش کر دیا ۔ چودھری رحمت علی نے اسی تصور کو 1933 میں پاکستان کا نام دیا ۔ سندھ مسلم لیگ نے 1938 میں اپنے سالانہ اجلاس میں بر صغیر کی تقسیم کے حق میں قرار داد پاس کر لی ۔ علاوہ ازیں قائد اعظم بھی 1930 میں علیحدہ مسلم مملکت کے قیام کی جدو جہد کا فیصلہ کر چکے تھے ۔1940 تک قائد اعظم نے رفتہ رفتہ قوم کو ذہنی طور پر تیار کر لیا ۔23مارچ 1940 کے لاہور میں منٹو پارک میں مسلمانان ہند کا ایک عظیم الشان اجتماع منعقد ہوا جس میں تمام ہندوستان کے مختلف علاقوں سے مسلمانوں نے قافلے کی صورت سفر کرکے شرکت کی اور ایک قرار داد منظور کی جس کے مطابق مسلمانان ہند انگریزوں سے آزادی کے ساتھ ساتھ ہندوؤں سے بھی علیحدہ ریاست چاہتے تھے ۔ زیر تبصرہ کتاب” پاکستان قائم رہنے کے لئے بنا ہے “محترم  میجر سید حیدر حسن(ریٹائرڈ) کی تصنیف ہے ،جس میں انہوں نے پاکستان کی بقاء کے لئے موجودضروری امور کی طرف اشارہ کیا ہے۔

 

عناوین صفحہ نمبر
پاکستان قائم رہنے کےلیے بناہے
پیش لفظ 11
توشہ آخرت
اللہ 17
الرحمن 19
الرحیم 21
بسم اللہ الرحمن الرحیم 24
سورۃ الفاتحہ 28
آئیے قرآن سے تعلق جوڑیں 33
حضرت محمد ﷺ سرچشمہ علم وہدایت 38
اسلام کیاہے ؟ 47
جہادزمانہ کی قید سے آزاد ہے 54
مقام وحی اول تک 57
امن وسلامتی کادین اورہم 62
آیئے عہد کریں 68
حق غالب آئےگا ان شاءاللہ 71
قصاص میں زندگی ہے 74
ایک کہانی بہت سچی 77
استقبال رمضان 80
مجھے ہے حکم اذاں لاالہ الا اللہ 82
حضور نبی اکرم ﷺ بطورسپہ سالار 94
پاکستان
میرابابا اتنا پریشان کبھی نہ تھا 113
صرف چند سیکنڈ 115
فکر پریشان 120
اب چراغ سےچراغ جلیں گے 124
سانحہ حفصہ :ایک فوجی افسرکی نظرمیں 128
پاکستان قائم رہنے کےلیے بناہے 131
ناکام پالیسیاں اوران کےنتائج 133
نشان راہ 136
نامساعد حالات اورپاکستان 138
وہی تاریخ اوروہی مہینہ 143
ضرورت ہےایک محمد بن قاسم کی 145
پاکستان قائم رہنے کےلیے بناہے 147
انتباہ 150
بھارت کےسامنےڈٹ جانا چاہیے 153
تاج پوشی کاانتظار ہاے 156
بوناپن 160
مشرقی پاکستان میں لسانی تحریک 162
ارود بطور قومی اورسرکاری زبان 171
بنگالی قوم پرستی حقائق کیاہیں 175
رمضان المبارک اورپاکستان کادرخشاں مستقبل 187
قوم کےگناہوں کاکفارہ 191
آئندہ حملے سےبچنے کی تیاری 194
ذلت کب تک ؟ 196
وہ سب ایک ہیں 198
گیہوں کےساتھ گھن بھی پس جاتاہے 200
توانائی
پاکستان اورکالاباغ ڈیم 205
کالا باغ ڈیم اوراسراف 209
کالا باغ ڈیم ایک اورپہلو سے 211
تنازع کاحل 214
امہ
دورنبوی ﷺ کاچشم کشاواقعہ 217
حزب اللہ بمقابلہ حزب الشیطان 219
اورشیطان کامیاب جارہا ہے 222
یہ وقت دعاہے 226
تاریخ کی ظالم ترین ایمپائرکےغلام کےغلام 233
امہ کے تین انتہا یمپڑے مجرم 235
دشمنوں کےخدمت گزار 239
مسلم دولت مشترکہ کاقیام ؟ 243
خطوط
محسن پاکستان کےنام خط 255
جناب آصف علی زرداری کےنام کھلاخط 256
نارواایثار 258
نوازشریف کےلیے کھلا خط 259
اللہ کےسوا ہرشے فافی ہے 260
پھرتوایساہوگا 261
کیاہم ایک اورتنور سے پانی کےابلنےکاانتظار کررہے ہیں؟ 262
مصنوعی یک جہتی 263
ریمنڈڈیوس  کی امریکہ میں گرفتاری 264
شکیل آفریدی بلوچستان اورامریکی حاکمیت 265
کیاان پر کوئی قانون یاضابطہ اخلاق لاگونہیں ہوتا 266
مطلوب ہےاپنی مشہوری 267
نواز شریف کو مبارک بادمگر 268
متفرق
دوبیانیے 277
فلورنس کامصلوی 282
کمال کامتن اوربھر پورااداکاری 289
سراب یاحقیقت 292
ایک مشعل راہ شخصیت 295
مکافات عمل 299
یونٹ اوردسمبر 1971ءکی جنگ سےمتعلق اہم یادیں
خوبصورت جوانی دلیرانہ شہادت 303
کرنل سیدفاروق رحمان 307
بریگیڈئیر ڈینیل آسٹن 345
میرادوست کرنل احمد الحق 318
سیکنڈ لیفٹنینٹ نایاب افتخار کی کہانی 319
نیناکوٹ پر جوابی حملہ 321
غیرمطلبوعہ
چند سوالات قوم اورارباب اقتدارسے 325
کوئی امید پرنہیں آتی 327
مگرمچھ کےآنسو 329
ایک اوردریا کاسامنا 332
ملالہ اورملال 335
بلوچستان اورامریکی کانگرس کی قرارداد 338
ریمنڈڈیوس تیراشکریہ 339
جید سےگھردانےاوردےکملے دی سیانے 341
20وین ترمیم 342
چیف آف آرمی سٹاف کےنام کھلا خط 343
موروثی سیاست کاخاتمہ 345
تحریک انصاف کنونشن لیگ میں ڈھل گئی؟ 347
حیوانیت اورانسانیت 349
بےحسی کی انتہا 350
عمران خان تم سےکچھ کہناہے 353
محترم جناب عرفان صدیقی صاحب 354
کالم نگار 356
اب جاگ جادورنہ 357
آئین معطل کرنےولے پر شق 6کااطلاق 359
تبصرے

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
6.4 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام پاکستان خطبات و محاضرات اور دروس زبان نبوت

پاکستان میں کیا ہوگا

پاکستان میں کیا ہوگا

 

مصنف : سید محمد کفیل بخاری

 

صفحات: 116

 

مولانا سيد عطاءالله شاه بخاری ﷫اردو زبان کے عظیم خطیب، مجلس احرار اسلام کے بانی، تحریک ختم نبوت کے قائد اور سامراج كے خلاف برسر پیكارایک سپاہی اور جرنیل تهے۔آپ ایک ہمہ گیر اور پہلو دار شخصیت کے مالک تھے۔آپ نے ہندوستان کی آزادی میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا اور انگریز کو ہندوستان سے بھگانے می بنیادی کردار ادا کیا۔آپ نے اپنے پرجوش خطبات کے ذریعے پوری ہندوستان میں آزادی کی آگ لگا دی۔آپ جب تلاوت قرآن پاک كرتے تو ایک سماں بندھ جاتا تھا۔ شاعر مشرق علامہ اقبال آپ كی تلاوت سنتے تو ان کے آنسؤوں كا سيلاب رواں ہوجاتا۔آپ کی نس نس ميں محبت رسول ﷺ اور انگ انگ ميں سامراج كی نفرت بھری ہوئی تهی۔آپ نے ساری زندگی مرزائيوں كے خلاف علمی اور عملی كام كيا۔آپ فرمايا کرتے تھے کہ  جس دين ميں ابوبكر، عمر، عثمان اور علی  كی قدر نہيں وه دين سچا نہيں ہوسكتا۔ زیر تبصرہ کتاب”پاکستان میں کیا ہوگا؟” محترم محمد کفیل بخاری صاحب کی تصنیف ہے، جوامیر شریعت سید عطاء اللہ شاہ بخاری﷫ کے خطبات پر مشتمل ہے۔اللہ تعالی سے دعا ہے کہ وہ مولف کی اس محنت کو اپنی بارگاہ میں قبول فرمائے اور ان کے میزان حسنات میں اضافہ فرمائے۔آمین

 

عناوین صفحہ نمبر
میرا نسب نامہ                                                                                                                                                                                                            حضرت امیر شریعت 10
حرف اول                                         سید محمد کفیل بخاری 11
امیر شریعت ایک ہمہ گر شخصیت                                                                                                                                                   نوابزدنصر اللہ خان 14
بخاری صاحب کی اخلاقی جرات                                            مجید نظامی 19
نظم                                                                                                                       حفیظ جالندھر ی 20
بانی پاکستان کاحلف نامہ 21
عکس تحریر 23
قیام پاکستان سے پہلے :
آزادی اور غلامی 24
اسلام اور مسلمانوں کادشمن 25
انگریزی اقتداری کی عمر 26
قرآن یاانڈیا ایکٹ 27
حصول آزادی 28
حدوجہد آزادی 29
زمین سے پہلے دنو ں پر اسلام کانفاذ 31
انگریز اور اسلام 32
مسٹر جناح سے لڑائی سیاسی ہے ذاتی نہیں 33
حکومت الیہ او رپاکستان 35
انجام کیاہوگا 37
حکومت الہیہ اور نعرہ پاکستان 38
پالیٹکس 44
پاکستان کی تھیوری 45
پہلے تم نکلو 46
پاکستان میں کیا ہوگا 47
نئی عارضی حکومت او روزارتی مشن فارمولا 58
صحیح فیصلوں اور تیاری کاوقت 61
آزاجی کی پہلی قسط ہمہ گیر تباہی 63
وائسرائے کااعلان :جناح او رنہرہ کاتفاق 65
دوستی کے تمام رشتے منقطع ہوگئے 68
قیام پاکستان کے بعد
پاکستان کی فلاح وبہود 71
پاکستان میں نفاذ اسلام سے فرار کیوں ؟ 73
نام اسلام کاکام انگریز 74
سیاست سے دستبری دواری 75
دل کی بات 77
اسلام او رپاکستان 82
پاکستان میراملک ہے میں اس کاوفادار ہوں 83
دفاع پاکستان 84
پاکستان کےرہنماؤ 85
سیاسی وشہری حقوق سے نہیں الیکشن سے دستبرداری 86
قوم کافیصلہ قبول 88
لیگ سے اختلاف واتفاق 89
تحفظ ختم نبوت کے لیے مسلم لیگ کی حمایت 90
اسلامی نظام حکومت کیوں فٹ  نہیں 91
چشم پوشی 92
وفاداری کے طالب 93
پاکستان کی حفاظت 94
پاکستان مجھے ہر چیز سے عزیز ہے 100
اسلام او رپاکستان کےغدار 102
قادیانی دم بریدہ سگان برطانیہ 103
پاکستان کے جسم کاسیاسی ناسور 104
پاکستان کامستقبل 105
تراعلاج نظر کےسوا کچھ اور نہیں 106
نتیجہ سامنے ہے 108
وارث شاہ کاپاکستان 109
پاکستان میں کیا کیا ہوگا (نظم علامہ انور صابری) 111

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
2.5 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام تہذیب روح مسلمہ شخصیات

نقوش اقبال

نقوش اقبال

 

مصنف : سید ابو الحسن علی ندوی

 

صفحات: 322

 

یہ کتاب عظیم مفکر اسلام مولانا ابو الحسن ندوی ؒ کی تصنیف ’روائع اقبال‘کا اردو قالب ہے ۔اس میں مولانا موصوف نے علامہ اقبال کی اہم نظمون اور متفرق اشعار سے اسلام کی بنیادی تعلیمات ،ان کی روح اور ملت اسلامیہ کی تجدید واصلاح،مغربی تہذیب اور اس کے علوم وغیرہ کے متعلق اقبال کے افکار وخیالات کا خلاصہ اور لب لباب پیش کر دیا ہے۔جس سے اس کے اہم رخ سامنے آجاتے ہیں ۔کتاب کے بعض مندرجات سے اختلاف ممکن ہے لیکن بحثیت مجموعی یہ انتہائی مفید کتاب ہے ۔مختصر ہونے کے باوصف یہ کتاب اقبال کے مقصد،پیام اور افکار وتصورات کو سمجھنے کے لیے بالکل کافی ہے ۔اقبال کو خاص طور پر ان کے دینی رجحان اور دعوتی میلان کی روشنی میں دیکھنے کو کوشش اب تک بہت کم ہوئی ہے ۔زیر نظر کتاب میں اقبال کے قلب وروح تک پہنچنے اور اس کی چند جھلکیاں دکھانے کی کامیاب کوشش کی گئی ہے۔
 

عناوین صفحہ نمبر
دیباچہ طبع چہارم 5
دیباچہ طبع دوم 9
’’نقوش اقبال‘‘مبصرین کی نظر میں 11
مقدمہ 13
کچھ ترجمہ کے بارے  میں 25
میرا تعلق اقبال اور ان کے فن سے 31
شاعر اسلام اقبال ؒ حیات وخدمات 43
اقبال کی شخصیت کے تخلیقی عناصر 51
اقبال اور مغربی تہذیب وثقافت 70
مغربی تہذیب اور مسلم ممالک 79
اقبال اور عصری نظام تعلیم 85
مغربی نظام تعلیم 85
عصری دانش گاہوں کا ظلم عظیم 86
اقبال کا نظریہ علم وفن 97
اقبال اور فنون لطیفہ 103
’’انسان کامل‘‘اقبال کی نگاہ میں 116
مرد مومن کا مقام 134
ابلیس کی مجلس شوری 141
مسجد قرطبہ 168
اقبال اور مسئلہ فلسطین 195
مسافر غزنی و افغانستان 201
طارق کی دعا 207
ساقی نامہ 214
ابو جہل کی نوحہ گری 225
شکوہ اور مناجات 263
اقبال اور قومیت وطنیت 272
عورت اقبال کے کلام میں 282
کلام اقبال میں تاریخی حقائق وشارات 293

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
7 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام تاریخ تاریخ اسلام نصابی کتب

مطالعہ تاریخ اسلام کوڈ 975

مطالعہ تاریخ اسلام کوڈ 975

 

مصنف : ڈاکٹر سید مطلوب حسین

 

صفحات: 92

 

تاریخ اسلام کا آغاز پہلے نبی اور رسول کی آمد سے ہی ہو جاتا ہے۔تاریخ اسلام، چودہ صدیوں کے واقعات،حادثات، نشیب وفراز اور احوال وحالات پر مشتمل ہے۔تاریخ کے ذریعے ہم اپنے اسلاف کے کارہائے نمایاں سے واقف ہوتے ہیں۔تاریخ کے مطالعہ سے حوصلہ بلند ہوتا ہے اور دانائی وبصیرت میں اضافہ ہوتا ہے۔ کتاب وسنت ڈاٹ کام پر جہاں مذہبی ، دینی، اور علمی وتحقیقی کتب اپلوڈ کی جاتی ہیں ۔وہاں  مدارس وسکولز اور کالجز ویونیورسٹیز کے طلباء کی سہولت کے لئے نصابی کتب کو بھی ترجیحی طور پر اپلوڈ کیا جاتا ہے، تاکہ طلباء بآسانی ان کتب کو حاصل کر سکیں اور علمی ونصابی تیار بھر پور طریقے سے کر سکیں۔ زیر تبصرہ کتاب ” تاریخ اسلام برائے ایم اے علوم اسلامیہ، کوڈ نمبر974″ محترم ڈاکٹرسید مطلوب حسین صاحب  کی کاوش ہے، جس کی نظر ثانی ڈاکٹر علی اصغر چشتی صاحب اور حافظ محمد سجاد تترالوی صاحب  نے کی ہے ۔اس کتاب کو علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی ، اسلام آباد کے کلیہ علوم اسلامیہ نے  بطور سلیبس کے شائع کیا ہے۔اس کورس میں عہد بنو امیہ اور عہد بنو عباس کے  حالات کی آگاہی پیش کی گئی ہے۔۔امید واثق ہے  کہ اگر کوئی طالب علم اس کتاب سے تیاری کر کے امتحان دیتا ہے تو وہ ضرور اچھے نمبروں سے پاس ہوگا۔ان شاء اللہ۔اللہ تعالی سے دعا ہے کہ مولف کی اس محنت کو قبول فرمائے اور تمام مسلمانوں کو دنیوی واخروی تما م امتحانوں میں کامیاب فرمائے۔آمین

 

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
2.1 MB ڈاؤن لوڈ سائز