حضرت عمر بن عبد العزیز  ( کامران اعظم سوہدروی )

حضرت عمر بن عبد العزیز  ( کامران اعظم سوہدروی )

 

مصنف : کامران اعظم سوہدروی

 

صفحات: 411

 

المومنین سیدنا عمر بن عبد العزیز ﷫ کوپانچواں خلیفہ راشد تسلیم کیا گیا ہے ۔ حضرت عمربن عبد العزیز ﷫ عمرثانی کی حیثیت سےابھرکر سامنے آئے ۔جیسے سیدنا عمرفاروق اعظم نےاپنے 10 سالہ عہد میں ہزاروں مربع میل پر فتح حاصل کی۔حضرت عمر بن عبد العزیز نےگو اڑھائی سال خلافت کوسنبھالا مگر انہوں نے بھی متعدد علاقوں کو فتح کر کے حدود میں شامل کیا۔ انہوں نے کے علاوہ دعوت الی پر بھی خاصہ زور دیا اور کفر کےدلوں کو کی برکات سےآراستہ کر کے ان کو میں داخل کیا ۔ وسیراور ورجال کی کتب میں ان کے عدل انصاف ،خشیت وللہیت،زہد وتقوٰی ،فہم وفراست اور قضا وسیاست کے بے شمار محفوظ ہیں اور آپ کی پر مستقل کتابیں بھی لکھی گئی ہیں ۔ زیر کتاب’’حضرت عمر بن عبد العزیز ﷫‘‘ المومنین خلفیہ راشد سیدنا عمرفاروق کے حقیقی جانشین عمرثانی کی سیرت وخدمات اور کے حالات واقعا ت پر مشتمل ہے ۔یہ کتاب جناب کامران اعظم سوہدروی کی کاوش ہے ۔انہوں نے اس کتاب کو تیرا ابواب میں تقسیم کیا ہے۔دلچسپ پیرائیوں اور عنوانات باندھ کر حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ کی پوری کے ہر پہلو کو بحوالہ درج کیا ہے اور حضرت عمر بن عبد العزیز ﷫ کی صحیح کشی کی ہے ۔ کہیں غلو یا تنقیص کا عنصر نہیں ہے ۔یہ کتاب مناسب پر مبنی ہے جو بے جاتطویل واختصارسے مبرّا ہے۔ فاضل مصنف نے پوری کتاب میں دلچسپی کو برقرار رکھا ہے

 

عناوین صفحہ نمبر
دیباچہ 23
حرف چند 25
مقدمہ 29
حضرت عمر عبدالعزیز ﷫ 43
ابتدائی حالات 44
نام ونسب 44
حضرت عمر بن عبدالعزیز ﷫کےوالد کےمختصر احوال 46
عبدالعزیز بن مروان ﷫ کی 46
سیدنا عمر فاورق ﷜ کی تمنا 56
خصیف﷫ اخواب 47
پیدائش 49
وتربیت 49
حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ کےاساتذہ 50
حضرت عمر بن عبدالعزیز ﷫ کےتلامذہ 51
حلیہ مبارک 52
ازدواج اولاد 53
حالات قبل ازخلافت 56
مدینہ میں بحیثیت عامل اورکارنامے 56
عمربن عبدالعزیز ﷫ کی آل سیدنا علی﷜ سےمحبت 56
فقہائے کی مدینہ طلبی 66
فقہائے مدینہ سےخطاب 67
نبوی ﷺ کی توسیع 67
اطراف مدینہ کی مساجد کی تعمیر 69
کنوؤں اورراستوں کی تعمیر 69
معزولی 59
سلیمان بن عبدالملک کےمزاج میں رسوخ 60
سلیمان بن عبدالملک کااستخارہ 60
سلیمان کاعہد نامہ 60
سلیمان بن عبدالملک کی وفات 62
حالات بعداز 63
کادن 63
حضرت عمر بن عبدالعزیز ﷫ کی بیعت 63
کاپہلا خطبہ 64
کاحیاء 67
کانظام اقتصاد یات 75
سرکاری خزانہ میں تمام عامۃ المسلمین کاحق ہے 75
سابقہ خلیفہ کی مخصوص اشیاءبیعت المال میں 76
غصب کردہ مال جائداد کی واپسی 76
عراق کی غصب شدہ املاک کی واپسی 78
باغ فدک کےمعاملہ 79
باغ فدک کےبارےمیں استفسار 80
حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ کاخطاب 81
باغ فدک کی واپسی 82
قرض کی ادائیگی 82
قرض داروں سےکیامراد ہے 83
اہل خاندان کی برہمی 84
حلال کمائی کارزق 87
بیت المال کی آمدنی کی 88
بیت المال کےمصارف 89
بیت المال کی مخافظت کاانتظام 90
شاہی سواریوں کی واپسی 92
بیت المال کی اشیاء سےاجتناب 92
کی تقسیم 93
جیب سےعطیہ دینا 94
نظم خراج 95
شرح چنگی 96
جزیہ اورذمیوں کےحقوق 97
جزیہ میں تخفیف 99
محاصل میں اضافہ 100
رعایا کی خوش حالی 100
رفاہ عامہ کےکام 101
خیبر کی جائیداد کافیصلہ 102
یمن اوریمامہ کی اراضی کافیصلہ 103
امراء کےمطالبے  سےانکار 104
بنومروان کااسراف 105
بعض غلام امراء 105
حضرت عمربن بناۃ ایک مغرور سرکش 106
جوابی اورعدل کی عظیم  مثال 106
بن ولید کی سرکشی کاحل 108
تاجروں کےمنافع 110
بیت المال میں خلفائے کےحقوق 111
بےجاتصرف کی ممانعت 112
پورے ملک کاسرکاری خزانہ ایک ہی ہے 113
اعتدال واسراف 113
اسراف کی تعریف 114
اسراف کی ممانعت 115
حاکم مدینہ کو اسراف  سےبچنے کی ہدایت 116
کے زیورات بیت المال میں جمع 116
بیت المال عنبر 117
بیت المال کاگرم پانی 118
گورنروں کی تنخواہ اورحضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ کازہد 119
خلیفہ کی ذاتی زمین اوراس کاغلہ 119
عنبیہ کےعطیہ کاوقعہ 121
صاحبزادیوں کی معاشی حالت 124
سرکاری کھانے میں اسراف کی 124
ککڑیوں کاتحفہ 125
خلیفہ اورحج 126
پھوپھی صاحب کاوظیفہ 127
بیت المال کامال کس کاحق ہے 128
مال خدامسلمانوں کی ضروریات کےلیے 129
ہدیہ یارشوت 130
بیت المال کاموتی اورخلیفہ کی صاحبزادی 130
صبح وشام دورہم 131
ایک حکیمانہ نصیحت 131
امیرالمومنین کاصبح شام کاکھانا 131
اوزان اورپیمانے 133
ونظام اراضی 134
کانظام عشکریت 136
حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ کےہاں شجاعت کامفہوم 137
فتوحات 139
خوارج کامقابلہ 139
فتح برقہ وزریلہ 141
حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ اورخوارج 141
خوارج کےبعض 146
خوارج کےبعض 146
لشکر 147
بقول مورخین عمربن عبدالعزیز ﷫ کی ایک سیاسی غلطی 147
فتوحات کےسلسلے میں حضرت عمربن عبدالعزیز ی کانظریہ 148
حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ کےزمانے میں فوج 148
حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ کانظریہ بجانب تھا 149
مسلمہ بن عبدالملک کی فوج کوواپس آجانے کاحکم 149
طرندۃ کی فوج کوواپس آنے کاحکم 150
فاتحین کامفتوحہ اقوام سےحسن سلوک 150
عہد عمربن عبدالعزیز ﷫ میں تالیف قلب 151
کثیرالناس کاقبول 152
خارجیوں کےنام  مراسلہ 152
قتال کےآداب 155
خوارج کودعوت 158
بعض اہم اصلاحی اقدامات 161
نصرانیوں کےمنصب 166
ذمیوں کےبارےمیں خاص ہدایت 167
ذمیوں کےتاوان موقوف 168
سردارن لشکر کوحکم 168
معرکہ ارض روم قسطنطینہ 169
فوج کےبارے حضرت عمر بن عبدالعزیز ﷫ کاموقف 170
خوارج کی دوبارہ شورش 174
خوارج کی سرکشی کی وجہ 171
شوذب خارجی کی بغاوت 172
عبدلحمید بن عبدالرحمن﷫ کو احکامات 172
حضرت عمر بن عبدالعزیز ﷫ کابسطام کوپیغام 173
بسطام کاوفد 174
وفد بسطام کی حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ سےگفتگو 174
آل مروان کوخوف 174
بن مہلب کی گرفتاری 175
حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ اوریزید بن مہلب 175
بن مہلب سےمال غنیمت کی طلبی 175
بن مہلب کی اسیری 176
نتل کی مہم 176
وفد خراسان اورحضرت حضرت عمر بن  عبدالعزیز ﷫ 177
نومسلموں سےجزیہ وصول کرنےکی ممانعت 177
شرائط جنگ کاتعین 178
کی تمنا 178
قید ی عورت سےنکاح کی ممانعت 179
مسلم اورذمی جاسوسوں کوسزا 179
قاصد اوروکیل کامال غنیمت کاحصہ 180
اچانک حملہ  سےممانعت 180
نومسلم سےجزیہ لینے  کی  ممانعت 180
غیرمسلموں کاجزیہ 181
قیدیوں سےحسن سلوک 182
قید ی خوارج کےلیے فرمان 183
غیرمسلموں کےبارےمیں ہدیات 183
قسطنطنیہ کےمسلمان قیدی 184
ایک قیدی کاوقعہ 184
مسلمانوں کافرانس میں داخلہ 185
ترکوں کوشکست 187
کانظام عدالت 188
قاضی کےاوصاف 188
عمال کوعدل واحسان کی تلقین 189
فیصلہ کی بنیاد 189
اکقبر اورعدل کی تعریف 190
میں عدالت کاآغا ز 190
عدل کس پر واجب ہے 193
حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ کی عدل سےمحبت 194
ابن مغیرہ کوافریقہ کاقاضی کیوں بنایا؟ 194
کمال عدل 195
مقدمہ کافیصلہ 195
درس 196
حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫ کاایک خطبہ 196
سیدنا عمرفاروق ﷜ کی پیش گوئی 197
عدل کااحساس 197
فکر حضرت عمربن عبدالعزیز ﷫میں عدل 198
وقوع عدل 199
شبہ کی صورت میں فیصلہ 199

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
7.3 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Comments
Loading...