حرارت ایمان یعنی ایمان کو گرما دینے والے واقعات

حرارت ایمان یعنی ایمان کو گرما دینے والے

 

مصنف : ابو یاسر

 

صفحات: 427

 

جہاں کے لیے خاصی دلچسپی کا سامان ہوتے ہیں وہیں یہ انسان کے دل پر بہت سارے پیغام اوراثرات نقش کر دیتے ہیں۔ اسی لیے مبین میں تعالیٰ نے جا بجا سابقہ اقوام کے قصص و بیان کیے ہیں تاکہ لوگ ان سے عبرت و نصیحت حاصل کریں اور اپنی زندگی میں وہ غلطیاں نہ کریں جو ان سے سرزد ہوئیں۔ ایک مکمل ضابطہ ہے جو ہر موڑ پر مکمل راہ نمائی کرتا ہے خوشی ہو یاغمی ہواسلام ہر ایک کی حدود وقیوم کو بیان کرتا ہے تاکہ کو ئی شخص خوشی یا تکلیف کے موقع پر بھی اسلام کی حدود سےتجاوز نہ کرے فرمان نبوی ہے ’’ مومن کامعاملہ بھی عجیب ہے اس کا ہر معاملہ اس کے لیے باعث خیر ہےاور یہ چیز مومن کے لیے خاص ہے ۔ اگر اسے کوئی نعمت میسر آتی ہے تووہ شکرکرتا ہے اور یہ اس کےلیے بہترہے اور اگراسے کوئی تکلیف پہنچتی ہے تو وہ صبر کرتا ہے اور یہ بھی اس کےلیے بہتر ہے۔‘‘ نبی کریم ﷺ اور وتابعین کی وسوانح میں ہمیں جابجا پاکیزہ مزاح او رہنسی خوشی کے او رنصیت آموز آثار وقصص ملتے ہیں کہ جن میں ہمارے لیے مکمل راہ نمائی موجود ہے ۔ لہذا اہمیں چاہیے کہ خوش طبعی اور پند نصیحت کےلیے جھوٹے ،من گھڑت اور افسانوی واقعات ولطائف کےبجائے ان مقدس شخصیات کی سیرت اور حالات کا مطالعہ کریں تاکہ ان کی روشنی میں ہم اپنے اخلاق وکردار اور ذہن وفکر کی کرسکیں۔ زیر کتاب ’’حرارت ایمان یعنی ایمان کو کو گرما دینے واقعات‘‘ مولانا ابو یاسر﷾ کی تصنیف ہے۔جس میں انہوں نے صحیح اور سے مکمل حوالہ جات کےساتھ پیش کیے ہیں تاکہ اپنی تسلی اور حوالہ دریافت کرنے والوں کومطمئن کیا جاسکے اور خطباء حضرات اپنے ودروس میں ان کوصحیح واقعات کو بیان کرسکیں۔فاضل مصنف نےاس کتاب کا ابتدائی عنوان تعالیٰ کی ہستی کے متعلق قائم کیا ہے او روہ صحیح کےمنتخب واقعات سے لیا گیا ہے۔ تاکہ ابتداء میں قاری تعالیٰ کے جاہ وجلال کا نقش ذہن میں رکھے ۔

 

عناوین صفحہ نمبر
فہرست
تعارف 7
7
تدوین 7
فرعی  اختلاف کااثر 8
عباسی کااثر 9
ایک مغالطے کاازالہ 10
حالات مصنف 16
دیباچہ ازمصنف 21
پہلاباب
رسول ﷺ کااپنی حدیثیں حفظ کرنے اورانہیں دوسرں تک پہنچانے کاحکم 28
رسول ﷺ کافرمان میری پہنچاؤاورمجھ پرجھوٹ نہ بولو 28
رسول ﷺ کااس شخص کے لیے دعاکرناجوحدیثیں پڑھے پڑھائے 29
رسول ﷺ  کافرمان کہ جوشخص میری امت میں سے چالیس حدیثیں حفظ کرے 30
رسول ﷺ کااہلحدیث کی عزت کرنے کاحکم 30
پرغربت کادورآنے کی خبراورغرباء کوخوشخبری 31
امت کے سترفرقےہونے کی خبر 32
کےعادل ہونے کی پشین گوئی 33
رسول ﷺ کے خلفاء ہیں 34
کے امانت دارہونے کی پیش گوئی 35
کو رسول ﷺ کےقرب بوجہ کثرت درود 37
طلباء کوبشارت نبوی ﷺ 38
اسنادکی فضیلت 39
رسول ﷺ کے امانت بردارہیں 41
اہلحدیث کےحامی اوردفاع کرنے والے ہیں 42
رسول ﷺ کے وارث ہیں 43
امت میں سے بہترین لوگ ہیں 43
ابدال اوراولیاء ہیں 45
نہ ہوتے تواسلام مٹ جاتا 45
دوسراباب 47
پرہیں 47
نجات کےحقدارہیں 47
طلب کی فضیلت 50
حدیث ودنیاکانفع ہے 50
خلفاء کااہلحدیث کی سرپرستی کرنا 50
اپنے بچوں کوحدیث کی دلانا 52
مرتے دم تک لکھنے میں مشغول رہنا 52
قوی والی جماعت ہے 53
سےمحبت رکھنےوالا اہل ہے 54
کی مدح اوراہل رائے کی مذمت 55
واہل حدیث کے 58
کاطلب کرناسب عبادتوں سے افضل ہے 58
کالکھناپڑھنانفل نمازاورروزوں سےافضل ہے 60
سے شفاحاصل کرنا 61
سیدناعمر ؓنے روایت سے کیوں روکااوراس کاصحیح مطلب 61
وتابعین کے فرامین برائے اشاعت 65
شاہان کی روایت کی تمناکرنا 67
کی مجلسوں کےسرورکابیان 69
تیسراباب 72
کی فضیلت میں بزرگان کے 72
بعض روایات کابیان جن سےکچھ لوگ مغالطے میں پڑجاتے ہیں اوران کاصحیح مطلب 75
سیدنامغیرہ ؓکےقول کاصحیح مطلب 80
امام مالک ؒ کےقول کاصحیح مطلب 83
امام اعمش کےقول کاصحیح مطلب 84
امام ابوبکرعیاش کےقول کاصحیح مطلب 87
امام ابوبکرعیاش کااہلحدیث کےفضائل بیان کرنا 89

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
7 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...