Categories
Islam اسلام اعمال زبان سنت شروحات حدیث علوم حدیث محدثین معاشرت

شرح اربعین نووی

شرح اربعین نووی

 

مصنف : یحییٰ بن شرف النووی

 

صفحات: 186

 

کتاب اللہ اور سنت رسول ﷺدینِ اسلامی کے بنیادی مآخذ ہیں۔ احادیث رسول ﷺ کو محفوظ کرنے کے لیے کئی پہلوؤں اور اعتبارات سے اہل علم  نے خدمات  انجام دیں۔ تدوینِ  حدیث  کا آغاز  عہد نبوی ﷺ سے  ہوا صحابہ وتابعین  کے  دور میں  پروان چڑھا او ر ائمہ محدثین کےدور  میں  خوب پھلا پھولا ۔مختلف  ائمہ  محدثین نے  احادیث  کے کئی مجموعے مرتب کئے او رپھر بعدمیں اہل علم  نے ان  مجموعات کے اختصار اور شروح  ،تحقیق وتخریج او رحواشی کا کام کیا۔مجموعاتِ حدیث میں اربعین نویسی، علوم حدیث کی علمی دلچسپیوں کا ایک مستقل باب ہے ۔عبداللہ بن مبارک﷫ وہ پہلے محدث ہیں جنہوں نے اس فن پر پہلی اربعین مرتب کرنے کی سعادت حاصل کی ۔بعد ازاں علم حدیث ،حفاظت حدیث، حفظ حدیث اورعمل بالحدیث کی علمی او رعملی ترغیبات نے اربعین نویسی کو ایک مستقل شعبۂ حدیث بنادیا۔ اس ضمن میں کی جانے والی کوششوں کے نتیجے میں اربعین کے سینکڑوں مجموعے اصول دین، عبادات، آداب زندگی، زہد وتقویٰ او رخطبات و جہاد جیسے موضوعات پر مرتب ہوتے رہے ۔اس سلسلۂ سعادت میں سے ایک معتبر اور نمایاں نام ابو زکریا یحییٰ بن شرف النووی کا ہے جن کی اربعین اس سلسلے کی سب سے ممتاز تصنیف ہے۔امام نووی نے اپنی اربعین میں اس بات کا التزام کیا ہے کہ تمام تر منتخب احادیث روایت اور سند کے اعتبار سے درست ہوں۔اس کے علاوہ اس امر کی بھی کوشش کی ہے کہ بیشتر احادیث صحیح بخاری اور صحیح مسلم سے ماخوذ ہوں ۔اپنی حسن ترتیب اور مذکورہ امتیازات کے باعث یہ مجموعۂ اربعین عوام وخواص میں قبولیت کا حامل ہے انہی خصائص کی بناپر اہل علم نے اس کی متعدد شروحات، حواشی اور تراجم کیے ہیں ۔عربی زبان میں اربعین نووی کی شروحات کی ایک طویل فہرست ہے ۔ اردوزبان میں بھی  اس کے کئی تراجم وتشریحات پاک وہند میں شائع  ہوچکی ہیں ۔زیر نظر شرح بھی  اسی سلسلے  کی ایک اہم کڑی ہے ۔جس میں احادیث کا ترجمہ  فوائد وتشریح انڈیا  کے جید عالم دین   شیخ  عبد الہادی عبد الخالق مدنی ﷾کی  کاوش ہے۔انہوں نے  آسان فہم انداز میں  بھر پور ترجمانی کی  ہے اورعلمی واصلاحی فوائد تحریر کیے ہیں ۔اس کتاب کی اہم خوبی ہرروایت  کی تخریج کےساتھ ساتھ  صحت وسقم کے اعتبار سے ہر روایت پر محدث العصر حالظ زبیر علی زئی﷫ کا نمایاں  حکم ہے ۔نیز احادیث کے متن کے لیے  دار المہناج بیروت  سے شائع شدہ اربعین نووی کے محقق نسخے  کو اصل قرار دیا گیا ہے ۔ جسے محققین نے  تین  قلمی نسخوں کی روشنی میں مرتب کیا ہے ۔اور اسی طرح فاضل نوجوان  مولانا عبد اللہ یوسف ذہبی﷾ (ایم فل سکالر لاہور انسٹی ٹیوٹ فارسوشل سائنسز) نے  اپنے رفقاء کے ساتھ بڑی محنت وجانفشانی سے اس کتاب کو خوب سے خوب تر بنانے کے لیے  ہر ممکن کوشش کی ہے ۔جس سے اس کتاب کی افادیت میں مزید اضافہ ہوگیا ہے ۔ اللہ تعالیٰ اس کتاب کو طباعت کے  لیے تیار کرنے والے  تمام احباب کوجزائے خیر عطا فرمائے  ، ان کی دین ِاسلام کی اشاعت  وترویج کے لیے محنتوں کوقبول فرمائے  اور اس کتاب کو  عوام وخواص کی اصلاح کاذریعہ بنائے (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
عرض ناشر 7
امام نووی  کے حالات زندگی 9
پیش لفظ از مترجم 18
نیک کی اہمیت 25
دین کے تین مراتب اسلام ، ایمان اور احسان 29
ارکان اسلام 34
تخلیق انسانی کے مراحل اور انجام آخرت 37
بدعت کی مذمت 41
حلال و حرام اور اصلاح قلب 43
دین خیر خواہی کا نام ہے 46
مسلمان کے جان و مال کا تحفظ 50
اطاعت رسول اور کثرت سوال کی ممانعت 53
حلال روزی کی اہمیت 56
شبہات سے اجتناب 60
غیر متعلق امور سے اجتناب 62
اخوت اسلامی 64
حرمت خون مسلم 66
ایمان کے بعض خصائل 71
غصے کی ممانعت 75
ہر کام میں احسان کا حکم 78
تقویٰ اور حسن اخلاق 80
اللہ کی حفاظت اور نصرت کے ذرائع 84
حیا ایمان کا جز ہے 91
استقامت فی الدین 93
جنت کا راستہ 96
چند اعمال صالحہ کے فضائل 99
حرمت ظلم اور حقیقت توحید 104
صدقہ اور اس کی مختلف صورتیں 110
ہر نیکی صدقہ ہے 114
نیکی اور گناہ کی پہچان 117
اتباع سنت 120
خیر کے دروازے 126
حدود الٰہی کی پابندی ضروری ہے 133
اللہ اور لوگوں کی محبت حاصل کرنے کا طریقہ 136
ضرر رسانی کی ممانعت 139
دعویٰ کیسے ثابت ہوتا ہے 141
برائی کے خاتمے کی کوشش 143
اخوت اسلامی کے تقاضے 146
آداب معاشرت اور طلب علم کی فضیلت 152
اللہ تعالیٰ کا فضل و کرم 156
تقرب الٰہی اور اس کے حصول کا ذریعہ 160
خطا نسیان اور جبر کی معافی 164
دنیا کی بے ثباتی 166
اطاعت رسول 169
توبہ و استغفار کی فضیلت 171
اربعین نووی میں جن کتب سے احادیث لی گئی ہیں 179
اربعین نووی میں صحابہ کرام ؓ کی مرویات 180
اطراف الحدیث 182

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
4.7 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اہل تشیع سنت

شیعوں کا اعتقاد

شیعوں کا اعتقاد

 

مصنف : عبد اللہ محمدالسلفی

 

صفحات: 76

 

عقائد کی تصحیح اخروی فوز و فلاح کے لیے اولین شرط ہے۔ یہی وجہ ہے کہ قرآن کریم میں اور انبیاء ؑ سب سے پہلے توحید کا علم بلند کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ زیر مطالعہ کتاب میں روافض اور  شیعہ کے اعتقاد پر علمی انداز میں قلم اٹھایا گیا ہے۔  فاضل مصنف نے انتہائی عرق ریزی کے ساتھ ان لوگوں کا مسکت جواب پیش کیا ہےجو ہر وقت آئمہ کی تقدیس اور صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم اجمعین کے بارے لعن طعن کرنے میں رطب اللسان نظر آتے ہیں۔  اس کتاب کی خاص بات یہ ہے کہ مصنف نے رافضہ کے مشہور و معروف آئمہ کی اپنی  کتابوں سے ہی  ان کے تمام اعتراضات کا جواب دیا ہے۔علاوہ ازیں روافض کا ظہور کس طرح ہوا، رجعت اور تقیہ کا کیا چیز ہے اس پر قیمتی آراء کا اظہار کیا گیا ہے۔
 

عناوین صفحہ نمبر
تقدیم 2
مقدمہ 3
رافضہ کاظہور 5
شیعہ کانام رافضہ کیونکرہوا 7
عقیدہ بداء جس پررافضہ یقین رکھتے ہیں 8
صفات کے بارہ میں رافضہ کاعقیدہ 9
موجودہ قرآن جسکی حفاظت کی ذمہ داری اللہ نے لے رکھی ہے اس کے بارہ میں رافضہ کاعقیدہ 11
صحابہ کرام کےبارہ میں رافضہ کاعقیدہ 15
یہودورافضہ میں مشابہت 18
آئمہ کے بارہ میں رافضہ کےعقائد 20
رافضہ کے یہاں تقلیدکاعقیدہ 29
عقیدہ  طینیہ جس پررافضہ کاعقیدہ ہے 31
اہل سنت کے بارہ میں رافضہ کاعقیدہ 33
متعہ کے بارہ میں رافضہ کاعقیدہ اوراسکی فضیلت 35
نجف وکربلاکے بارے میں رافضہ کاعقیدہ اوراسکی زیارت کی فضیلت 40
رافضہ اوراہل سنت کے مابین اختلاف کے اسباب ووجوہ 44
یوم عاشورہ اوررافضہ 46
بیعت کے سلسلے میں رافضہ کاعقیدہ 47
اہل سنت اوررافضہ کے درمیان قربت اورہم آہنگی پیداکرنے کاحکم 51
رافضہ کے بارہ میں آئمہ سلف وخلف کے اقوال 52
’ومتنیٰ بدائہاوانسلت‘کہ مجھے اپنامرض دیکرسرک گئی 54
نام نہادسورۃ ولایت 58
فاطمہ کی نام نہاد تختی 65

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
1 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام اہل تشیع سنت متعہ

شیعیت تحلیل و تجزیہ

شیعیت تحلیل و تجزیہ

 

مصنف : محمد نفیس خاں ندوی

 

صفحات: 337

 

تاریخ اسلام کے مطالعہ سے یہ افسوسناک حقیقت سامنے آتی ہے کہ اسلام کو خارجی حملوں سے کہیں زیادہ نقصان اس کے داخلی فتنوں ،تحریف وتاویل کے نظریوں ،بدعت وتشیع ،شعوبیت وعجمیت اور منافقانہ تحریکوں سے پہنچا ہے،جو اس  سدا بہار وثمر بار درخت کو گھن کی طرح کھوکھلا کرتی رہی ہیں ،جن میں سر فہرست شیعیت اور رافضیت کی خطرناک اور فتنہ پرور تحریکیں ہیں ۔جس نے ایک طویل عرصے سے اسلام کے بالمقابل اور متوازی ایک مستقل دین ومذہب کی شکل اختیار کر لی ہے۔ زیر نظر کتاب’’شیعیت تحلیل وتجزیہ‘‘ محمد نفیس خاں ندوی  کی تصنیف ہے۔ فاضل مصنف نےاس کتاب میں شیعوں کے  قرآن،رسالت اور صحابہ کرام سے متعلق عقائد کو ان کی مستند کتابوں کی روشنی میں  واضح کیا ہے اور شیعیت کی حقیقت،یہودیت سے وابستہ اس کے آنے بانے اور اس کے حقیقی خدوخال کونمایاں کرنے کی کوشش کی ہے ۔

 

عناوین صفحہ نمبر
نذر عقیدت 17
شیعیت کی تاریخ
تاریخی پس منظر 19
یہودیت 20
میثاق مدینہ 22
بنوقینقاع کی عہد شکنی 24
بنونضیرکی کارستانیاں 26
بنونضیر کاانجام 27
بنوقریظہ کی بغاوت 29
بنوقریظہ کاانجام 32
خیبرکےیہود 33
ایک مجرمانہ سازش 34
نوٹ 35
جزیرۃ العرب سے یہودیوں کی جلاوطنی 35
مجوسیت 37
فارس 37
نامہ محمدی صلی اللہ علیہ وسلم بنام کسری پرویز 38
اہل فارس کی نفسیات 39
حضرت عمررضی اللہ عنہ کی شہادت 41
حضرت عمررضی اللہ عنہ کاقاتل شیعوں کاہیرو 42
یہودیت ومجوسیت کاگٹھ جوڑ 42
عبداللہ ابن سباکی فتنہ سازی 43
عبداللہ ابن سباکی محاذآرائی 45
عبداللہ ابن سباکاسیاسی محاذ 46
خلافت عثمانی رضی اللہ عنہ میں شورشیں 47
نوٹ 48
ابن سباکاکردار 49
ابن سباکےسیاسی دورے 49
جعلی خطوط 51
سبائی فتنہ کاعروج 52
حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کامحاصرہ 53
خط کس نے لکھاتھا؟ 55
مظلومانہ شہادت 56
شہادت عثمان رضی اللہ عنہ اورصحابہ کرام کاعمل 57
سبائیت کی کامیابی 59
عبداللہ ابن سباکامذہبی محاذ 60
حضرت علی رضی اللہ عنہ کی شان میں غلو 60
حضرت علی رضی اللہ عنہ کی امامت کاعقیدہ 61
حضرت علی رضی اللہ عنہ کی الوہیت کاعقیدہ 62
حضرت علی رضی اللہ عنہ کی رجعت کاعقیدہ 63
حضرت علی رضی اللہ عنہ کارد عمل 64
شیعان علی رضی اللہ عنہ 64
امیرالمؤمنین حضرت علی رضی اللہ عنہ المرتضی 66
حضرت علی رضی اللہ عنہ کامطالبہ 68
قصاص عثمان رضی اللہ عنہ کامطالبہ 68
جنگ جمل اورسبائیوں کاکردار 69
مرکزخلافت کی منتقلی 70
حضرت علی رضی اللہ عنہ اورحضرت امیرمعاویہ رضی اللہ عنہ 71
صفین کی جنگ اورسبائی کردار 74
خوارج کاظہور 76
نہروان کی جنگ 78
حضرت علی رضی اللہ عنہ کی شہادت 78
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشین گوئی 80
نوٹ 81
ابن سباکی کامیابی 82
حضرت علی رضی اللہ عنہ۔شیعوں کی نظرمیں 83
علمی کمال 83
واقعات عالم کاعلم 84
ربوبیت 84
جنت وجہنم کی ملکیت 85
خداسے ہم کلامی 85
قرآن ناطق 85
نبی سے بڑا مقام 86
فرشتہ کانازل ہونا 86
انبیاءکامجموعہ 86
حضرت علی رضی اللہ عنہ کی قبرکی زیارت 87
حضرت علی رضی اللہ عنہ کی شان میں گستاخیاں 87
شیعہ۔حضرت علی رضی اللہ عنہ کی نظرمیں 90
شیعوں کولعنت وملامت 90
حضرت علی کااظہارحق 91
حضرت حسن رضی اللہ عنہ کاعہد خلافت 92
خلافت اوراس سے دست برداری 93
حضرت معاویہ رضی اللہ عنہ سے صلح 95
شیعوں کاردعمل 96
حضرت حسن رضی اللہ عنہ کی شیعوں سے بیزاری 97
اہل کوفہ کوپھٹکار 97
شہادت 98
شہادت حسین رضی اللہ عنہ۔اسباب واثرات 99
یزیدکی ولی عہدی 99
حضرت حسین رضی اللہ عنہ کاموقف 102
اہل کوفہ کودعوت  نامے 102
مسلم بن عقیل کوفہ میں 104
نوٹ 107
حضرت حسین رضی اللہ عنہ کی روانگی کاعزم 107
کربلا میں 108
حضرت حسین رضی اللہ عنہ کی شہادت 110
شیعہ۔حضرت حسین رضی اللہ عنہ کےقاتل 112
اہل کوفہ شیعہ تھے 112
حضرت حسین رضی اللہ عنہ کی گواہی 113
حضرت زین العابدین رضی اللہ عنہ کی گواہی 113
حضرت زینب رضی اللہ عنہا کی گواہی 114
حضرت فاطمہ صغری رضی اللہ عنہ کی گواہی 115
حضرت عبداللہ بن عمررضی اللہ عنہماکی گواہی 115
شیعوں کےنزدیک کربلا کی اہمیت 115
حضرت حسین رضی اللہ عنہ کی قبرکی فضیلت 116
حضرت حسین رضی اللہ عنہ کےنام پررونا 118
کربلاکےبعد 118
توابین کاخروج 119
مختارثقفی کاظہور 120
شیعیت کاآغاز 122
امامت۔شیعیت کی اساس
سبائیت ایک نےقالب میں 124
امامت کامفہوم 125
امام کامقام ومرتبہ 127
امامت کامنکرکافرہے 128
نبوت اورامامت 128
انبیاءسے افضل 129
آسمانی کتابوں کےمالک 130
عیوب سے پاک 131
ائمہ معصوم ہیں 131
ائمہ کی بات فرمان الہی کےمثل 132
علم غیب 132
قدرت کاملہ 135
قانون سازی کاحق 136
ائمہ کی قبروں کامقام ومرتبہ 137
حضرت حسین رضی اللہ عنہ کی قبرکی مٹی 137
زیارت قبور 138
زیارت کی فضیلت 139
کلمہ امامت 140
شیعوں کےمابین اختلافات اوران کےفرقے 141
پہلااختلاف 142
فرقہ مختاریہ۔کیسانیہ 143
فرقہ زیدیہ 144
فرقہ باطنیہ وظاہریہ 145
نصیری فرقہ 146
تیسرااختلاف 148
چوتھااختلاف 148
اسماعیلی فرقہ 149
قرامطہ 149
مہدویہ 150
حسن بن صباح 151
آغاخانی؍خوجہ فرقہ 152
بوہرہ 153
بابیہ اوربہائی 154
پانچواں اختلاف 155
چھٹااختلاف 156
ساتواں اختلاف 157
آٹھواں اختلاف 157
نواں اختلاف 158
نوٹ 160
شیعہ اثناعشریہ امامیہ جعفریہ 161
شیعہ 161
امامیہ 162
جعفریہ 162
بارہ امام 162
توجہ طلب 164
عہد سفارت 164
عہد غیبوبت 165
الکافی کی تصنیف 166
امام غائب کے’’کارنامے‘‘ 167
1۔قتل عام 167
2۔حرمین شریفین کی مسماری 168
3۔آل داؤدکی حکومت کاقیام 169
نوٹ 170
شیعوں کاطریقہ دعوت وتبلیغ 171
شیعوں کےہتھکنڈے 172
تقیہ اورکتمان
تقیہ کیاہے؟ 176
تقیہ کی اہمیت 177
تقیہ کی فضائل 178
اہل سنت کےساتھ تقیہ 180
تقیہ کی مثال 181
تقیہ اورشیعوں کےائمہ کرام 183
تقیہ اورحضرت حسن رضی اللہ عنہ 184
تقیہ اورحضرت حسین رضی اللہ عنہ 184
تقیہ اورعلی ابن حسین رضی اللہ عنہ 185
تقیہ اورامام باقراورمام صادق علیہما السلام 186
تقیہ اورامان علی ابن موسی اورامام محمد الجوادرحمہااللہ 187
امام علی رضی اللہ عنہ اورامام حسن عسکری رحمہ اللہ 187
تقیہ اورنفاق 188
کتمان کیاہے؟ 189
کتمان اوراسلام 189
اشاعت حق 190
کتمان اوریہود 192
شیعہ اورقرآن
شیعوں کاعقیدہ 193
تحریف قرآن کاپہلاقائل 195
متقدمین ومتاخرین علمائے شیعہ 196
قرآن ناقص وتحریف شدہ ہے 197
حضرت ابوبکررضی اللہ عنہ وحضرت عمررضی اللہ عنہ پرالزام 198
حضرت عثمان رضی اللہ عنہ پرالزام 198
اصلی قرآن کےجامع 199
ادعائے حق تلفی 199
تحریف قرآن کی قسمیں 200
سورتوں کامکمل حذف 200
کلمات کاحذف 201
قرآن مجید کی شکایت 202
اصلی قرآن کہاں ہے؟ 202
خلاصہ بحث 204
حضرت علی رضی اللہ عنہ کافرمان 205
مسلمانوں کاعقیدہ 206
عقیدہ تحریف کےنقصانات 206
متعہ کاعقیدہ
شیعوں کےنزدیک متعہ کےفضائل 211
متعہ دین کاحصہ ہے 211
دوزخ سے آزادی کاپروانہ 212
جنت میں رسول خداصلی اللہ علیہ وسلم کاساتھ 212
عورتوں کےلیے معراجی تحفہ 213
شراب کانعم البدل 214
غسل متعہ سے فرشتوں کی پیدائشی 214
متعہ نہ کرنےپروعید 214
متعہ کاطریقہ اوراس کی شرائط 215
گواہ کی ضرورت نہیں 216
متعہ کےالفاظ 216
متعہ کامہر 217
متعہ کی مدت 217
متعہ کےوقت لڑکی کی عمر 218
کن عورتوں سے متعہ جائز ہے؟ 218
کتنی عورتوں سے متعہ جائزہے؟ 219
متعہ کےبعد ایک ساتھ سفرکاحکم 219
شادی شدہ عورت سے متعہ 220
شرمگاہ کومستعاردینا 220
عورت کےساتھ بدفعلی 221
نوٹ 222
متعہ کی تباہ کاری 223
زنااورمتعہ کےیکساں مفاسد 224
نکاح اسلام اورمتعہ شیعہ کابنیادی فرق 225
متعہ کےجواز میں شیعوں کی دلیل 226
متعہ اوراسلام 230
بداءکاعقیدہ
بداءکی مثالیں 234
امام مہدی کےظہورمیں بداء 234
حضرت اسماعیل ابن جعفرکی امامت میں بداء 234
حضرت محمد بن امام علی نقی رحمہ اللہ کی امامت میں بداء 235
رجعت کاعقیدہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 237
تناسخ کاعقیدہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 240
مذہبی رسومات وتقریبات
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 241
سیاہ لباس 243
ماتم ونوحہ 244
ماتم کی تاریخ 245
تعزیہ 247
تعزیہ کی ممانعت 249
تعزیہ کی قسمیں 249
تعزیہ 249
ضریح 249
ذوالجناح 249
مہندی 250
تابوت 250
عَلَم 250
براق 250
تخت 250
تبرایعنی توہین صحابہ 251
امت محمدیہ۔شیعوں کی نظرمیں 255
شیعوں کےعلاوہ سب حرامی 256
کتےسےبھی بدتر 256
کافراوراجب القتل 256
سنی اورمشرک یکساں ہیں 256
شیعوں کی مذہبی عیدیں 257
عیدغدیر 257
عیدزہراء 258
عیدمباہلہ 259
عیدباباشجاع 260
عیدنوروز 260
یہودیت اورشیعیت کاباہمی امتزاج
غلوومبالغہ آرائی 263
دینی رہنماؤں کوخدابنانا 264
احساس برتری 265
تحریف کتاب 266
کتمان حق 268
مسلمانوں سے سخت دشمنی 269
مسلمانوں کی تکفیر 270
عقیدہ وصایت 272
یہودی حکومت کاقیام 274
تبرکات انبیاء 275
تابوت سکینہ 276
توارت وانجیل کاعلم 277
شیعوں کےاعتراضات اوران کےجوابات
حدیث قرطاس 279
اعتراضات اورجوابات 280
نوٹ 285
قضیہ سقیفہ بنوساعدہ 287
اعتراضات اورجوابات 289
ایک وضاحت 291
فدک کی میراث 293
فدک کیاہے 293
فدک کاقضیہ سنیوں کےنزدیک 294
نوٹ 295
فدک کاقضیہ شیعوں کےنزدیک 296
اعتراضات وجوابات 298
فدک کےحدوداربعہ 307
حضرت علی المرتضی رضی اللہ عنہ کی اولیت 310
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی جانشینی 310
حدیث غدیر سے غلط استدلال 314
حدیث غدیرکاپس منظر 315
تشبیہ ہارون علیہ السلام سے غلط استدلال 316
آیت تطہیر سے غلط استدلال 319
آیت ولایت سے غلط استدلال 322
آیت مباہلہ سے غلط استدلال 326
آخری بات 328
شیعہ۔اکابرامت کی نظرمیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 330
حرف آخر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 336

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
6.1 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اہل تشیع سنت

شیعہ کو راہ حق پر لانے والے سوالات

شیعہ کو راہ حق پر لانے والے سوالات

 

مصنف : سلیمان بن صالح الخراشی

 

صفحات: 135

 

نبی کریمﷺ کی پیشینگوئی کے مطابق امت مسلمہ تہتر گروہوں میں تقسیم ہوگی۔ اور ان میں سے صرف ایک جماعت جنت میں جانے کی حقدار ہوگی، اور یہ وہ لوگ ہوں گے جن کے عمل ایسے ہوں گے کہ جن پر رسول اللہﷺ اور صحابہ کرام تھے۔ آج ہم دیکھتے ہیں کہ بہت سے لوگ کتاب و سنت کے ساتھ تمسک کے بجائے اپنے مخصوص نظریات پر کاربند اور اسی کے پرچار میں مصروف ہیں۔ شیعہ میں سے ایک گروہ ’اثنا عشریہ‘ کے نام سے جاناجاتا ہے، جو بہت سے صحابہ کرام کی تکفیر اور بہت سے گمراہ کن عقائد کے مالک ہیں۔ زیر نظر کتاب اسی گروہ کو سامنے رکھ کر تیار کی گئی ہے۔ کتاب کا انداز یہ ہے کہ اس میں اثنا عشریہ سے 175 سوالات کیے گئے ہیں۔ جن کے متعلق مصنف کا کہنا ہے کہ جب وہ ان سوالات پر غور کریں گے تو ان کے سامنے کوئی راہ فرار ہوگی اور نہ ہی ان سے چھٹکارا ممکن ہوگا۔ لہٰذا وہ لازماً کتاب اللہ و سنت رسول ﷺ کو سینے سے لگائیں گے۔ سوالات واقعتاً کافی جاندار ہیں مصنف نے جابجا شیعی کتب کے حوالہ جات بھی نقل کیے ہیں۔
 

عناوین صفحہ نمبر
مقدمہ 6
سوالات کے جھروکوں سے جوابات کی کرنیں 12
سوال 1تا44 14۔42
صحیفہ ناموس 43
صحیفہ علی 45
مصحف فاطمہ 46
تورات وانجیل اور زبور 47
سوال 45تا89 48۔80
مہدی کی ولادت کب ہوئی؟ 81
رحم مادر میں اس کے استقرار کی کیا کیفیت تھی؟ 81
والدہ کے پیٹ سے کس کیفیت میں پیدائش ہوئی 81
وہ کس حال میں ظہور پذیر ہوں گے؟ 82
ان کی حکومت کی مدت کتنی ہوگی؟ 83
امام کے غائب رہنے کی کتنی مدت ہے؟ 83
سوال 90تا175 84۔130

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
2.5 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam محدثین

شرک کے متعلق احکامات قرآنی

شرک کے متعلق احکامات قرآنی

 

مصنف : ڈاکٹر توصیف عبد الرزاق

 

صفحات: 20

 

یہ حقیقت ہےکہ شرک ظلمِ عظیم ہےشرک اکبر الکبائر ہے ،شرک رب کی بغاوت ہے شرک ناقابلِ معانی جرم ہے ، شرک ایمان کےلیے زہر قاتل ہے ، شرک اعمالِ صالحہ کے لیے چنگاری ہے ۔اور شرک ایک ایسی لعنت ہے جو انسان کوجہنم کے گڑھے میں پھینک دیتی ہے قرآن کریم میں شرک کوبہت بڑا ظلم قرار دیا گیا ہے اور شرک ایسا گناہ کہ اللہ تعالیٰ انسان کے تمام گناہوں کو معاف کردیں گے لیکن شرک جیسے گناہ کو معاف نہیں کریں گے ۔شرک اس طرح انسانی عقل کوماؤف کردیتا ہےکہ انسان کوہدایت گمراہی اور گمراہی ہدایت نظر آتی ہے ۔پہلی قوموں کی تباہی وبربادی کاسبب شرک ہی تھا بہت سارے لوگ ایسے ہیں کہ جو شرک کے مفہوم کونہیں سمجھتےشرک کرنے کےباوجود وہ کہتے ہیں کہ وہ شرک نہیں کر رہے ان کے نزدیک شرک صرف یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ جیساکوئی اور رب بنالیا جائے او راس کی عبادت کی جائے اصل میں وہ شرک کی حقیقت سےناواقف ہیں اسی لیے تو وہ کہتے ہیں انہوں نے کونسا کو ئی اور رب بنایا ہے۔شرک جیسی مہلک بیماری سے بچنے اور تو حید کواختیار کرنے کا انسانیت تک پہنچانےکے لیے اللہ تعالیٰ نےانبیاء کرام کو مبعوث کیا اور قرآن مجید نےسب سے زیادہ زور توحید کےاثبات اورشرک کی تردید پر صرف کیا ہے ۔سید البشر حضرت محمد ﷺ نے بھی زندگی بھر لوگوں کو اسی بات کی دعوت دی اورزندگی کے آخری ایام میں بھی اپنی امت کو شرک سے بچنے کی تلقین کرتے رہے ۔بعد میں صحابہ کرام ، تابعین ، ائمہ محدثین اور علمائے عظام نے دعوت وتبلیغ ، تحریر وتقریر کے ذریعے لوگوں کو شرک تباہ کاریوں سے اگاہ کیا ہنوز یہ سلسلہ جاری وساری ہے۔ زیر تبصرہ کتابچہ ’’شرک کے متعلق احکامات قرآنی ‘‘ ڈاکٹر توصیف عبدالرزاق کا مرتب شد ہ ہے ۔ مرتب موصوف نے اس مختصر کتابچہ کے شروع اور آخر میں اسماء حسنیٰ کو بمع ترجمہ درج کیا ہے او راندورنی صفحات میں اثبات توحید اورتردیدشرک کی آیات کو ترجمہ کے ساتھ پیش کیا ہے ۔اللہ تعالیٰ مرتب کی اس کاوش کوقبول فرمائے ،اسے عوام الناس کےلیے نفع بخش بنائےاور امت مسلمہ کو شرک سے محفوظ فرمائے ۔ (آمین)

 

 

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
2 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اعمال توحیدوشرک سنت محدثین

شرک کی تعریف، اقسام، و انجام

شرک کی تعریف، اقسام، و انجام

 

مصنف : طاہر نثار عزیز بن عبد العزیز

 

صفحات: 80

 

یہ حقیقت ہےکہ شرک ظلمِ عظیم ہےشرک اکبر الکبائر ہے ،شرک رب کی بغاوت ہے شرک ناقابلِ معانی جرم ہے ، شرک ایمان کےلیے زہر قاتل ہے ، شرک اعمالِ صالحہ کے لیے چنگاری ہے ۔اور شرک ایک ایسی لعنت ہے جو انسان کوجہنم کے گڑھے میں پھینک دیتی ہے قرآن کریم میں شرک کوبہت بڑا ظلم قرار دیا گیا ہے اور شرک ایسا گناہ کہ اللہ تعالیٰ انسان کے تمام گناہوں کو معاف کردیں گے لیکن شرک   جیسے گناہ کو معاف نہیں کریں گے ۔شرک اس طرح انسانی عقل کوماؤف کردیتا ہےکہ انسان کوہدایت گمراہی اور گمراہی ہدایت نظر آتی ہے ۔پہلی قوموں کی تباہی وبربادی کاسبب شرک ہی تھا بہت سارے لوگ ایسے ہیں کہ جو شرک کے مفہوم کونہیں سمجھتےشرک کرنے کےباوجود وہ کہتے ہیں کہ وہ شرک نہیں کر رہے ان کے نزدیک شرک صرف یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ جیساکوئی اور رب بنالیا جائے او راس کی عبادت کی جائے اصل میں وہ شرک کی حقیقت سےناواقف ہیں اسی لیے تو وہ کہتے ہیں انہوں نے کونسا کو ئی اور رب بنایا ہے۔شرک جیسی مہلک بیماری سے بچنے اور تو حید کواختیار کرنے کا انسانیت تک پہنچانےکے لیے اللہ تعالیٰ نےانبیاء کرام کو مبعوث کیا اور قرآن مجید نےسب سے زیادہ زور توحید کےاثبات اورشرک کی تردید پر صرف کیا ہے ۔سید البشر حضرت محمد ﷺ نے بھی زندگی بھر لوگوں کو اسی بات کی دعوت دی   اورزندگی کے آخری ایام میں بھی اپنی امت کو شرک سے بچنے کی تلقین کرتے رہے ۔بعد میں صحابہ کرام ، تابعین ، ائمہ محدثین اور علمائے عظام نے دعوت وتبلیغ ، تحریر وتقریر کے ذریعے لوگوں کو شرک تباہ کاریوں سے اگاہ کیا ہنوز یہ سلسلہ جاری وساری ہے۔ زیر تبصرہ کتاب ’’شرک کی تعریف ، اقسام ، انجام ‘‘طاہر نصار عزیز بن عبد العزیز کی تصنیف ہے ۔انہوں نے مسلمانوں کوشرک جیسی خطر ناک بیماری سے بچانے کےلیےاس کتاب میں اختصار سے شرکی تعریف ،اقسام شرک، شرک کی برائیاں، شرک کے مضاہر وغیرہ کو کتاب اللہ اور سنت رسول کے مطابق دلائل کی روشنی میں آسان فہم انداز میں پیش کیا ہے ۔ اللہ تعالیٰ اسے عوام الناس کےلیے نفع بخش بنائےاور امت مسلمہ کو شرک سے محفوظ فرمائے ۔ (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
مقدمہ 3
شکر و دعا 4
عرض ناشر 5
فصل اول
مبحث اول: شرک کی تعریف 11
مبحث دوم: شرک کی قسمیں 21
شرک اکبر 12
شرک اصغر 13
شرک ظاہر 13
شرک خفی 14
مبحث سوئم: شرک کی برئیاں 17
بے شک شرک بڑا بھاری ظلم ہے 17
اللہ تعالیٰ شرک کو کبھی معاف نہیں کریگا 18
اللہ تعالیٰ نے جنت کو مشرک پر حرام قرار دیا ہے 18
شرک تمام نیک اعمال کو مٹا دیتا ہے 18
شرک تمام نیک اعمال کو مٹا دیتا ہے 18
شرک کا خون اور مال مسلمانوں کے لیے حلال ہلے 19
شرک تمام کبیرہ گناہوں میں سب سے بھاری گناہ ہے 19
شرک حقیقت میں نقص و عیب ہے 20
مبحث ثانی:
مبحث اول: شرک کے مظاہر 22
غیر اللہ کو پکارنا شرک ہے 23
غیر اللہ کی پناہ طلب کرنا 24
غیر اللہ کے نام کی نذر و نیاز 29
غیر اللہ کے نام پر ذبح کرنا 35
بتوں اور تھانوں کی پوجا پاٹ 36
بتوں کا طواف 37
مبحث دوم: شرک کا سب باب کیسے کریں 75
امر با لمعروف اور نہی عن المنکر کا بیان 78

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
2.6 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam توحیدوشرک محدثین نذر و نیاز

شرک کیا ہے

شرک کیا ہے

 

مصنف : محمد عطاء اللہ بندیالوی

 

صفحات: 51

 

یہ حقیقت ہےکہ شرک ظلمِ عظیم ہےشرک اکبر الکبائر ہے ،شرک رب کی بغاوت ہے شرک ناقابلِ معانی جرم ہے ، شرک ایمان کےلیے زہر قاتل ہے ، شرک اعمالِ صالحہ کے لیے چنگاری ہے ۔اور شرک ایک ایسی لعنت ہے جو انسان کوجہنم کے گڑھے میں پھینک دیتی ہے قرآن کریم میں شرک کوبہت بڑا ظلم قرار دیا گیا ہے اور شرک ایسا گناہ کہ اللہ تعالی انسان کے تمام گناہوں کو معاف کردیں گے لیکن شرک جیسے گناہ کو معاف نہیں کریں گے ۔شرک اس طرح انسانی عقل کوماؤف کردیتا ہےکہ انسان کوہدایت گمراہی اور گمراہی ہدایت نظر آتی ہے ۔پہلی قوموں کی تباہی وبربادی کاسبب شرک ہی تھا بہت سارے لوگ ایسے ہیں کہ جو شرک کے مفہوم کونہیں سمجھتےشرک کرنے کےباوجود وہ کہتے ہیں کہ وہ شرک نہیں کر رہے ان کے نزدیک شرک صرف یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ جیساکوئی اور رب بنالیا جائے او راس کی عبادت کی جائے اصل میں وہ شرک کی حقیقت سےناواقف ہیں اسی لیے تو وہ کہتے ہیں انہوں نے کونسا کو ئی اور رب بنایا ہے۔شرک جیسی مہلک بیماری سے بچنے اور تو حید کواختیار کرنے کا انسانیت تک پہنچانےکے لیے اللہ تعالیٰ نےانبیاء کرام کو مبعوث کیا اور قرآن مجید نےسب سے زیادہ زور توحید کےاثبات اورشرک کی تردید پر صرف کیا ہے ۔سید البشر حضرت محمد ﷺ نے بھی زندگی بھر لوگوں کو اسی بات کی دعوت دی اورزندگی کے آخری ایام میں بھی اپنی امت کو شرک سے بچنے کی تلقین کرتے رہے ۔بعد میں صحابہ کرام ، تابعین ، ائمہ محدثین اور علمائے عظام نے دعوت وتبلیغ ، تحریر وتقریر کے ذریعے لوگوں کو شرک تباہ کاریوں سے اگاہ کیا ہنوز یہ سلسلہ جاری وساری ہے۔ زیر تبصرہ کتابچہ ’’شرک کیا ہے؟‘‘ مولانا محمد عطاء اللہ بندیالوی صاحب کے1421ء کےرمضان المبارک میں سرگودھا شہر کی جامع مسجد حنفیہ میں ’’شرک کیا‘‘ کےعنوان پر دروس کا مجموعہ ہے موصوف کے ان دروس کاسلسلہ تقریباً دس روز جاری رہا ۔جسے سامعین نے بہت زیادہ پسند کیا تو موصوف نے افادہ عام کےلیے اسے مرتب کرکے شائع کیا۔ اللہ تعالیٰ اسے عوام الناس کےلیے نفع بخش بنائے (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
تمہید 5
شرک کیا ہے 9
سماع موتی شرک کا چور دروازہ 11
مشرکن مکہ کا اصل شرک  کیا تھا 12
قریش مکہ اللہ کو مانتے تھے 13
مشرکین مکہ اللہ کو پکارتے ہیں 15
مشرکین مکہ کا اصل شرک 16
شاہ عبدالقادر محدث دہلوی نے شرک کی وضاحت کس طرح فرمائی 24
مفتی اعظم ہند نے فرمایا 24
شرک کی اقسام 25
شرک فی الدعاء 26
شرک فی الذات 26
شرک فی المال 29
غیر اللہ کی نذر و نیاز عقل کے بھی خلاف 30
شرک فی الذات اور شرک مالی کا پس منظر 32
شرک فی التصرف 38
شرک فی الحیاۃ 43
شرک فی  العادت 44
شرک فی الحلف 45
شرک فی الطواف 46
شرک فی السجود 46

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
2.4 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام اعمال درود سحر اور جادو

شیطانی چالوں کا توڑ اور شرعی طریقہ علاج

شیطانی چالوں کا توڑ اور شرعی طریقہ علاج

 

مصنف : محمد طیب محمدی

 

صفحات: 152

 

جادو کرنا یعنی سفلی اور کالے  علم کے ذریعہ سے لوگوں کے ذہنوں او رصلاحیتوں کو مفلوج کرنا  او ران کو آلام ومصائب سے دوچار کرنے کی مذموم سعی کرنا  ایک کافرانہ عمل  ہے  یعنی  اس کا  کرنے والا دائرہ اسلام سے نکل جاتا  اورکافر ہوجاتا ہے یہ مکروہ عمل  کرنے والے  تھوڑے  سے نفع کے لیے  لوگوں کی زندگیوں سے کھیلتے اور ان کے امن و سکون کو برباد کرتے ہیں  جولوگ  ان مذموم کاروائیوں کا شکار ہوتے ہیں وہ عام طور پر اللہ کی یاد سے غافل ہوتے ہیں  اس لیے  ان موقعوں پربھی  وہ اللہ کی طرف رجوع کرنے  کی بجائے انہی عاملوں اورنجومیوں کی طرف رجوع کرتے ہیں جناتی  وشیطانی  چالوں اور جادوکے  توڑ اور شرعی علاج کے  حوالے سے  بازار میں کئی کتب موجود ہیں۔ زیر تبصرہ کتاب’ شیطانی چالوں کا توڑ اور شرعی یقۂ علاج‘ مولانا محمد طیب محمدی کی  تصنیف ہے اس کتاب میں انہوں نے اس بات کو واضح کیا ہے  کہ جو لوگ عاملوں، نجومیوں، کاہنوں، جادوگروں، اور پیشہ ورانہ  پیروں، فقیروں اور نام  نہاد دم درود کر کے پیسہ بٹورنے والوں کے پاس جاکر اپنا دین  وایمان او رعزتیں لوٹاتے ہیں وہ نادان لوگ اس کتاب سے استفادہ کر کے ہمیشہ  کے لیے ان نام نہاد جعلی عاملوں، پیروں  سے اپنا تعلق ختم کر کے مسنون اذکار اور فرائض کی پابندی کے ذریعے اللہ تعالیٰ سے اپنا  تعلق مضبوط بنائیں تاکہ وہ ہر قسم کی پریشانی اور شیطانی چالوں سے مکمل محفوظ رہیں۔

 

عناوین صفحہ نمبر
عقیدہ کی اصلاح 14
ستاروں میں کوئی تاثیر نہیں 14
سورج اورچاند میں کوئی تاثیر نہیں 16
حجراسود میں نفع   ونقصان کی کوئی تاثیر نہیں 17
جادوکفر ہے 18
کہانت وعرافت 22
کاہنوں کے جھوٹے ہونے کی عقلی دلائل 30
دوکاموں سے ایک تو ضرور ہوتاہے 31
دو جڑواں بھائیوں کی قسمت الگ کیوں؟ 32
نجومی کی تضاد بیانیاں 35
اصل چور )مجرم اورقاتل نجومی آج تک نہیں بتا سکے 39
کاہن کےپاس جانے والا شریعت کامنکر 39
علم   نجوم 44
ستاروں کےصرف تین مقاصد 44
ستاروں کو انسانی قسمت کےساتھ بربوط سمجھتا شرکیہ عقیدہ ہے 48
کواکب پر ستی 51
دنوں کےنام 52
دسعت شناسی 54
دسعت ثناسوں کےدلائل 55
دسعت شناہی جھوٹ فریب اورکبیرہ گناہ 57
بدشگونی 60
دورجاہلیت میں بدشگونی کی مختلف صورتیں 60
دورجاہلیت میں شگون اورفال باقاعدہ پیشہ تھا 61
بدشگونی حرام ہے 64
قرآنی دلائل 64
احادیث سےدلائل 67
بدشگونی کےخلاف صحابہ کرام ﷢ وعلمائے عظام کےچند واقعات 73
فال نامے 75
جنات قابو کرنے کی حقیقت 77
تعویذ دھاگے لٹکانے کاحکم 79
التولۃ 79
روحانی علاج 89
ایک بنیادی اورضروری قاعدہ 89
تقدیر،جادوارجنات 91
مریض کابیماری پر صبر کرنا 92
مصیبت کو ذخیرہ اجر سمجھا جائے 93
تقوی اختیار کرنا 94
اللہ پر توکل وبھروسہ 95
خلوص دل سے اللہ کی جانب جھکنا اورنافرمانیوں سے توبہ کرنا 96
نیک اعمال بجالانا 97
دین پر استقامت 98
نماز شروع کرتے وقت شیطان سےاللہ تعالی کی پناہ طلب کریں 98
نماز وں کی حفاظت 99
نماز باجماعت کی پابندی کریں 100
قیام اللیل کااہتمام   کریں 100
گھروں سے تصاویر ،ٹی وی وغیرہ نکال دینا 101
تلاوت قرآن 101
ہرکام سے پہلے ’’بسم اللہ ‘‘پڑھنا 102
آیت الکرسی 105
سورۃ البقرہ کی تلاوت کےفوائد 107
سورۃ البقرہ کی آخری دوآیات ہر شر سےبچاتی ہیں 108
معوذتین وسورۃ الاخلاص 110
سورۃ الفلق مع ترجمہ 112
سورۃ الناس مع ترجمہ 112
سورۃ اخلاص مع ترجمہ 113
کلمہ توحید کےسومرتبہ پڑھنے کےفوائد 113
چند مسنون دم 114
باوضو رہنے کی کوشش کریں 117
بیت الخلاءمیں جانے سے قبل دعا کااہتمام کریں 118
شادی کےبعد اپنی بیوی کی پیشانی پردایا ں ہاتھ رکھ کریہ دعائیں پڑھیں 118
ازدواجی تعلقات سے قبل شیطان سےپنا ہ طلب کریں 118
مسجد میں داخل ہوتے وقت یہ دعاپڑھیں 119
گھر سےنکلنے یہ دعا پڑھیں 120
مسجد سےنکلتے ہوئے یہ دعاپڑھیں 119
جادو کاتوڑ 121
جادو کے توڑ کےلیے سورۃ الفاتحہ کےذریعے دم 121
نبی ﷺ پر جادو اوراس کاتوڑ 122
دواؤں کےذریعے سے جادو کاعلاج 127
عجوہ کھجور سے علاج 127
کلونجی کےذریعے سےعلاج کرنا 128
سینگی کے ذریعے سےعلاج 128
نظر بدکی حقیقت اوراس کاعلاج 130
نظر کی تاثیر قرآن کی روشنی میں 130
نظر کی تاثیر احادیث نبویہ کی روشنی میں 131
نظر اورحسد میں فرق 134
نظر سے بچاؤ کاطریقہ 135
نظر کاعلاج 136
نظر کےلیے غسل کروانا 137
استخارہ 139
استخارہ کیاہے ؟ 139
دعائے استخارہ مع ترجمہ 140
استخارہ کی اہمیت 141
استخارہ سے پہلے نماز 141
دعائے استخارہ میں اپنے مطلوبہ کام کانام لینا یادل میں اس کاارادہ کرنا 143
کیا استخارہ کسی بھی وقت کیاجاسکتاہ 144
استخارہ کےبعد خواب الہام یااطمینان قلب 144
ایک سےزیادہ مرتبہ استخارہ کرنا 145
استخارہ کن کاموں میں کیاجاتاہے 145
استخارہ کےباجود نقصان اٹھانا 145
استخارہ کےفوائد اورحکمتیں 147
استخارہ کسی سے کروانا 149
استخارہ کےعمل میں خرافات وداہیات 151

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
4 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام پاکستان تاریخ حنفی ختم نبوت و ناموس رسالت و توہین رسالت عدلیہ علماء نبوت

شاتم رسول ﷺ کی شرعی سزا ( شفیق الرحمن الدراوی )

شاتم رسول ﷺ کی شرعی سزا ( شفیق الرحمن الدراوی )

 

مصنف : شفیق الرحمٰن الدراوی

 

صفحات: 350

 

سید الانبیاء حضرت محمد مصطفی ﷺ سے محبت وعقیدت مسلمان کے ایمان کا بنیادی حزو ہے اور کسی بھی شخص کاایمان اس وقت تک مکمل قرار نہیں دیا جاسکتا جب تک رسول اللہ ﷺ کو تمام رشتوں سے بڑھ کر محبوب ومقرب نہ جانا جائے۔فرمانِ نبویﷺ ہے تم میں سے کوئی شخص مومن نہیں ہوسکتا جب تک اسے رسول اللہﷺ کے ساتھ ماں،باپ ،اولاد اور باقی سب اشخاص سے بڑھ کر محبت نہ ہو۔یہی وجہ ہے کہ امت مسلمہ کاشروع دن سے ہی یہ عقیدہ ہےکہ نبی کریم ﷺ کی ذاتِ گرامی سے محبت وتعلق کےبغیر ایمان کا دعویٰ باطل اور غلط ہے۔ہر دو ر میں اہل ایمان نے آپ ﷺ کی شخصیت کے ساتھ تعلق ومحبت کی لازوال داستانیں رقم کیں۔اور اگر تاریخ کے کسی موڑ پرکسی بد بخت نے آپﷺ کی شان میں کسی بھی قسم کی گستاخی کرنے کی کوشش کی تو مسلمانوں کے اجتماعی ضمیر نے شتم رسولﷺ کے مرتکبین کو کیفر کردار تک پہنچایا۔ چند سال قبل ڈنمارک ناروے وغیرہ کے بعض آرٹسٹوں نے جوآپ ﷺ کی ذات گرامی کے بارے میں خاکے بنا کر آپﷺ کامذاق اڑایا۔جس سے پورا عالم اسلام مضطرب اور دل گرفتہ ہواتونبی کریم ﷺ سے عقیدت ومحبت کے تقاضا کو سامنے رکھتے ہواہل ایما ن سراپا احتجاج بن گئے اور سعودی عرب نے جن ملکوں میں یہ نازیبا حرکت ہوئی ان کی مصنوعات کا بائیکاٹ کیا ۔ پاکستان میں ’’تحریک حرمت رسولﷺ ‘‘ معرض وجود میں آئی جس میں ملک بھر کی 22 دینی وسیاسی جماعتیں شامل ہوئیں۔اور حرمت رسول ﷺ کے متعلق رسائل وجرائد میں بیسوں نئےمضامین طبع ہوئے اور کئی مجلات کے اسی موضوعی پر خاص نمبر اور متعد د کتب بھی شائع ہوئیں۔ زیر تبصرہ کتاب ’’شاتم رسول ﷺ کی شرعی سزا ‘ پیر زادہ شفیق الرحمن شاہ الدراوی﷾( فاضل مدینہ یونیورسٹی )کی تصنیف ہے ۔اس کتاب میں مصنف موصوف نے رسول اللہ ﷺ کی رحمت کے بیان کےساتھ ساتھ آپﷺ کی شان میں گستاخی کرنے والے کے متعلق حکم بیان کیا گیا ہے ۔جس کےلیے قرآن وحدیث کےبیسیوں حوالہ جات جمع کیے گئے ہیں۔ اس کےساتھ ساتھ آپ ﷺ کا طرز عمل ، صحابہ کرام کے فیصلے ،علماء کرام﷭ کے مذاہب ،آئمہ اربعہ کے اقوال قدیم وجدید دور کےاہل علم کے آراء پیش کی گئی ہیں ۔ ساتھ ہی عصر حاضر میں یہودی ، عیسائی ، ماسونی ، اور ملحدانہ بیہودگیوں کے خلاف راست اقدام کےلیے مسلمانوں کے ممکنہ کردار کی نشاندہی کرتے ہوئے اس کےلیے شرعی دلائل پیش کیے گئے ہیں۔ اور سابقہ تاریخ میں اس طرح کے کردار کے اثرات ونتائج بیان کر کے لوگوں کو پیغمبر برحقﷺ کی نصرت اور آپ کےخلاف زہریلے اقدامات کرنے والوں کا بائیکاٹ کرنے کی ترغیب دلائی گئی ہے۔مصنف نے اس کتاب میں پہلے رحمت نبوت کی وضاحت کے لیے ’’نبی رحمتﷺ‘‘ کے عنوان سے باب قائم کر کے آپ کے رحمت للعالمین ہونے کے مختلف عملی پہلوؤں کو نمایاں کیا گیا ہے۔ اور پھر انصاف پسندوں کے اعترافات ذکر کرنے کے بعد گستاخ ِ رسول کےموضوع پر قلم اٹھایا ہے ۔اللہ تعالیٰ مصنف کی اس کاوش کوشرف قبولیت سے نوازے اورمؤلف کوتالیف وتصنیف اور ترجمہ کے میدان میں کام کرنے کی مزید توفیق عطا فرمائے ۔ (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
مقدمہ
فہرست مضا مین
انتساب:
ہدیہ تشکر 16
سرنغمہ ، پر سو ز : 18
مقدمہ ا ز مولانا منیر قمر حفظ اللہ 20
باب اول : نبی ر حمت ْﷺ 22
عموم رحمت: 24
مومنین کے لیے رحمت: 26
مو منین کے لیے رحمت کاایک منظر 27
عبادت رحمت 29
اہل خانہ کے لیے رحمت: 30
سلوک  رحمت کی مثالیں 34
اہل خانہ کے ساتھ رحمت تعلیمات 34
عورتوں پر رحمت 36
بیو ا و ں کیساتھ رحمت 36
بچو ں پر رحمت 38
یتیموں پر رحمت 40
بچیوں کے لیے رحمت 42
غلاموں پر رحمت 45
غلاموں کی سزادینے کی مما نعت 47
غلامو ں کا احساس 47
تعلیمات رحمت کا اثر 47
دعوت حق میں رحمت 48
دعوت میں رحمت کی ایک مثال 49
کفار کیلئے رحمت 50
مشرکین کےلیے رحمت 52
منافقین کے لیے رحمت 53
میدان کا رزار میں رحمت 53
تعلیمات کا اثر 55
محبت کرنے والوں پر رحمت 56
حیوانات کیلئے رحمت 57
حرام جانور  وں کیلئے رحمت 61
جمادات کا ساتھ رحمت 63
امن عالم اور نبی رحمت ﷺ 65
تکملہ باب رحمت 66
باب دوم : انصاف پسندوں کے اعترافات 68
باب سوم : محمد ﷺ سے دشمنی کی وجوہات معا ذ ین کا انجام 83
رسول اللہﷺ سے دشمنی کے اسباب 84
فصل اول : شر پسندوں کی بیہو دگیا ں اور ان کا انجام 88
شر پسندوں کی عاقبت 88
شر پسند نا کام  ہی رہیں گے 89
شر پسندوں کی روش 89
شیطانی  مہلت ملی ہے ان کو 91
بنی ﷺ سے د شمنی کی مو جو د لہر 92
قربانی ﷺ کا بکرا 94
آزادی ء ا ظہار رائے و فکر و نظر کی حقیقت 95
مغرب کی منافقت اور اظہار رائے کی ا ٓ زادی 98
امریکی کردار 100
مذہبی شخصیات اور ان کی خرافات 101
فصل دوم : پس پر دہ حقائق 103
کھلم کھلی اسرائیلی مدد 104
سیاسی جنگ 105
صحافت و ذروائع ابلاغ کی جنگ 106
فصل سوم :گمراہی اور استبدار کے وسائل 107
فصل چہارم : مسلمانو ں کا کردار 111
مومن کا ان حالات میں مو قف: 111
حالا ت  کا تقا ضا 113
باب چہارم: نصر ت رسول اللہﷺ کے بعض وسائل 117
باب پنجم : بائیکاٹ کی تعریف اور تاریخ 123
بائیکاٹ کی تاریخ 123
1۔حضرت ابراہیم ؑ کے والد کا بائیکا ٹ ۔2۔حضرت ابراہیم ؑکی با ئیکاٹ کی دھمکی 123
3۔حضرت یوسف ؑ کی بائیکاٹ کی دھمکی :4۔ ابو لہب کا بائیکاٹ 124
5۔ ابوجہل مردود کا بائیکاٹ :6۔ قریش کا بائیکاٹ 125
7۔ :حضرت ثمامہ بن ا ثال ؓ کا بائیکاٹ 125
بائیکاٹ ثمامہ  کےا ثرات و نتائج : 8۔ حضرت ابو بصیر ؓ  کا روائی 126
10آئر لینڈ کی تحریک بائیکاٹ : 11۔ جمرنی کاخلاف یورپ کا بائیکاٹ 128
12۔ گاندھی کی تحریک بائیکاٹ 128
13۔: عالم اسلام اور اسرائیل  سے بائیکاٹ :14۔ شاہ فیصل شہید کا یورپ سے بائیکا ٹ 129
15۔: روس سے  بائیکاٹ : 16۔ عراق بائیکاٹ 129
17۔ الیبیا پر اقتصادی پابندیا ں : 18۔ پاکستان پر پابندی :19۔ سوڈان  پر پابندی 130
20۔ : شام یمن اور بعض دوسرے ممالک پر   پابندیاں: 130
21: امریکہ اور دوسرے ممالک کا منا فقانہ کردار: 130
فصل اول: بائیکاٹ کا شر عی حکم 131
بائیکاٹ کب مستحب ہوتا ہے 131
بائیکاٹ کب واجب ہوتاہے 132
کتاب وسنت سے بائیکاٹ سے بائیکاٹ کا ثبات: 133
عرب علماء کے فتاوی 137
شیخ محمد بن صالح التثیمین رحمتہ اللہ علیہ 140
علامہ ناصر الدین الا لبانی رحمتہ اللہ علیہ 140
شیخ انب جبریل رحمتہ اللہ علیہ 141
شیخ صالح الحبدان حفظ اللہ: 142
شیخ عبدالعزیز بن عبدالل الراحجی حفظ اللہ: 142
بائیکاٹ کیوں کریں ؟: 143
بائیکاٹ کے لیے اہم اصول : 145
عوامی کردار: 147
دشمن کی چالوں سے بچیں : 149
فصل دوم : بائیکاٹ : آخر کب تک : 150
باب ششم : عصمت ابنیاء کرام ؑ 151
فصل اول : عصمت انبیا کرام ؑ 152
گناہ کا مصدر 152
خلا صہ ء کلام 155
نبو ت اخیتار الٰہی 156
قرعصمت انبیاء ؑ ٍ 158
قرآن اور عصمت محمدیہ ﷺ 159
باب ہفتم : گستاخ رسول ﷺ کا شرعی حکم 161
فصل : گستا خ رسول اللہ ﷺ کافر اور واجب قتل ہے 162
اولا ء: کتاب اللہ سے کفر پر دلائل 163
پہلی دلیل : [اور علماء کے اقوال] 163
دوسری دلیل: [ اور علماء کے اقوال ] 165
تیسری دلیل : [ اور علماء کے اقوال ] ٍ 168
چو تھی دلیل : [ اور علماء کے اقوال ] 169
پانچوں دلیل : [ اور علماء کے اقوال ] 170
چھٹی دلیل : [ اور علماء کے اقوال ] 172
ساتویں دلیل : [ اور علما ء کے اقوال ] 173
اجما ع مسلمین 173
علامہ انور شاہ رحمتہ اللہ علیہ کا قول 175
قاضی عیا ض رحمتہ اللہ علیہ کا فرمان 176
علامہ بشیر عصا م مراکشی رحمتہ اللہ علیہ کا قول 176
ابن نجیم حنفی رحمتہ اللہ علیہ کا قول 176
علامہ الشر بینی الشا فعی رحمتہ اللہ علیہ کا فرمان 176
علامہ مر عی بن یو سف الکر می احسنبلی 177
فصل دوم : گستاخ رسول اللہﷺ کے واجب قتل ہونے کے دلائل 178
قرآن کریم سے شاتم رسول کے قتل کا اثبات 178
پہلی دلیل: 178
دوسری دلیل 179
تیسری دلیل : 180
چو تھی دلیل: 181
پا نچویں دلیل: 183
چھٹی دلیل : 184
ساتویں دلیل: 185
آٹھویں دلیل: 185
نویں دلیل: 186
دسویں دلیل: 186
فصل سوم:احادیث مبارکہ میں گستاخ رسول اللہ ﷺ کی سزا: 188
عہد ذمہ کا فائدہ 188
سنت بنوی سے عملی نمونے 191
1۔ سفیان بن خالد کاقتل 192
2۔کع بن اشرف کا قتل 193
3۔ ابور افع یہودی کا قتل :4۔ تکذ ب رسول اللہ ﷺ پر قتل 194
5۔ محبو ب کے واقعہ سے استدلال: 195
6: انب سبینہ کی یہودی کا قتل :7۔ نضر بن حارث اور عقبہ بن ابو معیط کا قتل: 196
8: بنو قریظہ کی یہودیہ کا قتل 197
9: عصماء بنت مردان کا قتل  : 10۔ بنو بکر کاواقعہ 198
11: ذو لخو یصرہ کی گستاخی اور فرمان بنوت 199
12: بجر بن زہیر ؓ کا خط 200
13: ایک شاتم رسول ﷺ کا انجام : 14۔ دوسری گستاخی عورت کاقتل : 15۔ گستاخ یہودیہ کا قتل : 201
16۔ ابو عفک یہودی کا قتل : 17۔ عبداللہ بن اخطل : 18 ۔ قر تنی کا قتل 202
فصل چہارم : حضرات صحابہ کراؓ معین ااور ائمہ کے فیصلے 203
1: حضرت ابو بکر ؓ کا عقیدہ و ایمان و عمل: 203
2: حضرت ابو بکر ؓ صدیق کا فیصلہ :3۔ حضرت  ابوبکر ؓ اور گستاخ کا سزا: 204
4۔ حضرت عمر ؓ کا فیصلہ : 5۔ حضر ت عبداللہ بن عباس ؓ کا فتوی: 205
6۔حضرت غرفہ ؓ اور ایک گستاخ معاہدہ کا قتل 206
7۔ ابو عبیدہ بن جراح ؓ اپنے والد کا قتل  ۔:8۔ حضر ت عمر ؓ اور ایک گستاخ کا قتل 206
9۔ حضرت عمر ؓ اور رافع بن کا قتل ۔ 10۔ نابینا صحابی اور گستاخ عور ت کا قتل 207
11۔ حضرت ابو برزہ ؓ  کا موقف :12۔ حضرت ابو ہریرہ ؓ کا مو قف 208
13۔حضرت عبداللہ بن عمر ؓ کا مو قف 208
14۔ ابن قانع کی روایت : 15۔ حضرت علی ؓ کا حکم ۔ 16۔ حضرت عائشہ ؓ کی روایت 209
17۔ حضرت عبداللہ بن مسعود ؓ کا فیصلہ : 18۔ حضرت محمد بن  مسلمہ ؓ 210
19۔حضر ت عبدالر حمن بن یزید رحمتہ اللہ علیہ :20۔ حضرت عمر بن عبدالعزیز رحمتہ اللہ علیہ کا فتویٰ 211
21۔ ہارون الرشیدر حمتہ اللہ علیہ کا استفاء 211
22۔ جنات میں  کستاخ رسول اﷺ کی سزا: 212
فصل پنجم : اجماع امت 213
1۔ امام ابن سحنون المالی  رحمتہ اللہ علیہ : 2۔ امام اسحق بن ابراہیم لمعروف بابن راہویہ رحمتہ اللہ علیہ 214
3۔ امام خطابی ، حمد بن محمد یہ ابراہیم رحمتہ اللہ علیہ :5۔ امام ابو بکر الفارسی رحمتہ اللہ علیہ : 6۔ علامہ قاضی عیاضی رحمتہ اللہ علیہ 215
7۔ امام ابن خطاب الحنبلی رحمتہ اللہ علیہ  8۔ امام ابن الظاہری رحمتہ اللہ علیہ : 9۔ امام ابن نجیم حنفی رحمتہ اللہ علیہ 216
10۔ ابن عابد ین حنفی رحمتہ اللہ علیہ :11۔ امام ابن تیمیہ رحمتہ اللہ علیہ : 12۔ علامہ ابن قیم رحمتہ علیہ 217
13۔ امام تقی الدین سبکی رحمتہ اللہ علیہ : 14۔ علامہ السفارینی رحمتہ اللہ علیہ : 15۔ ابراہیم  بن حسین خالد فقیہ رحمتہ اللہ علیہ 218
16۔ علامہ شاہ انور شاہ کشمیری رحمتہ اللہ علیہ 218
سکو تی اجامع پر شہادت کے چند واقعات 219
پہلا واقعہ : دوسرا واقعہ: 219
تیسرا واقعہ : چو تھا واقعہ : پانچواں واقعہ : چھٹا واقعہ : 220
ساتواں واقعہ : ا ٓٹھواں واقعہ : نو اں واقعہ : 221
دسواں واقعہ : گیار ھواں واقعہ : ریجی نالڈ : بارھواں واقعہ : بہار ء اللہ 222
تیر ھواں واقعہ : مرزا غلام احمد قادیانی 223
چو د ھو اں واقعہ  : قادیانی عبدالحق کی گستاخی 224
غیرت مدن جج کا یمانی فیصلہ : پند ر ھواں واقعہ : ہند و مصنف مھا شاکر شن 225
سو لھواں واقعہ : شر دھا نند : سترھواں واقعہ  : ہند و مصنف نتھو رام: 226
اٹھار ھواں واقعہ : گستاخ ہیڈ مسٹر یس کا انجام : انیسواں واقعہ : رام گھو پال لعین کی دشنام طرازیا ں 227
بیسواں واقعہ : ہند و چوہدری کھیم : چند : اکیسواں واقعہ : پالا مل ہندہ: 228
بائیسواں واقعہ :  سکھ کشمیر سنگھ : تیتسواں واقعہ : ایک گستاخ ناشر 229
چو بیسواں واقعہ : عامر چیمہ  شہید رحمتہ اللہ علیہ 230
ہند و ستان  کی اسلامی عدلیہ کا فیصلہ 231

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
27.9 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام زنا سنت سود سیرت النبی ﷺ طلاق قانون و قضا متعہ محدثین نبوت

شرعی احکام کی خلاف ورزی پر رسول اللہ ﷺ کے فیصلے

شرعی احکام کی خلاف ورزی پر رسول اللہ ﷺ کے فیصلے

 

مصنف : محمد بن فرج المالکی القرطبی

 

صفحات: 299

 

کسی بھی قوم کی نشوونما اور تعمیر  وترقی کےلیے  عدل وانصاف ایک بنیادی ضرورت ہے  ۔جس سے مظلوم کی نصرت ،ظالم کا قلع  قمع اور جھگڑوں کا  فیصلہ کیا جاتا ہے  اورحقوق کو ان کےمستحقین تک پہنچایا جاتاہے  اور  دنگا فساد کرنے والوں کو سزائیں دی جاتی ہیں  ۔تاکہ معاشرے  کے ہرفرد کی جان  ومال ،عزت وحرمت اور مال واولاد کی حفاظت کی جا  سکے ۔ یہی وجہ ہے  اسلام نے ’’قضا‘‘یعنی قیام ِعدل کاانتہا درجہ اہتمام کیا ہے۔اوراسے انبیاء ﷩ کی سنت  بتایا ہے۔اور نبی کریم ﷺ کو اللہ تعالیٰ نے  لوگوں میں فیصلہ کرنے کا  حکم  دیتےہوئے  فرمایا:’’اے نبی کریم ! آپ لوگوں کےدرمیان اللہ  کی  نازل کردہ ہدایت کے مطابق فیصلہ کریں۔‘‘نبی کریمﷺ کی  حیاتِ مبارکہ مسلمانوں کے لیے دین ودنیا کے تمام امور میں مرجع کی حیثیت رکھتی ہے۔ آپﷺ کی تنہا ذات میں حاکم،قائد،مربی،مرشد اور منصف  اعلیٰ کی تمام خصوصیات جمع تھیں۔جو لوگ آپ کے فیصلے پر راضی  نہیں ہوئے  ا ن کے بارے  میں اللہ تعالیٰ نے  قرآن کریم میں سنگین وعید نازل فرمائی اور اپنی ذات کی  قسم کھا کر کہا کہ آپ  کے فیصلے تسلیم نہ کرنے  والوں کو اسلام سے خارج قرار دیا ہے۔نبی کریمﷺ کےبعد  خلفاء راشدین  سیاسی قیادت ،عسکری سپہ سالاری اور دیگر ذمہ داریوں کے ساتھ  منصف وقاضی کے مناصب پر بھی فائزر ہے اور خلفاءراشدین نےاپنے  دور ِخلافت  میں دور دراز شہروں میں  متعدد  قاضی بناکر بھیجے ۔ائمہ محدثین نےنبی ﷺ اور صحابہ کرام  کے  فیصلہ جات کو  کتبِ  احادیث میں نقل کیا ہے  ۔اور کئی اہل علم  نے   اس سلسلے میں   کتابیں تصنیف کیں ان میں سے   زیر تبصرہ کتاب” شرعی احکام کی خلاف ورزی پر رسول اللہﷺ کے فیصلے  ‘‘ امام ابو عبد اللہ  محمدبن  فرج  المالکی   کی  نبی  کریم ﷺ کے  فیصلوں پر مشتمل   کتاب ’’اقضیۃ الرسول  ﷺ ‘‘  کا  اردو ترجمہ ہے  ۔ یہ کتاب  ان فیصلوں اورمحاکمات پرمشتمل ہے جو  نبی ﷺ نے اپنے 23 سالہ دور نبوت میں مختلف مواقع پر صادر فرمائے۔اس کتاب    میں  مصنف نے  وہ تمام فیصلے درج  کردئیے ہیں جو  فیصلے آپ نے خود فرمائے یاوہ فیصلے کرنے کا  آپ نے حکم فرمایا  ہے۔کتاب ہذا کا  ترجمہ    مولانا عبد الصمد ریالوی﷾ نے کیا ہے  اوراحادیث کی تحقیق وتخریج کا کام الشیخ طالب عواد نے کیا ہے۔ ادارہ   معارف اسلامی منصورہ نے   بھی تقریبا  28  سال قبل اس کاترجمہ کر وا کر شائع کیا تھا۔یہ اس  نسخے کا ترجمہ تھا جس پر ڈاکٹر ضیاء الرحمن  اعظمی ﷾نے تحقیق وتخریج کا  کام  کر کے   جامعہ ازہر ،مصر  سےپی   ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی ۔یہ کتاب  قانون دان حضرات اور اسلامی آئین وقانون کے نقاذ سےدلچسپی رکھنے والے  احباب کے لیے ایک نعمت غیر مترقبہ ہے  ۔اللہ تعالیٰ مصنف ، محقق ،مترجم اور ناشرین کی اس کاوش کوقبول فرمائے اور اس کو  وطن عزیز میں اسلامی آئین وقانون کی تدوین وتفیذ کا ایک  مؤثر ذریعہ بنائے (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
تمہید 11
اہل کفر میں سے محاربین کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 16
قاتل کو بادشاہ کے پاس کیسے لے جایاجائے اور قاتل سے کیسے اقرار لیاجائے 19
رسول اللہ ﷺ کاپتھر سے قتل کرنے والے کے بارہ میں فیصلہ 23
رسول اللہﷺ کااس حاملہ عورت کے متعلق فیصلہ جس کاحمل گرادیا گیاہو 24
جس مقتول کاقاتل معلوم نہ ہواس میں قسامت کے متعلق نبی ﷺ کافیصلہ 25
نبی ﷺ کااس شخص کے متعلق فیصلہ جس نے اپنے ماں باپ کی بیوی سے نکاح کرلیا 30
نبی ﷺ کااس مقتول کے متعلق فیصلہ جو دو بستیوں میں مراہوملے 31
نبی ﷺ کازخموں کے قصاص کے متعلق فیصلہ 32
دانت کے متعلق نبی ﷺ کافیصلہ 33
شادی شدہ اگر زنا کااقرار کرےتو اس کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 34
آپﷺ کازنامیں یہود پر رحم کرنے کافیصلہ 38
رسو ل اللہﷺ کاحرام صلح کے توڑنے کاحکم 41
حدقذف وخمر میں رسول اللہﷺ کاحکم 45
چوراورباربار چوری کرنے والے کے متلعق رسول اللہﷺ کاحکم 48
جو مسلمان ذمی یاحربی آپﷺ کاگالی دے اسکاحکم اورجادو گرکے بیان میں کہ وہ کیسے قتل کیاجائے 51
اہل کفر کے متعلق رسول اللہ ﷺکاحکم 52
کتاب الجہاد
اسلام میں مشرکوں کاپہلامقتول اور پہلی غنیمت 55
جاسوس کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 58
قیدیوں کےمتعلق رسو ل اللہﷺ کافیصلہ جس کو نبی ﷺ اپنے ہاتھ سے قتل کریں 62
قریضہ اور نضیر کے متعلق آپﷺ کافیصلہ 69
فتح کے سال رسول اللہﷺ کاامان دینے کافیصلہ 77
غنیمت کے حصہ جات غائب کاحصہ ارو عورت کو کچھ دینے کے متعلق آپﷺ کافیصلہ 89
حنین کےدن قاتل کے لیے رسول اللہﷺ کاسلب مقررکرنا 98
مشرکوں نے مسلمانوں کےجومال لےلیے پھر جب مسلما ن غالب آئیں تو مشرکین انہیں واپس کردیں اس کے متعلق رسو ل اللہﷺ کافیصلہ 99
اگر کوئی معاہد یاحربی رسو ل اللہﷺ کو تحفہ دے تو اس میں آپ کاکیا فیصلہ ہے 101
مال فے کی تقسیم جس طرح مناسب سمجھیں آپﷺ فیصلہ کریں 104
خیبر اور بنونضیر کے اموال کی تقسیم کے متعلق رسو ل اللہ ﷺ کااحکم 109
آپﷺ کے ایلچی قتل نہ کئے جائیں کفار سےوعدہ پوراکرو 112
امان کے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 115
جزیہ کےمتعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 121
کتاب النکاح
جس بیوہ کاس کی مرضی کےبغیر اس کاباپ نکاح کرجے تو رسول اللہ ﷺ کاحکم 125
جس عورت کاخاوند دخولسے پہلے ہی وفوت ہوجائۃ تو اس کے متعلق رسو ل اللہ ﷺکافیصلہ 127
رسول اللہ ﷺ کااس شخص کے متعلق فیصلہ جس نے کسی عورت سے نکاح کیا عواسے دیکھاوہ حاملہ ہے 129
غائب خاوند پر بیوی کے نفقہ کے متعلق رسو ل اللہﷺ  کافیصلہ 130
رسول اللہﷺ کامہرے کے متعلق فیصلہ 135
رسول اللہ ﷺ کاسیدنا علی ﷜  کو سیدہ فاطمہ ؓ پر نکاح کرنے سے منع کرنے کافیصلہ 138
مجوسی کے متعلق رسو ل اللہ ﷺ کافیصلہ 139
معترض کے متعلق رسو ل اللہﷺ کافیصلہ اور نکاح متعہ کاحکم 140
سیدہ میمونہ ؓ سے نکاح کرنے میں رسول اللہﷺ کافیصلہ 142
عورتوں میں باری مقرر کرنے کے بار ہ میں رسو ل اللہ ﷺ کافیصہ 143
دودھ پینے کے بارہ میں ایک عورت کی گواہی پر رسول اللہﷺ کافیصلہ 145
کتا ب الطلاق
حائضہ کی طلاق کے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 147
خلع میں رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 151
رسول اللہﷺ کااس لونڈی کے متعلق فیصلہ جوشادی شدہ ہوااور پھر آزاد کردیاجائے 153
رسول اللہﷺ کااس عورت کے متعلق فیصلہ جوعادل گواہ اپنے خاوند کی طلاق پر پیش کردے اور خاوند انکار کررہا ہو 154
رسول اللہ ﷺ کااپنی مملوکہ یمین یعنی لونڈی کے حرام کرنےکی قسم کے متعلق فیصلہ 157
جوشخص تین سے کم طلاقیں دے پھر عدت کے بعد دوسرا خاوند کرے پھر دوسرا فوت ہوجائے یاپرورش کے متعلق  رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 161
ظہار کے متعلق رسول اللہﷺ  کافیصلہ اور اس کے متعلق جوکچھ نازل ہوا 163
رسو ل اللہ کالعان کے متعلق فیصلہ 165
کتاب البیوع
بیع  سلم اور سود کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 171
تجارتی قافلوں کو راستہ میں جاکر ملنے جانوروں کے تھنوں میں دودھ روک کربیچنے عیب دار چیزواپس کرنے اور آمد ن کے ضامن ہونے کے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 176
مفلس قرار دے کربندش عائد کردینے قیمت اداکرنے سے قبل فوت ہوجانے اور بے علمی میں چوری کامال خریدنے کے متعلق رسول اللہﷺ کاحکم 179
آفات سے تباہ ہونے والامال اوراس کے متعلق رسول اللہﷺ کاحکم 184
جوشخص خریدوفروخت میں دھوکہ کرے اس کے متعلق رسو ل اللہﷺ کاحکم 188
رسو ل اللہﷺ کایہ فیصلہ کہ ماں بیٹے کو اکٹھے رکھا جائے بیع اور شرط میں آپ کافیصلہ 188
کتاب الاقضیتہ
مشترک رسول اللہﷺ کاظاہر کے مطابق فیصلہ کرنادلیل نہ ہونے کی صورت میں مدعی علیہ کو قسم دینا 188
دومدعیوں میں سے ایک دلیل دے او ردونوں کافی ودانی ثبوت دیدیں مسلم اور کافر کس طرح قسم اٹھائیں 188
قسم اٹھانے والے کی قسم کی کیفیت کے متعلق رسول اللہ ﷺکافیصلہ 193
مردہ اراضی آباد کرنے پانی کی تقسیم ڈاکٹر کاضامن ہونےکسی کاپیالہ توڑ دینے اور لکڑی کی کو ٹھڑی بنانے کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 193
شفع کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 206
حصہ داری اور مزارعت کاحکم 207
مساقات آب پاشی صلح منافع اور کھجور کی حفاظت کی حدسکے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 210
کتاب الوصایا
وصیت کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 215
اوقاف اور احباس کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 217
صدقات ہدایا  (ہبہ )عمر ی (صدقہ ) اور ان کے ثواب کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 215
تشبیہ والی چیزوں میں رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 227
غلاموں کی آزادی قرعہ اندازی کی وصیت خاوند والی مدبر ہ امہات الاولادارو مکاتب کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 230
جس غلام کامثلہ کیاجائے یااس کے چہرے پر تھپڑا مارگیاتواس کو آزاد کرنے کے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 237
گری ہوئی چیز کے متعلق رسو ل اللہﷺ کافیصلہ 239
ایسے شخص کے متعلق جوکہے کہ میرا باغ فی سیبل اللہ صدقہ ہے اور یہ رشتہ داروں پر صدقہ ہے اور غائب آدمی کے مال کو وقف کرنے ارو تقسیم مال پر کسی کو وکیل کرنے کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 242
امانات کے متعلق رسول اللہﷺ کاحکم 234
عاریۃ لی گئی مغلوب علیہ چیز کاضامن ہونے کے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 246
ورثتوں کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 250
رسول اللہ ﷺ کایہ فیصلہ کہ بچہ بچھونےوالے کاہے اور اس شخص کاحکم جو اپنے باپ کے مانے کے بعد کسی اپنے نسب میں شامل کرے 257
علم قیافہ کے ثبوت کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ اور اس بارہ میں سیدنا علی ﷜ کے فیصلہ کی تجویز 259
ذوی الارحام کی میراث کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 262
قاتل سے وراثت کو روکنے کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم اور جس نے اس کی یہ تفسیر کی ہے کہ یہ قتل عمدکےمتعلق ہے 264
جس مسلمان کی وصیت پر کوئی نصرانی گواہ ہواس کے متعلق اور جس غلام کاکان کاٹ دیاجائے اور صلح کی جاگیروں کے متعلق اور جو شخص اپنی عورت کے ساتھ کسی مرد کو دیکھے تواس کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 265
کتوں کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 269
روکے ہوئے پانی کی حدود کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 270
اگر وکیل کو مال بیچنے بر فائد ہ ہوتووہ فائدہ صاحب مال کاہوگا 271
مختلف امور میں رسو ل اللہ ﷺ کافیصلہ 273
رسول اللہ ﷺ کانسب 285
نبی ﷺ کو کتتے کپڑوں میں کفن دیا گیا اور آپﷺ کوغسل دینے اور لحد کاذکر 288
حوالہ جات کتب اوراسانید 291

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
5.6 MB ڈاؤن لوڈ سائز