اسلامی وراثت

اسلامی

 

مصنف : مفتی عبد الرحیم اشرف حاکم الدین رحمانی

 

صفحات: 130

 

فوت ہونے والا شخص  اپنےپیچھے  جو اپنا مال ، زمین،زیور وغیرہ چھوڑ جاتاہے  اسے  ترکہ ، یا ورثہ کہتے ہیں ۔ کسی مرنے والے مرد یا  عورت  کی اشیاء اور  وسائلِ آمدن وغیرہ کےبارے  یہ بحث کہ کب ،کس حالت میں کس وارث کو کتنا  ملتا ہے شرعی   میں اسے الفرائض کہتے  ہیں ۔ علم  الفرائض (اسلامی وراثت) میں ایک نہایت اہم مقام رکھتا ہے ۔ مجید نے فرائض کےجاری نہ  کرنے پر سخت عذاب سے ڈرایا ہے ۔چونکہ وراثت کاتعلق براہ راست روز مرہ کی عملی زندگی  کے  نہایت اہم پہلو سے  ہے ۔ اس لیے  نبی اکرمﷺ نےبھی کواس کےطرف خصوصاً توجہ دلائی اور اسے  کا  نہایت ضروری جزء قرار دیا ۔ میں  سیدنا علی  ابن ابی طالب، سیدنا بن عباس،سیدنا عبد بن مسعود،سیدنا زیدبن ثابت﷢ کا الفراض کے ماہرین میں شمار ہوتا ہے ۔صحابہ کےبعد زمانےکی ضروریات نےدیگر علوم شرعیہ کی طرح اس علم کی تدوین پر بھی فقہاء کومتوجہ کیا۔ انہوں نے اسے فن کی اہمیت کے پش نظراس کے لیے  خاص اور اصلاحات وضع کیں اور اس کے ایک ایک   شعبہ پر وسنت کی روشنی  میں غوروفکر کر کے تفصیلی وجزئی قواعد مستخرج کیے۔اہل نے   اس علم کے متعلق مستقل کتب تصنیف کی ہیں۔ زیر کتاب’’ وراثت ‘‘ از مفتی عبد الرحیم  حاکم الدین رحمانی آف کراچی  کتب وراثت کی لسٹ میں ایک اہم اضافہ ہے  صاحب کتاب  نے  کتاب وسنت  سائٹ پر پبلش کرنے کےلیے خود اس کتاب کی   پی ڈی ایف ادارے  کو  ارسال کی ہے تعالیٰ ان  کی اس کاوش کو شرف قبولیت سے نوازے ۔(آمین

 

عناوین صفحہ نمبر
حرف اول 7
عرض مولف 11
12
کے بارے میں قرآنی 14
یتیم کے بارے میں قرآنی 18
وارثوں میں مال تقسیم کرنے سے پہلے کی شرطیں 24
تقسیم کرنے کی شرطیں 27
وارث ہونے کے اسباب 27
نہ دینے کے اسباب 28
میں نقصان یا محرومی کے اسباب 29
میں کمی پانے والے وارث 30
کے مکمل حصے سے محروم ہو جانے والے وارث 31
کبھی محروم نہ ہونے والے وارث 32
مردوں او رعورتوں میں سے کون کون وارث ہیں 33
ورثا اور انکے حصے 33
مقررہ حصے اور انکے وارث 33
عصبہ 34
اصل 44
اصل کے 48
اعداد میں نسبت اور اصل 52
اصل کی قسمیں 53
دوبارہ دینا 57
عول 58
عول کا حکم 60
عول کا حکم 60
عول کن عدد میں واقع ہوتا ہے 61
تصحیح 63
جب کسر ایک سے زائد فریق میں واقع ہو 65
تصحیح میں تماثل کی مثال 66
تصحیح میں تداخل کی مثال 67
تصحیح میں توافق کی مثال 68
تصحیح میں تباین کی مثال 68
مال تقسیم کرنے کا طریقہ 69
کیلکولیتر اور تصحیح 71
دس لاکھ روپے کی تقسیم 72
پانچ  لاکھ روپے کی  کی تقسیم 72
پانچ  لاکھ روپے کی  کی تقسیم 73
دس   لاکھ روپے کی  کی تقسیم 74
پانچ کروڑ روپے کی ورثاء میں تقسیم 76
دو کروڑ روپے کی ورثا میں تقسیم 77
تین کروڑ روپے کی ورثا میں تقسیم 78
پچاس لاکھ روپے کی ورثا میں تقسیم 80
ایک کروڑ روپے کی تقسیم 81
پانچ کروڑ روپے کی ورثا میں تقسیم 82
مناسخہ کا بیان 83
مرنے والے کی قضاء 84
کا مال دس لاکھ روپے اور قرضہ پندرہ لاکھ روپے ہو 91
خواجہ سراء 93
حمل 94
مفقود 95
گمشدہ 97
کیا زندگی میں تقسیم کی جاسکتی ہے 98
کی تقسیم سے پہلے اپنا حصہ لینا 100
سوتیلے ماں باپ بہن بھائی اور اولاد کی 101
لے پالک بیٹے کی 102
بڑے یا لاڈلے بچے کو زیادہ دینا 104
بیٹے کی موجودگی میں یتیم پوتوں کی 107
یتیم چھوٹے بچے 108
بچی کی جہیز کے بدلے سے محرومی 109
ورثاء کا نہ لینا 111
اولاد کو جائیداد سے عاق کرنا 112
اجتماعی 114
قتل کی دیت 114
ماموں خالہ پھوپھی کی 115
زو والارحام 116
پڑوسی اور اہل محلہ کی 117
قوم کے افراد کی 118
زنا سے پیدا ہونے والا بچہ اپنے ماں باپ کا وارث ہو گا 118
کیا بھی میں شمار ہو گا 121
کی طرف سے صدقہ کرنا 122
شوہر جس بچے کو اپنا نہ مانے وہ ماں کا وارث ہو گا 125
کا مقام 126

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
2.1 MB ڈاؤن لوڈ سائز

You might also like
Leave A Reply