Categories
Islam اسلام زنا سنت سود سیرت النبی ﷺ طلاق قانون و قضا متعہ محدثین نبوت

شرعی احکام کی خلاف ورزی پر رسول اللہ ﷺ کے فیصلے

شرعی احکام کی خلاف ورزی پر رسول اللہ ﷺ کے فیصلے

 

مصنف : محمد بن فرج المالکی القرطبی

 

صفحات: 299

 

کسی بھی قوم کی نشوونما اور تعمیر  وترقی کےلیے  عدل وانصاف ایک بنیادی ضرورت ہے  ۔جس سے مظلوم کی نصرت ،ظالم کا قلع  قمع اور جھگڑوں کا  فیصلہ کیا جاتا ہے  اورحقوق کو ان کےمستحقین تک پہنچایا جاتاہے  اور  دنگا فساد کرنے والوں کو سزائیں دی جاتی ہیں  ۔تاکہ معاشرے  کے ہرفرد کی جان  ومال ،عزت وحرمت اور مال واولاد کی حفاظت کی جا  سکے ۔ یہی وجہ ہے  اسلام نے ’’قضا‘‘یعنی قیام ِعدل کاانتہا درجہ اہتمام کیا ہے۔اوراسے انبیاء ﷩ کی سنت  بتایا ہے۔اور نبی کریم ﷺ کو اللہ تعالیٰ نے  لوگوں میں فیصلہ کرنے کا  حکم  دیتےہوئے  فرمایا:’’اے نبی کریم ! آپ لوگوں کےدرمیان اللہ  کی  نازل کردہ ہدایت کے مطابق فیصلہ کریں۔‘‘نبی کریمﷺ کی  حیاتِ مبارکہ مسلمانوں کے لیے دین ودنیا کے تمام امور میں مرجع کی حیثیت رکھتی ہے۔ آپﷺ کی تنہا ذات میں حاکم،قائد،مربی،مرشد اور منصف  اعلیٰ کی تمام خصوصیات جمع تھیں۔جو لوگ آپ کے فیصلے پر راضی  نہیں ہوئے  ا ن کے بارے  میں اللہ تعالیٰ نے  قرآن کریم میں سنگین وعید نازل فرمائی اور اپنی ذات کی  قسم کھا کر کہا کہ آپ  کے فیصلے تسلیم نہ کرنے  والوں کو اسلام سے خارج قرار دیا ہے۔نبی کریمﷺ کےبعد  خلفاء راشدین  سیاسی قیادت ،عسکری سپہ سالاری اور دیگر ذمہ داریوں کے ساتھ  منصف وقاضی کے مناصب پر بھی فائزر ہے اور خلفاءراشدین نےاپنے  دور ِخلافت  میں دور دراز شہروں میں  متعدد  قاضی بناکر بھیجے ۔ائمہ محدثین نےنبی ﷺ اور صحابہ کرام  کے  فیصلہ جات کو  کتبِ  احادیث میں نقل کیا ہے  ۔اور کئی اہل علم  نے   اس سلسلے میں   کتابیں تصنیف کیں ان میں سے   زیر تبصرہ کتاب” شرعی احکام کی خلاف ورزی پر رسول اللہﷺ کے فیصلے  ‘‘ امام ابو عبد اللہ  محمدبن  فرج  المالکی   کی  نبی  کریم ﷺ کے  فیصلوں پر مشتمل   کتاب ’’اقضیۃ الرسول  ﷺ ‘‘  کا  اردو ترجمہ ہے  ۔ یہ کتاب  ان فیصلوں اورمحاکمات پرمشتمل ہے جو  نبی ﷺ نے اپنے 23 سالہ دور نبوت میں مختلف مواقع پر صادر فرمائے۔اس کتاب    میں  مصنف نے  وہ تمام فیصلے درج  کردئیے ہیں جو  فیصلے آپ نے خود فرمائے یاوہ فیصلے کرنے کا  آپ نے حکم فرمایا  ہے۔کتاب ہذا کا  ترجمہ    مولانا عبد الصمد ریالوی﷾ نے کیا ہے  اوراحادیث کی تحقیق وتخریج کا کام الشیخ طالب عواد نے کیا ہے۔ ادارہ   معارف اسلامی منصورہ نے   بھی تقریبا  28  سال قبل اس کاترجمہ کر وا کر شائع کیا تھا۔یہ اس  نسخے کا ترجمہ تھا جس پر ڈاکٹر ضیاء الرحمن  اعظمی ﷾نے تحقیق وتخریج کا  کام  کر کے   جامعہ ازہر ،مصر  سےپی   ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی ۔یہ کتاب  قانون دان حضرات اور اسلامی آئین وقانون کے نقاذ سےدلچسپی رکھنے والے  احباب کے لیے ایک نعمت غیر مترقبہ ہے  ۔اللہ تعالیٰ مصنف ، محقق ،مترجم اور ناشرین کی اس کاوش کوقبول فرمائے اور اس کو  وطن عزیز میں اسلامی آئین وقانون کی تدوین وتفیذ کا ایک  مؤثر ذریعہ بنائے (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
تمہید 11
اہل کفر میں سے محاربین کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 16
قاتل کو بادشاہ کے پاس کیسے لے جایاجائے اور قاتل سے کیسے اقرار لیاجائے 19
رسول اللہ ﷺ کاپتھر سے قتل کرنے والے کے بارہ میں فیصلہ 23
رسول اللہﷺ کااس حاملہ عورت کے متعلق فیصلہ جس کاحمل گرادیا گیاہو 24
جس مقتول کاقاتل معلوم نہ ہواس میں قسامت کے متعلق نبی ﷺ کافیصلہ 25
نبی ﷺ کااس شخص کے متعلق فیصلہ جس نے اپنے ماں باپ کی بیوی سے نکاح کرلیا 30
نبی ﷺ کااس مقتول کے متعلق فیصلہ جو دو بستیوں میں مراہوملے 31
نبی ﷺ کازخموں کے قصاص کے متعلق فیصلہ 32
دانت کے متعلق نبی ﷺ کافیصلہ 33
شادی شدہ اگر زنا کااقرار کرےتو اس کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 34
آپﷺ کازنامیں یہود پر رحم کرنے کافیصلہ 38
رسو ل اللہﷺ کاحرام صلح کے توڑنے کاحکم 41
حدقذف وخمر میں رسول اللہﷺ کاحکم 45
چوراورباربار چوری کرنے والے کے متلعق رسول اللہﷺ کاحکم 48
جو مسلمان ذمی یاحربی آپﷺ کاگالی دے اسکاحکم اورجادو گرکے بیان میں کہ وہ کیسے قتل کیاجائے 51
اہل کفر کے متعلق رسول اللہ ﷺکاحکم 52
کتاب الجہاد
اسلام میں مشرکوں کاپہلامقتول اور پہلی غنیمت 55
جاسوس کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 58
قیدیوں کےمتعلق رسو ل اللہﷺ کافیصلہ جس کو نبی ﷺ اپنے ہاتھ سے قتل کریں 62
قریضہ اور نضیر کے متعلق آپﷺ کافیصلہ 69
فتح کے سال رسول اللہﷺ کاامان دینے کافیصلہ 77
غنیمت کے حصہ جات غائب کاحصہ ارو عورت کو کچھ دینے کے متعلق آپﷺ کافیصلہ 89
حنین کےدن قاتل کے لیے رسول اللہﷺ کاسلب مقررکرنا 98
مشرکوں نے مسلمانوں کےجومال لےلیے پھر جب مسلما ن غالب آئیں تو مشرکین انہیں واپس کردیں اس کے متعلق رسو ل اللہﷺ کافیصلہ 99
اگر کوئی معاہد یاحربی رسو ل اللہﷺ کو تحفہ دے تو اس میں آپ کاکیا فیصلہ ہے 101
مال فے کی تقسیم جس طرح مناسب سمجھیں آپﷺ فیصلہ کریں 104
خیبر اور بنونضیر کے اموال کی تقسیم کے متعلق رسو ل اللہ ﷺ کااحکم 109
آپﷺ کے ایلچی قتل نہ کئے جائیں کفار سےوعدہ پوراکرو 112
امان کے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 115
جزیہ کےمتعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 121
کتاب النکاح
جس بیوہ کاس کی مرضی کےبغیر اس کاباپ نکاح کرجے تو رسول اللہ ﷺ کاحکم 125
جس عورت کاخاوند دخولسے پہلے ہی وفوت ہوجائۃ تو اس کے متعلق رسو ل اللہ ﷺکافیصلہ 127
رسول اللہ ﷺ کااس شخص کے متعلق فیصلہ جس نے کسی عورت سے نکاح کیا عواسے دیکھاوہ حاملہ ہے 129
غائب خاوند پر بیوی کے نفقہ کے متعلق رسو ل اللہﷺ  کافیصلہ 130
رسول اللہﷺ کامہرے کے متعلق فیصلہ 135
رسول اللہ ﷺ کاسیدنا علی ﷜  کو سیدہ فاطمہ ؓ پر نکاح کرنے سے منع کرنے کافیصلہ 138
مجوسی کے متعلق رسو ل اللہ ﷺ کافیصلہ 139
معترض کے متعلق رسو ل اللہﷺ کافیصلہ اور نکاح متعہ کاحکم 140
سیدہ میمونہ ؓ سے نکاح کرنے میں رسول اللہﷺ کافیصلہ 142
عورتوں میں باری مقرر کرنے کے بار ہ میں رسو ل اللہ ﷺ کافیصہ 143
دودھ پینے کے بارہ میں ایک عورت کی گواہی پر رسول اللہﷺ کافیصلہ 145
کتا ب الطلاق
حائضہ کی طلاق کے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 147
خلع میں رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 151
رسول اللہﷺ کااس لونڈی کے متعلق فیصلہ جوشادی شدہ ہوااور پھر آزاد کردیاجائے 153
رسول اللہﷺ کااس عورت کے متعلق فیصلہ جوعادل گواہ اپنے خاوند کی طلاق پر پیش کردے اور خاوند انکار کررہا ہو 154
رسول اللہ ﷺ کااپنی مملوکہ یمین یعنی لونڈی کے حرام کرنےکی قسم کے متعلق فیصلہ 157
جوشخص تین سے کم طلاقیں دے پھر عدت کے بعد دوسرا خاوند کرے پھر دوسرا فوت ہوجائے یاپرورش کے متعلق  رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 161
ظہار کے متعلق رسول اللہﷺ  کافیصلہ اور اس کے متعلق جوکچھ نازل ہوا 163
رسو ل اللہ کالعان کے متعلق فیصلہ 165
کتاب البیوع
بیع  سلم اور سود کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 171
تجارتی قافلوں کو راستہ میں جاکر ملنے جانوروں کے تھنوں میں دودھ روک کربیچنے عیب دار چیزواپس کرنے اور آمد ن کے ضامن ہونے کے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 176
مفلس قرار دے کربندش عائد کردینے قیمت اداکرنے سے قبل فوت ہوجانے اور بے علمی میں چوری کامال خریدنے کے متعلق رسول اللہﷺ کاحکم 179
آفات سے تباہ ہونے والامال اوراس کے متعلق رسول اللہﷺ کاحکم 184
جوشخص خریدوفروخت میں دھوکہ کرے اس کے متعلق رسو ل اللہﷺ کاحکم 188
رسو ل اللہﷺ کایہ فیصلہ کہ ماں بیٹے کو اکٹھے رکھا جائے بیع اور شرط میں آپ کافیصلہ 188
کتاب الاقضیتہ
مشترک رسول اللہﷺ کاظاہر کے مطابق فیصلہ کرنادلیل نہ ہونے کی صورت میں مدعی علیہ کو قسم دینا 188
دومدعیوں میں سے ایک دلیل دے او ردونوں کافی ودانی ثبوت دیدیں مسلم اور کافر کس طرح قسم اٹھائیں 188
قسم اٹھانے والے کی قسم کی کیفیت کے متعلق رسول اللہ ﷺکافیصلہ 193
مردہ اراضی آباد کرنے پانی کی تقسیم ڈاکٹر کاضامن ہونےکسی کاپیالہ توڑ دینے اور لکڑی کی کو ٹھڑی بنانے کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 193
شفع کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 206
حصہ داری اور مزارعت کاحکم 207
مساقات آب پاشی صلح منافع اور کھجور کی حفاظت کی حدسکے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 210
کتاب الوصایا
وصیت کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 215
اوقاف اور احباس کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 217
صدقات ہدایا  (ہبہ )عمر ی (صدقہ ) اور ان کے ثواب کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 215
تشبیہ والی چیزوں میں رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 227
غلاموں کی آزادی قرعہ اندازی کی وصیت خاوند والی مدبر ہ امہات الاولادارو مکاتب کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 230
جس غلام کامثلہ کیاجائے یااس کے چہرے پر تھپڑا مارگیاتواس کو آزاد کرنے کے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 237
گری ہوئی چیز کے متعلق رسو ل اللہﷺ کافیصلہ 239
ایسے شخص کے متعلق جوکہے کہ میرا باغ فی سیبل اللہ صدقہ ہے اور یہ رشتہ داروں پر صدقہ ہے اور غائب آدمی کے مال کو وقف کرنے ارو تقسیم مال پر کسی کو وکیل کرنے کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 242
امانات کے متعلق رسول اللہﷺ کاحکم 234
عاریۃ لی گئی مغلوب علیہ چیز کاضامن ہونے کے متعلق رسول اللہﷺ کافیصلہ 246
ورثتوں کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 250
رسول اللہ ﷺ کایہ فیصلہ کہ بچہ بچھونےوالے کاہے اور اس شخص کاحکم جو اپنے باپ کے مانے کے بعد کسی اپنے نسب میں شامل کرے 257
علم قیافہ کے ثبوت کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ اور اس بارہ میں سیدنا علی ﷜ کے فیصلہ کی تجویز 259
ذوی الارحام کی میراث کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 262
قاتل سے وراثت کو روکنے کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم اور جس نے اس کی یہ تفسیر کی ہے کہ یہ قتل عمدکےمتعلق ہے 264
جس مسلمان کی وصیت پر کوئی نصرانی گواہ ہواس کے متعلق اور جس غلام کاکان کاٹ دیاجائے اور صلح کی جاگیروں کے متعلق اور جو شخص اپنی عورت کے ساتھ کسی مرد کو دیکھے تواس کے متعلق رسول اللہ ﷺ کاحکم 265
کتوں کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 269
روکے ہوئے پانی کی حدود کے متعلق رسول اللہ ﷺ کافیصلہ 270
اگر وکیل کو مال بیچنے بر فائد ہ ہوتووہ فائدہ صاحب مال کاہوگا 271
مختلف امور میں رسو ل اللہ ﷺ کافیصلہ 273
رسول اللہ ﷺ کانسب 285
نبی ﷺ کو کتتے کپڑوں میں کفن دیا گیا اور آپﷺ کوغسل دینے اور لحد کاذکر 288
حوالہ جات کتب اوراسانید 291

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
5.6 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام طلاق

شرعی طلاق

شرعی طلاق

 

مصنف : سید بدیع الدین شاہ راشدی

 

صفحات: 50

 

زوجین کے باہمی اختلاف کی وجہ سے آپس میں اکٹھے نہ رہنے کی صورت کے پیدا ہونے پر اسلام ان کو علیحدگی کے لیے بھی اصول وقانون دیتا ہے جس سے فریقین میں سے کسی پر زیادتی نہ ہو-مصنف نے اس کتاب میں طلاق کے حوالے سے مختلف پچیدہ مباحث کو انتہائی اچھے انداز سے بیان کرتے ہوئے طلاق کا شرعی حکم اور اس کی حیثیت کو بیان کرتے ہوئےطلاق دینے کا طریقہ اور شرعی طورپر کون سی طلاق واقع ہو گی اور کون سی نہیں ہو گی اس کو واضح کیا ہے-اس کی شاندار بحثوں میں سے  یہ بھی ہے کہ طلاق ثلاثہ کے بارے میں شرعی راہنمائی اور تین طلاقوں کا ایک واقع ہونا عین فطرت سلیمہ کے موافق ہے-اور حضرت عمر کے بارے میں پیدا کیے جانے والے شکوک وشبہات کا جائزہ لیا ہے-طلاق کی مختلف صورتیں،اور ان کی عدتوں کے بیان کے ساتھ ساتھ رجوع یا تجدید نکاح کا طریقہ واضح کیا ہے-اور تین طلاقوں کے وقوع کے جو حلالے کا غیر شرعی طریقہ اختیار کیا گیا ہے اس کو فریقین کے دلائل کے ساتھ قرآن وسنت کی روشنی میں واضح کی گیا ہے-اس کتاب کی سب سے بڑی خوبی یہ بھی ہے کہ اس میں  مفتی سعودیہ عربیہ علامہ عبدالعزیز بن باز کے فتاوی کے ساتھ ساتھ محدث کامل سلطان محمود جلال پوری کے فتاوی کو بھی شامل کیا گيا ہے-
 

عناوین صفحہ نمبر
مقدمہ ناشر 5
اللہ عزوجل کے نزدیک طلاق ناپسندہ عمل ہے 7
بیک وقت زیادہ طلاقیں دینا منع ہے 7
طلاق سنت 8
ایک وقت کی تین طلاق کا ایک ہونا فطرت سلیمہ کے موافق ہے 9
ایک وقت کی تین طلاق کا ایک ہونا اور (مرتان ) کی وضاحت 9
تشریح 11
ایک وقت تین طلاق کے ایک ہونے کی احادیث 11
صحت حدیث 12
لمہ فکریہ 12
سیدنا عمر کا تعزیر ی فیصلہ 13
علماء احناف کااعتراف 14
امیر المومنین عمر فاروق ؓکا اپنے فیصلے سے رجوع 14
قارئین 15
امیر المومنین عمر بن خطاب ؓکے دیگر بعض انتظامی اور تعزیری فیصلے 15
دوسری حدیث تصحیح حدیث 16
محمد بن اسحاق پر اعتراض اور اس کا جواب 17
علماء احناف کی طرف سے محمد بن اسحق کی توثیق 17
تیسری حدیث 18
صحت حدیث 19
چوتھی حدیث 19
حدیث مزکورہ کی استنادی حثیت 19
پانچویں حدیث 20
صحت حدیث 20
احناف کے دعوی اجماع کی حقیقت 20
اختلاف کی صورت میں حکم 23
رجعی طلاق میں دوران عدت رجوع 23
پہلی یا دوسری بار کی طلاق پر عدت گزرانے کی صورت میں تجدید نکاح 24
تیسری بار کی طلاق مغلظ کے بعد رجوع کا حکم 24
مروجہ حلالہ کی شرعی حثیت 25
مروجہ حلالہ پرلعنت کی احادیث متواتر ہیں 27
مروجہ حلالہ کے متعلق صحابہ رضی اللہ عنھم کا موقف 27
مروجہ حلالہ کے متعلق امیر المومنین سیدنا عمر فاروق کا فصیلہ 28
مروجہ حلالہ کے متعلق شاہ ولی اللہ کا فیصلہ 28
الحاصل 29
فتاوی دیگر علماء 30
ایک مجلس کی تین طلاق کے بارے میں فتوی محدث العصر مولانا سلطان محمود 31
مروجہ حلالہ کے بارے میں فتوی محدث العصر مولانا سلطان محمود 33
ایک کلمہ سے تین طلاقیں شیخ عبدالعزیز باز کا فتوی 34
شیخ عبد العزیز بن باز کے فتوی کا عکس 37
طلاق کے بارے میں کچھ وضاحتیں فتوی محمد افضل الاثری 38
پیر کرم شاہ کا حلالہ اور تین طلاق کے بارے میں تحقیقی دردمندانہ فیصل 44

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
1.76 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam حنفی سود سیرت النبی ﷺ طلاق فقہ فقہ حنفی قربانی نماز

شمع محمدی ﷺ

شمع محمدی ﷺ

 

مصنف : محمد جونا گڑھی

 

صفحات: 226

 

ہمارے ہاں کے ارباب تقلید حضرات احناف نے یہ مشہور ےکر رکھا ہے کہ فقہ حنفی کی کتابوں کا ایک مسئلہ بھی خلاف حدیث نہیں بلکہ یہ فقہ قرآن وحدیث کا مغز،گودا اور عطر ہے۔بہ کھٹکے اس پر عمل کرنا نجات کا سبب ہے کیونکہ یہ فقہ درجنوں ائمہ اجتہاد کا نتیجہ ہے ۔حقیقت حال اس کے بالکل برعکس ہے ۔فقہ حنفی کے بے شمار مسائل کتاب وسنت سے صریح متصادم ہیں ،جن کا صحابہ کرام ؓ سے بھی کوئی ثبوت نہیں ملتا۔مولانا محمد جونا گڑھی رحمتہ اللہ  نے زیر نظر کتاب میں با حوالہ اس امر کو ثابت کیا ہے اور واضح کیا ہے کہ ایک مسلمان کو محض کتاب وسنت اور اجماع امت ہی کی پیروی کرنی چاہیے نہ کہ کسی مخصوص مسلک ومذہب کی۔چونکہ کئی صدیوں سے فقہ حنفی کو قرآن وحدیث کا نچوڑ بتایا جا رہا ہے ،اس لیے حنفی حضرات کے دل  پر یہ بات نقش ہو چکی ہے۔زیر نظر کتاب کے منصفانہ مطالعہ سے اس کی قلعی کھل جائے گی اور ایک سچا مسلمان کبھی بھی کتاب وسنت کے خلاف کسی مسئلہ کو تسلیم کرنا تو گوارہ نہیں کرے گا۔خدا کرے کہ اس کتاب سے طالبین حق کو رہنمائی میسر آئے اور مسلمانوں میں وحی الہی کی طرف لوٹنے کا جذبہ بیدار ہو تاکہ اتحاد امت کی راہ ہموار ہو سکے۔

 

عناوین صفحہ نمبر
مقلدین کا خیال 8
فرق فقہ و حدیث 9
حنفی محمدی اختلاف 10
فقہ مطابق حدیث نہیں 11
امام امتی ہیں نبی نہیں 12
اہل حدیث کی منشا 13
امام ابوحنیفہ کی نصیحت 14
ردرائے کے دلائل 15
امام جعفرؒکی نصیحت 17
چاروں مذہب برحق نہیں 18
اہل حدیث کی حقانیت 19
تقلید اور عمل بالحدیث 20
روایت اور درایت میں فرق 21
درایت فاروقی 22
درایت صحابہ 22
مقلدین کی خطرناک غلطی 23
مذہب مانع عمل بالحدیث ہے 24
مقلد حدیث پر براہ راست عامل نہیں 25
رائے قیاس دین نہیں 26
تقلید اپنی اصلی صورت میں 27
رائے اور روایت 28
ترک تقلید دشمنی امام نہیں 29
تاریخ تقلید 30
محمدی جھنڈا 31
اسلام صرف قرآن و حدیث میں 32
عمل بالحدیث کی تاکید 33
ایجاد تقلید کی تاریخ 34
تقلید کے بعد قرآن و حدیث کی بیکاری 35
اصول مذہب حنفی 38
نصحیت 39
اتفاق و اختلاف 40
ختم مقدمہ 41
وہ حدیث جنہیں حنفی مذہب نہیں مانتا
عورتوں کی باریاں 42
خطاونسایان 43
میت کی طرف کا روزہ 44
جانور کے پیٹ کا بچہ 45
گھوڑے کا حلال ہونا 46
چوری کی مقدار 47
رضاعت کا مسئلہ 48
ہبہ کا مسئلہ 49
باپ کا ہبہ 50
مہر کا مسئلہ 51
پائی ہوئی چیز 53
گم شدہ اونٹ 54
غسل میت 56
خطبے کے وقت دو رکعت 57
ایک وتر 58
استسقاء کی نماز 59
نصاب زکوۃ 60
ہری ترکاریوں کی زکوۃ 61
سورج گہن کی نماز 62
جلسہ استراحت 63
پگڑی پر مسح 64
دوہری اذان کا مسئلہ 66
تیمم کی ہاتھ کی حد 67
آخری وقت کی نماز 68
قبل از مغرب دورکعت 69
جنازہ غائبانہ 70
اکہری تکبیر 71
عورتوں کا مسجد میں آنا 73
سحری کی اذان 74
غلاموں پر ظلم 75
خون مسلم کی ارزانی 76
کتوں کی تجارت 77
مسجد میں نماز جنازہ 78
حرام عورت کی جنت 79
مطلقہ کا نان نفقہ 80
عورتوں کا عیدگاہ آنا 81
عیدکی تکبیریں 82
ان تکبیروں کا موقعہ 83
قربانی کے دن 84
نابینا کی امامت 86
مزارعت کا مسئلہ 87
فقہ کی حلال کردہ شرابیں 88
نشہ ہوا پھر بھی حد نہیں 91
حصول قوت کے لیے شراب نوشی 92
مردہ مچھلی 93
کتے کا جھوٹا برتن 94
بے ولی کا نکاح 95
راگ اور کھیل 97
کعبۃ اللہ کی بے حرمتی 98
بے قبلہ نماز 99
عورتوں کی جماعت 100
نابالغ کی امامت 101
تجارت کا مسئلہ 102
قانون شہادت 103
وترکا مسئلہ 104
انکار فاتحہ 105
قرأت کا واجب نہ ہونا 106
فرضوں میں سنتیں 107
صبح کی سنتیں 108
ان سنتوں کی فضا 109
مطلق سنتوں کی قضا 110
فقہ کا روزہ 111
سودی خوری 112
حلالہ کی لعنت 113
تین طلاقیں 114
رسول اللہ ﷺکے فیصلے کو ٹھکرادیا 115
بآواز بلند بسم اللہ 116
عیدکی تکبیر 118
اعتکاف 119
رد حدیث کا حیلہ 120
فعل رسول اللہﷺ بھی مکروہ ہے 121
جنازہ میں فاتحہ 122
تکبیرات جنازہ 123
مرد کے جنازہ کی نماز 124
نماز جنازہ سے محروم میت 125
خون مسلم کی ارزانی 126
غلاموں سے ناانصافی 127
اسلامی مساوات پر ضرب 128
غلاموں پر ظلم 129
مسافر کی نماز 130
مدت اقامت 131
مسافرت کی حد 132
ایک حنفی مولوی کا اعتراض 133
ناف تلے حدیثوں کا ضعف 135
سینے پر ہاتھ 136
آہستہ آمین کی حدیثوں کاضعف 137
بلندآواز کی آمین 138
الزامی جواب 145
ظہر عصر کا وقت 150
جمعہ کی صبح کی معین سورتیں 155
حدیث کی چارسورتوں کی فقہ میں دس سورتیں 160
وسعت قربانی میں تنگی 165
ہاتھ باندھنے کا زنانہ مردانہ فرق 170
جبریہ طلاق اور ازادگی 175
کفار کو مسلمان کا حکم 180
بوٹی کے بدلے بکرا 185
فقہ میں شراب اور سود کی تجارت 190
دورہ فاروقی 195
مقلدین سے ایک سوال 200
حنفیہ کے نزدیک اور سب مسلمان ملعون ہیں 204
امام صاحب کا مذہب 210
امام صاحب کی والدہ صاحبہ کا واقعہ 215
فقہ کا خلاف حدیث صحابہ و امام و مسئلہ 220
دعا 222

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
3.6 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام سیرت طلاق نکاح ، منگنی ، ولیمہ اور دیگر رسومات شادی

شادیاں ناکام کیوں؟

شادیاں ناکام کیوں؟

 

مصنف : ابو یاسر

 

صفحات: 131

 

شادی مشرقی و اسلامی گھرانے کی ایک ایسی رسم ہے جسے معاشرے میں بنیادی حیثیت حاصل ہے ۔اس کی اساس پر ایک نئے گھر  اور خاندان کا آغاز ہوتا ہے۔اس میں کامیابی ایک مضبوط اور مستحکم معاشرے  کی ضمانت ہے اور اس میں ناکامی معاشرتی تباہی کو مستوجب  ہے۔مغرب اور اہل یورپ کی شادیوں کی  ناکامی کی وجہ تو واضح ہے کہ  ان لوگوں نے ایک جداگانہ معاشرتی نظام  ترتیب دیا ہے اور الگ طور پر فلسفہ حیات تشکیل دیا ہے۔لیکن اہل مشرق یا اسلامی گھرانوں میں شادیوں کی ناکامی  عام طور پر یہ ہے کہ  لوگوں میں غلط رسومات نے جنم لے لیا ہے۔ان رسومات کی وجہ سے بہت زیادہ مسائل  شادیوں سے پہلے  ہی ہو جاتے ہیں اور ایسے ہی بہت زیادہ بعد میں ہو جاتے ہیں۔مثلا  کثیر جہیز کی طلب، زیادہ حق مہر متعین کروانا اور شادی میں ضد کی وجہ سے بے دریغ مال خرچ کرنا وغیرہ  ۔ اسی طرح شوہر اور بیوی کے درمیان رویوں کی وجہ سے باہمی بے اعتمادی یا تعلقات میں سرد مہر ی پیدا ہو جانا  وغیرہ۔زیرنظر کتاب میں مصنف نے معاشرتی اصلاح کی خاطر انہی رویوں  اور مسائل کی طرف نشاندہی کی ہے۔
 

عناوین صفحہ نمبر
شادی کا حکم اور اہمیت قرآن وسنت کی روشنی میں 11
کیسی عورت سے شادی کرنی چاہیے 13
دیندار عورت سے شادی کی جائے 14
بدصورت عورت نیک سیرتی کی وجہ سے مرد کی جنت بن گئی 15
بے دین عورت خاوند کے لیے جہنم بن گئی 20
باپ سے دعا کرنے والی بیٹی کو شاہ پور نے قتل کر ڈالا 23
محبت سے پیش آنے والی عورت سے شادی 25
منگیتر کو پہلے دیکھ لینا چاہیے 26
نکاح میں ولی کی اجازت ضروری 26
اولاد ایک عظیم میٹھا پھل ہے 27
نجومی نے اولاد پیدا کرنے کے لیے لڑکے کو عورت سے قتل کرایا 28
نجومیوں کی تلسیوں کے باوجود اولاد نہ مل سکی 30
حق مہر کتنا ہونا چاہیے 31
حق کی مقدار کا فیصلہ ہوتا ہے 35
طے شدہ مہر دینے سےانکار 37
ولیمہ کتنا ہونا چاہیے 39
بیوی کو بدنام کرنے کی کوشش نہیں کرنی چاہیے 42
عورتوں سے حسن سلوک اوران کے خرچ کا ذمہ دار کون؟ 44
ہماری شادیاں ناکام کیوں ہیں؟
ایک ضروری وضاحت 50
بیوی پر خاوند کا کس قدر حق ہے 58
خواتین کی اکثریت جہنمی کیوں؟ 58
بیوی کے ساتھ زندگی گزارنے کے کامیاب اسلوب
کئی بیویوں والا خاوند کیا کرے 64
جہیز کی تباہ کاریاں
اگر جہیز کی رسم چلتی رہے تو 69
کیا نبی کریم ﷺ نے حضرت فاطمہ کو جہیز دیا تھا 70
جہیز ایک رشوت ہے 73
جہیز کی خواہش مند عورت پر کیا کیا ظلم کرتے ہیں 74
شادی کے موقع پر بارات کا خرچہ کون کرے گا 77
عورت ایک عظیم نعمت 78
بیٹی کو جہیز دیا جاتا ہے اور وراثت سےمحروم کیا جاتا ہے 81
جہیز کے بے شمار نقصانات 83
جہیز کے شرعی اور اخلاقی چند نقصانات
مروجہ جہیز کی شرعی حیثیت 93
کیا حضور ﷺ نے اپنی بیٹیوں کو جہیز دیا تھا؟ 93
اب اسلام آباد سے آنے والا خط ملاحظہ فرمائیے 96
شادی کرنا جرم ہے یا جہیز ؟ 100
سادگی سے شادی کرنے کی چند مثالیں
عبدالرحمن بن عوف کی شادی کا نبی ﷺ کو علم نہ ہوا 106
عائشہ ؓ کی شادی کتنی سادی تھی 107
حضرت صفیہ ؓ کی شادی 108
جہیز نہ ملنے کی وجہ سے بھانجے نے ماموں کی بیٹی کو طلاق دیدی 110
اور وہ دلہن نہ بن سکی ! ایک حیرت انگیز اور رلا دینے ….؟ 111
دودھ میں پانی کی ملاوٹ نہ کرنے والی عورت کی …. 124
مسلمان سیرت نبوی کی بجائے غیر مسلموں کی نقالی کرتا ہے 125

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
3 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام زبان سیرت سیرت النبی ﷺ طلاق نماز

سیرت طیبہ رحمت دارین ﷺ

سیرت طیبہ رحمت دارین ﷺ

 

مصنف : طالب ہاشمی

 

صفحات: 873

 

فخر بنی آدم رسول  الثقلین  شافع روزِ محشر ساقی کوثر حضرت محمد ﷺ کی سیرت طیبہ ایک  موضوع ہے  جس پر دنیا کی  مختلف زبانوں میں اب تک  بے شمار کتابیں لکھی جاچکی ہیں ۔اور سیرت طیبہ کا یہ ہر دلعزیز موضوع  گلشنِ سدابہار کی طرح ہے ۔جسے  شاعرِ اسلام  سیدنا حسان بن ثابت   سے لے کر آج تک پوری اسلامی  تاریخ  میں  آپ ﷺ کی سیرت  طیبہ کے جملہ گوشوں پر  مسلسل کہااور  لکھا گیا ہے او رمستقبل میں لکھا  جاتا  رہے گا۔اس کے باوجود یہ موضوع اتنا وسیع اور طویل ہے  کہ اس  پر مزید لکھنے کاتقاضا اور داعیہ موجود رہے  گا۔ دنیا کی کئی  زبانوں میں  بالخصوص عربی اردو میں   بے شمار سیرت نگار وں نے   سیرت النبی ﷺ  پر کتب تالیف کی ہیں۔  اردو زبان میں  سرت النبی از شبلی نعمانی ،  رحمۃللعالمین از قاضی سلیمان منصور پوری اور  مقابلہ سیرت نویسی میں دنیا بھر میں اول   آنے والی کتاب   الرحیق المختوم از مولانا صفی الرحمن مبارکپوری  کو  بہت قبول عام حاصل ہوا۔ زیر تبصرہ کتاب  ’’سیرت رحمت دارین ﷺ‘‘ سیرت النبی ﷺ پر  جناب طالب الہاشمی کی اہم کتاب  ہے  ۔موصوف کی  سیرت پاک کے مختلف پہلوؤں  پر  اس کتاب کے علاوہ  بھی  سات کتب(اخلاق پیمبری،معجزات سرور کونین، ارشادات دانائے کونین،و  فودِ عرب    بارگاہِ  نبوی   میں، ہمارے رسول پاکﷺ،جنت کے پھول،حسنت جمیع خصالہٖ) منظر عام آچکی ہیں ۔ کتاب ہذا  تین  سال کی محنت شاقّہ کے بعد  پایۂ تکمیل کو پہنچی۔اس کتاب  میں   مصنف مرحوم نے   نبی کریم ﷺ کی حیات اقدس کےتمام اہم واقعات کا احاطہ کرنے کی  سعی کی  ہے ۔ یہ  کتا ب نوجوان نسل کے لیے سر مایہ ہدایت ہے اگرچہ اس سے ہر عمر کا انسان یکساں کسبِ فیض کر سکتاہے۔ متوسط کتب سیرت میں یہ کتاب ایک اہم حیثیت رکھتی ہے۔اللہ تعالیٰ  تمام اہل ایمان کو   نبیﷺکی سیرت کو اپنانے کی  توفیق عطافرمائے (آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
تقدیم 25
عرض مؤلف 39
نعت مولانا ظفر علی خان 43
بعثت سے قبل دنیا کی حالت 44
(مکہ معظمہ ) 52
عرب کا جاہلی معاشرہ 55
اہل عرب کے مفاسد اور ذمائم اخلاق ( نظم حالی ) 60
اہل عرب کےطبقات اور قسمیں 65
رسول اکرم ﷺ کا نسب مبارک 67
حضورﷺ کی والدہ ماجدہ کا سلسلہ نسب 67
قریش 78
رسول اکرم ﷺ کا خانوادہ 81
قصی بن کلاب 81
جناب ہاشم بن عبد مناف 82
جنا ب عبدالمطلب 84
جناب عبد اللہ بن عبد المطلب ( حضورﷺ کے والد ماجد) 86
جناب عبداللہ کی شادی 87
جناب عبد اللہ کی وفات 87
اصحاب الفیل کا واقعہ 87
ولادت باسعادت 93
ظہور قدسی 94
ہر طرف نور ہی نور 96
کنیت 97
رضاعت 98
برکت والا بچہ 99
والدہ کی آغوش میں محبت 100
ننھے حضورﷺ کا سفر یثرب 101
والدہ ماجدہ کا انتقال 102
جناب عبد المطلب کی وفات 103
جناب ابو طالب کی کفالت میں 104
آنحضورﷺ کا بکریاں چرانا 106
پاکیزہ بچپن ،مثال لڑکپن 107
شام کا پہلا سفر 109
حر ب فجار 113
حلف الفضول 114
پاکیزہ جوانی 116
حضرت خدیجہؓ سے عقد ازواج 117
قوم کو خانہ جنگی سے بچالیا 119
آثار نبوت 122
بعثت مبارک 124
غار سےمراجعت 125
نماز کی فرضیت 127
دعوت حق کے ابتدائی تین سال 128
اللہ کا پہلا مرکز 132
قریبی رشتہ داروں کو دعوت 134
کوہ صفا پر اعلان حق 135
مخالفت کاطوفان 139
کافروں کےمخالفانہ حربے 140
ترغیب وتحریص کاحربہ 141
پہلا وفد 145
دوسرا وفد 146
تیسرا وفد 147
چوتھا وفد 147
انسانیت ظلم پر تشدد 150
دوران تبلیغ میں ایذارسانیاں 151
اشرار قریش کا عمومی رویہ 152
صاحبزازی کو طلاق دلوانے کی کوشش 153
تلاوت قرآن میں خلل اندازی 153
لغو اعتراضات 154
گلوئےمبارک میں پھندا 155
ابولہب کی رذالت اورچیرہ دستیاں 156
بدطینت پڑوسی 157
ابو لہب کے گستاخ بیٹے کا عبرت ناک انجام 158
ابوجہل کی دست درازیاں 160
اذان کے ساتھ تمسخر 162
اہل ایمان کی تذلیل و تضحیک 163
آل یاسر کی بلاکشی 167
بیکس غلاموں اور کنیزوں پر جور وستم 170
حضرت حمامہ ؓ 172
حضرت ام عبیس ؓ 173
حضرت زنیرہ ؓ 174
ذی حیثیت مسلمانوں پر مشرکین کاقہر و عتاب 178
حضرت خالد بن سعید کی بلاکشی 181
حضرت عثمان غنی کی بلاکشی 182
حضرت ابو جندل کی بلاکشی 183
خوانی کی سزا 183
مکہ سے باہر اسلام کی اشاعت 185
ضماد ازدی کا قبول اسلام 189
ابو ذر غفاری کا قبول اسلام 192
پہلی ہجرت حبشہ 195
دوسری ہجرت حبشہ 199
حضرت جعفر کی حق گوئی شاہ حبشہ کےدربار میں 201
حضرت ابوبکر صدیق ؓ کا عزم حبشہ 206
حضرت حمزہ کا قبول اسلام 208
حضرت عمر کا قبول اسلام 211
ابوجہل سٹپٹا گیا 218
حضرت عمر کےمکان کا گھیراؤ 219
شعب ابی طالب میں محصوری 220
محصوری کےمصائب 221
محصوری کا خاتمہ 222
شق القرم کا تحیر خیز واقعہ 226
مکہ کے اہل ایمان کےدرمیان مؤاخاۃ 228
عام الحزن ( غم کا سال ) 230
جناب ابو طالب کی وفات 230
حضرت خدیجہؓ کی وفات 231
حضرت سودہ ؓ سےنکاح 232
طائف کا پر صعوبت سفر 234
طائف سےواپسی 238
مکہ میں داخلہ 241
اسراء معراج النبی ﷺ 242
شق صدر 244
آسمان اول پرو رود 246
حرام خور 147
سود خوار 247
علمائے سوء 248
غیبت کرنے والے 248
تین عطیے 249
شب اسراء و معراج کی صبح 251
مکہ میں رسو ل اکرمﷺ کےآخری تین سال 254
بنوعامر کا مرد دانا 255
بنو شیبان کو دعوت اسلام 256
انصار 262
یثرب کے قدیم باشندے 264
اوس او ر خزرج کی یثرب میں آمد 265
ایام الانصار 268
اسلام سے پہلے انصار کامذہب 272
نبی آخرالزمان کا انتظار 273
سوید الکامل 275
ارض یثرب میں آنحضورﷺ کے سفیر اور مبلغ اسلام 280
یثرب میں جمعہ کا قیام 284
شمع توحید کے پچھتر پروانے 285
بارگاہ نبوی میں حاضری 286
مقدس پیمان وفا 287
مشرکین قریش کا رد عمل 289
ہجرت کا اذن عام 293
کفار مکہ کی ناپاک سازش 295
رسول اکرمﷺ کےسفرہجرت کا آغاز 298
غار ثور میں نازک ترین لمحہ 299
حضرت علیؓ پر کتابیتی 302
ام معبد کےخیمے پر ورود 305
قباء میں ورود مسعود 308
مسجد قباء کی تاسیس 310
پہلی نماز جمعہ 313
یہ رتبہ بلند ملا جس کو ملا گیا 317
سید البشر کی والہانہ خدمت 318
ہجرت کا پہلا سال 321
میثاق مدنیہ 323

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
19.3 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اخلاق حسنہ اسلام تاریخ تاریخ اسلام تہذیب حج خلافت راشدہ زبان سیرت سیرت صحابہ طلاق قربانی نبوت نماز وضو

سیرت علی المرتضی ؓ

سیرت علی المرتضی ؓ

 

مصنف : سیف اللہ خالد

 

صفحات: 426

 

خلافت وامارت کا نظام دنیا میں مسلمانوں کی ملی وحدت اور مرکزیت کی علامت ہے ۔ عہدِ نبوت میں رسول اللہ ﷺ کی ذاتِ مبارک کودنیائے اسلام میں مرکزی حثیت حاصل ہے تھی اور اس مبارک عہد میں امت کی قیادت وسیادت کامنصب آپ ہی کے پاس تھا۔ آپ ﷺ کے بعد لوگوں کی راہنمائی اور اسلامی مرکزیت کوبراقراررکھنے کے لیے خلفائے راشدین آپ ﷺ کے جانشین بنے۔ خلفائے راشدین کا دورِ حکومت تاریخ اسلام کاایک تابناک اورروشن باب ہے ا ن کےعہد زریں میں عظیم الشان فتوحات کی بدولت اسلامی سلطنت کی حدود اطراف عالم تک پہنچ گئیں ۔انہوں نے اس دور کی بڑی بڑی سلطنتوں کوشکست دے کر پرچم ِ اسلام کو مفتوحہ علاقوں میں بلند کیا اور باطل نظاموں کو ختم کر کے ایک مضبوط ، مستحکم اور عظیم الشان اسلامی کی بنیاد رکھی ۔عہد نبوت کےبعد خلفائے راشدین کا دورِ خلافت عدل وانصاف پر مبنی ایک مثالی دورِ حکومت ہے جو قیامت تک قائم ہونے والی اسلامی حکومتوں کےلیے رول ماڈل ہے۔خلفائے راشدین کے مبارک دور کا آغاز سیدنا ابو بکر صدیق کے دورِ خلافت سے ہوتا ہے ، ان کے بعد سیدنا عمر فاروق اور سیدنا عثمان کا دور آتا ہے ۔ سیدنا عثمان کے بعد سیدنا علی المرتضیٰ چوتھے خلیفہ راشدبنے ۔ان کے زمامِ خلافت سنبھالتے ہی فتنۂ تکفیر اور فتنۂ خوارج جیسے بڑے برے فتنوں نے سر اٹھا یا اور مسلمانوں کے باہمی جھگڑوں اور اختلافات میں بڑی شدت آگئی او رنوبت صحابہ کرام کے درمیان جنگ تک پہنچ گئی اور واقعۂجمل اور جنگِ صفین جیسے خون ریز واقعات رونما ہوئے ۔سیدناعلی آنحضرت ﷺ کے چچا ابو طالب کے بیٹے تھے اور بچپن سے ہی حضورﷺ کے زیر سایہ تربیت پائی تھی بعثت کے بعد جب حضور ﷺ نے اپنے قبیلہ بنی ہاشم کے سامنے اسلام پیش کیا تو سیدناعلی نے سب سے پہلے لبیک کہی اور ایمان لے آئے۔اس وقت آپ کی عمر آٹھ برس کی تھی ہجرت کی رات نبی کریم ﷺ آپ کو ہی اپنے بستر پر لٹا کر مدینہ روانہ ہوئے تھے۔ ماسوائے تبوک کے تمام غزوات حضور ﷺ کے ساتھ تھے۔لڑائی میں بے نظیر شجاعت اور کمال جو انمردی کا ثبوت دیا۔آحضرت ﷺ کی چہیتی بیٹی سیدہ فاطمۃ الزہرا کی شادی آپ ہی کے ساتھ ہوئی تھی۔حضور ﷺ کی طرف سے خطوط اور عہد نامے بھی بالعموم آپ ہی لکھا کرتے تھے۔پہلے تین خلفاء کے زمانے میں آپ کو مشیر خاص کا درجہ حاصل رہا اور ہر اہم کام آپ کی رائے سے انجام پاتا تھا۔سیدنا علی بڑے بہادر انسان تھے۔ سخت سے سخت معر کوں میں بھی آپ ثابت قدم رہے ۔بڑے بڑے جنگو آپ کے سامنے آنے کی جر ات نہ کرتے تھے۔آپ کی تلوار کی کاٹ ضرب المثل ہوچکی ہے۔شجاعت کے علاوہ علم وفضل میں بھی کمال حاصل تھا۔ایک فقیہ کی حیثیت سے آپ کا مرتبہ بہت بلند ہے۔آپ کے خطبات سے کمال کی خوش بیانی اور فصاحت ٹپکتی ہے۔خلیفۂ ثالث سید عثمان بن عفان کی شہادت کے بعد ذی الحجہ535میں آپ نے مسند خلافت کو سنبھالا۔آپ کا عہد خلافت سارے کاسارا خانہ جنگیوں میں گزرا۔اس لیے آپ کو نظام ِحکومت کی اصلاح کے لیے بہت کم وقت ملا۔تاہم آپ سے جہاں تک ممکن ہوا اسے بہتر بنانے کی پوری کوشش کی۔ فوجی چھاؤنیوں کی تعداد میں اضافہ کیا۔صیغہ مال میں بہت سی اصلاحات کیں ۔جس سے بیت المال کی آمدنی بڑھ گئی۔عمال کے اخلاق کی نگرانی خود کرتے اور احتساب فرماتے۔خراج کی آمدنی کا نہایت سختی سے حساب لیتے۔ذمیوں کے حقوق کا خاص خیال رکھتے۔ عدل وانصاف کارنگ فاروق اعظم کے عہد سے کسی طرح کم نہ تھا۔محکمہ پولیس جس کی بنیاد سیدنا عمر نے رکھی تھی۔اس کی تکمیل بھی سیدناعلی کے زمانے میں ہوئی۔ نماز فجر کے وقت ایک خارجی نے سیدنا علی پر زہر آلود خنجر سے حملہ کیا جس سے آپ شدید زخمی ہوگئے ۔اور حملہ کے تیسرے روز رحلت فرماگئے۔انتقال سے پہلے تاکید کی کہ میرے قصاص میں صرف قاتل ہی کو قتل کیا جائے کسی اور مسلمان کا خون نہ بھایا جائے۔خلفائے راشدین کی سیرت امت کےلیے ایک عظیم خزانہ ہے اس میں بڑے لوگو ں کےتجربات،مشاہدات ہیں خبریں ہیں امت کے عروج اور غلبے کی تاریخ ہے ۔ اس کےمطالعہ سے ہمیں دیکھنے کا موقع ملتا ہے کہ کن کن مواقع پر اہل حق کوعروج وترقی ملی ۔خلفاء راشدین کی سیرت شخصیت ،خلافت وحکومت کےتذکرہ پر مشتمل متعد د کتب موجود ہیں ۔ زیر تبصرہ کتاب ’’سیرت علی ‘‘ تفسیر دعوۃ القرآن کے مصنف مولانا سیف اللہ خالد ﷾ کی تصنیف ہے جوکہ سیدنا علی کےحالات زندگی طرز حکومت اور کارناموں پر مشتمل ہے فاضل مصنف نے قرآن وحدیث اورمستند روایات کی روشنی میں ’’عہد خلافت علی ‘‘ میں رونما ہونے والے واقعات اور تاریخی حقائق کوپیش کیا اوران حقائق کا ذکر کرتے ہوئے اس دور کی حقیقی اورسچی تصویر پیش کی ہے۔جھوٹی اورمن گھڑت روایات ، قصوں اور کہانیوں کےنتیجے میں قارئین کے ذہنوں میں پیدا ہونے والے اشکالات اور شکوک وشبہات کودور کیا ہے اور خیر القرون کی جماعت ِ صحابہ کے بارے میں کتاب وسنت پر مبنی صحیح موقف اور منہج سلف کی وضاحت کی ہے۔ اس کتاب میں مذکور احادیث ، روایات اور آثار واقوال کی تحقیق وتخریج ابوالحسن سید تنویر الحق شاہ ﷾ نے کی او ران کی اصل مآخذ کے ساتھ مراجعت اور تہذیب وتسہیل کا لائق تحسین کام ابو عمر محمد اشتیاق اصغر نے کیا ہے ۔یہ کتاب سیروتواریخ میں ایک منفرد اور شاندار اضافہ ہے ۔ جسے دارالاندلس نےحسنِ طباعت سے آراستہ کیا ہے۔ مصنف موصوف اس سے پہلے سیرت ابو بکر صدیق ، سیرت عمرفاروق اور سیرت عثمان غنی قارئین کی نذر کر چکے ہیں ۔ ان کی قابل قدر تصنیفات اہل علم اور عام قارئین میں دادِ تحسین حاصل کرچکی ہیں۔اللہ تعالیٰ ان کے علم وعمل میں اضافہ فرمائے اور ان کی دینی خدمات کو قبول فرمائے ۔ اور اس کتاب کوقارئین کےلیے خلیفۂ رابع سیدنا علی المرتضیٰ کی سیرت وکردار کو اپنانے کا ذریعہ بنائے ( آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
مقدمہ
فہرست
عرض ناشر 17
عرض مولف 21
باب۔1 ٍ
سیدنا علیؓ کانا م ونسب 27
کنیت 28
ابو حسن بھی ا ٓ  پکی کنیت بھی 29
والد 30
والدہ 36
سیدنا علیؓ کی شخصی و جاہت اور جسمانی اوصاف 37
سیدنا علی ؓ کا قبول اسلام 38
سیدنا علی ؓ کی بت شکنی 40
ابوذر ؓ کا قبول اسلام اور سیدنا علی ؓ 42
سیدنا علی ؓ کی نبی ﷺ پر جاں نثاری 45
سیدنا علیؓ سے متعلق نازل ہونے والی آیات 51
تقدیر علیؓ ا ٓیات قرآنی کی تفسیر کرتے ہوئے 52
دلائل نبوت سے متعلق علیؓ سے مروی احادیث 65
حدیث رسول ﷺ کے بیان میں انتہائی احتیاط 66
رسول اللہﷺ پر جھوٹ  باندھنے والے کا وبال 66
رسول اللہ ﷺ کی تکذیب کے اسباب سےاجتناب 67
سیدنا علی ؓ اور اتبا ع سنت 69
مسکرانے میں بھی اتباع 69
طریقہ وضو میں اتباع 70
مخلوق کی اطاعت صرف نیکی کے کاموں میں ہے 71
نبی ﷺ کا علی ؓ کو علم میں خاص نہ کرنا 73
سیدنا علی ؓ کا سیدہ فاطمہ ؓ سے نکاح 75
سیدہ فاطمہ ؓ کا زہد قناعت اور صبر 75
سیدہ فاطمہ ؓ کا زہد قناعت اور صبرر 75
ہماری جانیں اللہ کے ہاتھ میں ہیں 79
رسول اللہﷺ کی سیدہ فاطمہ ؓ سے محبت 80
دنیا و آخرت کی سرداری 83
سیدنا علی ؓ کے بیٹے حسن  وحسین ؓ 86
سید نا حسن ؓ کی فضیلت احادیث کی روشنی میں 86
سید نا حسین ؓ کے فضائل 89
سید نا حسن اور حسین ؓ کے مشترکہ فضائل 90
سیدنا علی ؓ کا غزوات میں کردار 94
غزوہ بدر میں کردار 94
غزوہ احد میں کردار 96
واقعہ افک اور سیدنا علی ؓکا کردار 97
غزوہ خندق میں کردار 98
صلح  حدیبیہ میں کردار 99
غزوہ خیبر میں کردار 101
فتح مکہ سے پہلے قریش کےمفاد کی جاسوسی  کو ناکام بنانے میں کردار 104
فتح مکہ کے موقع پر جعدہ کو قتل کرنے کی کوشش کرنا 107
غزوہ حنین میں 108
غزوہ تبوک میں کردار 109
سیدنا علی ؓ عمرۃ القضا میں 110
پہلا حج اور سیدنا علی ؓ کا کردار 111
سیدناعلی ؓ ارو وفد نجران کو دعوت مبا ہلہ 113
سیدنا علیﷺ یمن میں بطور داعی وقاضی 114
حجتہ الوداع اور گوشت کی تقسیم کی ذمہ داری 118
نبی ﷺ سے خلافت سے متعلق سوال نہ کرنا 124
باب۔2
سیدنا علیؓ عہد صدیقی میں 129
رسول اللہﷺ کی وفات اور خلیفہ کا انتخاب 129
سیدنا ابوبکر ؓ کی خلافت پر سیدنا علی ؓ کی بیعت 129
علی ؓ کی زبان سے ابو بکر ؓ کی فضیلت 135
میراث نبوی ، ابو بکر اور فاطمہ ؓ کا معاملہ 139
سیدنا علی ؓ عہد فاروقی میں 143
سیدنا علی اور سید نا عمرؓ کے تعلقات 144
عہد  فاروقی میں سیدنا علیؓ کے عدالتی فیصلے 144
آل علی ؓ سے سیدنا عمرؓ کے تعلقات 145
سید ام کلثو م بنت علی ؓ سے سیدنا عمرؓ کا نکاح 146
سیدناعلی اور عباس  ؓ عمرؓ کی عدالت میں 147
خلافت کے لیے منتخب کمیٹی میں علی ؓ کا نام 151
سیدنا علی ؓ عہد عثمانی میں 153
سید نا علی  ؓ کا سیدنا عثمان ؓ کی بیعت کرنا 153
عہد عثمانی میں حدود کی تنفید سیدنا علی ؓ کے سپرد 155
سید نا علی ؓ کے ہاں سیدنا عثمان ؓ کا مقام 157
سیدنا عثمان ؓ کی طرف سے بلو ا ئیوں  کے ساتھ مذکرات 158
سید نا علی ؓ سیدنا عثمانی ؓ کے دفاع میں پتھر کھاتے ہوئے 159
آل علی ؓ سیدنا عثمان ؓ کا دفا ع کرتے ہوئے 161
باب۔3
سیدناعلیؓ کام منصب خلافت کے لیے انتخاب 167
سید نا علیؓ ہی خلافت کے سب سے زیادہ مستحق اور موزوں تھے 168
سیدنا علیؓ کے فضائل و منا قب 176
سیدنا علی ؓ کی علمی و دینی بصیرت 185
تمام قرآنی آیات کےنزول کا علم رکھنے والے 186
مسائل کے استفسار میں حیا ما نع نہیں 188
علم اور عمل ساتھ ساتھ 189
لو گو ں اور عمل ساتھ ساتھ 189
لو گوں کی سوا ل پو چھنے کی دعوت دینے والے 190
لو گوں کی سہولت کے لیے حج تمتع کا احرام باندھتے ہوئے 190
صحابہ کرام ؓ میں سب سے بڑے عالم 192
فتویٰ میں حجت کی حیثیت رکھنے والے 192
افتاد قضا میں شیخین سے اختلاف کرنا پسند سمجھنے والے 192
وتر ادا کرنےکا طریقہ 193
سیدنا علی ؓ سے منقول چند مسنون دعائیں 194
سواری کی دعا 194
نماز کی مسنون دعائیں 195
دفن کے بعد ہر قبر پر دعا 198
امر با لمعروف اور نہی عن المنکر کا اہتمام 199
سیدنا علی ؓ اور بت شکنی 199
رسو ل اللہ  ﷺ کے ساتھ مل کر بیت اللہ کے بتوں کو توڑتے ہوئے 199
جاہلیت کے نشانات مٹانے کے حریص 201
زنادقہ اور مرتدین کو نذر ا ٓتش کرنا 201
مر تد بت پرستوں کو آگ میں جلانے والے 203
مر تد ین کی طر ف لشکر روانہ کرتے ہوئے 204
حدود اللہ کے قیام کا حکم  دیتے ہوئے 205
رعایا سے عدل و انصاف 205
مریض کی عیادت کی فضیلت بیان کرتے ہوئے 207
بازاروں میں دعوت و اصلاح کا کام کرنے والے 208
عوام کو اخلاق حسنہ کی ترغیب دیتے ہوئے 208
قصہ گوئی کی بد عت کا ظہور اور سیدنا علیؓ کی محاذ آرائی 209
زنا کاری کی شناعت بیان کرتے ہوئے 210
گم شدہ جانور وں کے بارے میں اہتمام 211
عاملین کی تر بیت واصلاح کا فریضہ 212
ایک زانی راہب کا قصہ 212
سید نا علیؓ کی فقاہت 215
ہدایت اور سیدھا پن طلب کرنے کاحکم 215
پانی کی عد م مو جودگی میں تییم کی تعلیم 215
خاص مواقع پر غسل کی تعلیم 216
سدل کی حالت میں نماز پڑھنا 216
جوتو ں پر مسح اور انھیں اتار کر نماز 217
مسجد کے پڑوسی کی نماز گھر میں جائزنہیں 217
ریشمی لباس متعلق سیدنا علی ؓ کا موقف 217
مطلقہ کو نفع  دینا اور بے و قوف کی طلاق کا حکم 218
ولد الزنا کے احکام 219
حاملہ عورت کی عدت جس کا شوہر وفات پا گیا ہو 219
شادی شدہ زانی کو کوڑے اور رجم کی سزادینا 220
باربار چوری کرنے والے کاحکم 223
ہاتھ کاٹنا اور کٹے ہوئے ہاتھ کو داغنا 223
بیل اور گدھے کی لڑائی اور سید ناعلیؓ کا فیصلہ 224
اگر گواہی دینے میں غلطی ہوجائے ٍ225
حاملہ جانور کی قربانی کاحکم 225
کوئی گم شدہ چیز ملے تو اس کا حکم 226

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
8 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام تاریخ خلافت راشدہ سیرت سیرت صحابہ طلاق قربانی نماز نماز جمعہ

سیرت ابوبکر صدیق ؓ

سیرت ابوبکر صدیق ؓ

 

مصنف : سیف اللہ خالد

 

صفحات: 235

 

انبیاء کرام﷩ کے بعد صحابہ کرام کی مقدس جماعت تمام مخلوق سے افضل اور اعلیٰ ہے یہ عظمت اور فضیلت صرف صحابہ کرام کو ہی حاصل ہے کہ اللہ نے انہیں دنیا میں ہی مغفرت،جنت اور اپنی رضا کی ضمانت دی ہے بہت سی قرآنی آیات اور احادیث اس پر شاہد ہیں۔صحابہ کرام سے محبت اور نبی کریم ﷺ نے احادیث مبارکہ میں جوان کی افضلیت بیان کی ہے ان کو تسلیم کرنا ایمان کاحصہ ہے ۔بصورت دیگرایما ن ناقص ہے ۔جماعت ِ صحابہ میں سےخاص طور پر وہ ہستیاں جنہوں نے آپ ﷺ کے بعد اس امت کی زمامِ اقتدار ، امارت ، قیادت اور سیادت کی ذمہ داری سنبھالی ، امور دنیا اور نظامِ حکومت چلانے کے لیے ان کےاجتہادات اور فیصلوں کو شریعت ِ اسلامی میں ایک قانونی دستاویز کی حیثیت حاصل ہے۔ ان بابرکت شخصیات میں سے خلیفۂ اول سیدنا ابو بکر صدیق سب سے اعلیٰ مرتبے اور بلند منصب پر فائز تھے اور ایثار قربانی اور صبر واستقامت کا مثالی نمونہ تھے ۔ سیدنا ابوبکر صدیق قبیلہ قریش کی ایک مشہور شاخ تیم بن مرہ بن کعب کے فرد تھے۔ساتویں پشت میں مرہ پر ان کا نسب رسول اللہﷺ سے مل جاتا ہے ہے ۔ایک سچے مسلمان کا یہ پختہ عقیدہ ہے کہ انبیاء ورسل کے بعد اس کائنات میں سب سے اعلیٰ اور ارفع شخصیت سیدنا ابو بکر صدیق ہیں ۔ سیدنا ابو بکر صدیق ہی وہ خو ش نصیب ہیں جو رسول اللہﷺ کےبچپن کے دوست اور ساتھی تھے ۔آپ پر سب سے پہلے ایمان لانے کی سعادت حاصل کی اور زندگی کی آخری سانس تک آپ ﷺ کی خدمت واطاعت کرتے رہے اور اسلامی احکام کے سامنے سرجھکاتے رہے ۔ رسول اللہ سے عقیدت ومحبت کا یہ عالم تھا کہ انہوں نے اللہ کے رسول ﷺ کی خدمت کے لیے تن من دھن سب کچھ پیش کر دیا ۔نبی کریم ﷺ بھی ان سے بے حد محبت فرماتے تھے ۔آپ ﷺ نے ان کو یہ اعزاز بخشا کہ ہجرت کے موقع پر ان ہی کو اپنی رفاقت کے لیے منتخب فرمایا۔ بیماری کے وقت اللہ کے رسول ﷺ نے حکماً ان کو اپنے مصلیٰ پر مسلمانوں کی امامت کے لیے کھڑا کیا اورارشاد فرمایا کہ اللہ اورمؤمنین ابو بکر صدیق کے علاوہ کسی اور کی امامت پر راضی نہیں ہیں۔خلیفہ راشد اول سیدنا صدیق اکبر نے رسول اللہ ﷺ کی حیات مبارکہ میں ہر قدم پر آپ کا ساتھ دیا اور جب اللہ کے رسول اللہ وفات پا گئے سب صحابہ کرام کی نگاہیں سیدنا ابو بکر صدیق کی شخصیت پر لگی ہو ئی تھیں۔امت نے بلا تاخیر صدیق اکبر کو مسند خلافت پر بٹھا دیا ۔ تو صدیق اکبر ؓ نے مسلمانوں کی قیادت ایسے شاندار طریقے سے فرمائی کہ تمام طوفانوں کا رخ اپنی خدا داد بصیرت وصلاحیت سے کام لے کر موڑ دیا اور اسلام کی ڈوبتی ناؤ کو کنارے لگا دیا۔ آپ نے اپنے مختصر عہدِ خلافت میں ایک مضبوط اور مستحکم اسلامی حکومت کی بنیادیں استوار کرنے میں بہت اہم کردار ادا کیا ۔نتیجہ یہ ہوا کہ آپ کے بعد اس کی سرحدیں ایشیا میں ہندوستان اور چین تک جا پہنچیں افریقہ میں مصر، تیونس او رمراکش سے جاملیں او ریورپ میں اندلس اور فرانس تک پہنچ گئیں۔سیدنا ابو بکر صدیق کی زندگی کے شب وروز کے معمولات کو الفاظ کے نقوش میں محفوظ کرنے کی سعادت نامور شخصیات کو حاصل ہے۔ زیر تبصرہ کتاب’’سیرت ابوبکر صدیق ‘‘ تفسیر دعوۃ القرآن کے مصنف مولانا سیف اللہ خالد ﷾ کی تصنیف ہے ۔انہوں نے اس کتاب کو مرتب کرنے میں صحیح اورمستند روایات کو بنیاد بنایا اور صحیح ترین مآخذ اور مراجع سےمعتبر روایات کاانتخاب کر کے ایام ِ خلافت ِ راشدہ کی حقیقی اور صحیح تصویر قارئین کے سامنے پیش کی ہے۔ مصنف نے اسے مرتب کرتے وقت ڈاکٹر علی محمد محمد الصلابی ﷾ کی تالیف’’ ابو بکر صدیق کی شخصیت ، حیات اور خلافت‘‘ سے بھر پور استفادہ کیا ہے۔ اس کے علاوہ مکتبہ شاملہ کو بنیاد کر حدیث ، تاریخ اور سیرت کی سیکڑوں کتب سے مستند اور صحیح روایات کو جمع کرنے کی سعی کی ہے۔ سیرت سیدنا ابو بکر صدیق کے حوالے سےیہ کتاب بیش قیمت تحفہ ہے ۔تمام اہل اسلام کو صحابہ کرام کی طر ح زندگی بسر کرنے کی توفیق عطا فرمائے(آمین)

 

عناوین صفحہ نمبر
فہرست
عرض ناشر 13
عرض مولف 15
سیدنا ابو بکر ؓ کا نام ونسب 19
سدنا ابو بکر ؓ کے القاب 19
عتیق 19
صدیق 20
صاحب 21
تاریخ پیدائش 23
سیدنا ابو بکر ؓ کے والدین 24
والد 24
والدہ 25
سیدناابو بکر ؓ کی بیویاں 26
قتیلہ بنت عبدالعزیٰ 26
ام  رمان بنت عامرؓ 27
اسماء بنت عمیسؓ 28
حبیبہ بنت خارجہ ب 29
سیدنا ابو بکر ؓ کی اولاد 30
عبدالرحمٰن بن ابوبکرؓ 30
عبداللہ  بن ابوبکر کی بنی ﷺ کے حلہ میں کفن کی خواہش اور ترک 31
محمد بن ابو بکرؓ 31
اسماء بنت ابوبکرؓ 32
ام المو منین سیدہ عائشہؓ 33
ام کلثوم بنت ابوبکر 35
خاندان صدیق اکبرؓ کا منفر د اعزاز 36
قبل از اسلام ابوبکر ؓ کی شہرت 37
علم انساب کے ماہر 37
جو دوسخا اور مہمان نوازی 38
تجارت 39
سیدنا ابو بکر ؓ کاقبول اسلام 40
مکہ کے دور ابتلا میں عظیم کردار 43
نبی ﷺ کا دفاع کرتے ہوئے 43
نئے مسلمانوں کی تعلیم اور تکریم کا فریضہ ادا کرتے ہوئے 44
ستم رسیدہ غلاموں کی آزادی میں کوشاں 45
غلاموں کو آزادی دلانے کا مقصد رضائے الٰہی کا حصول 47
صدیق اکبرؓ کی پہلی ہجرت 51
رسو ل اللہﷺ سے عائشہ ؓ  کا نکاح 54
ہجرت مدینہ اور ابوبکر ؓ 56
ہجرت مدینہ  میں سیدہ عائشہ اور سیدہ اسماء ؓ کا کردار 57
سیدناابوبکر ؓ کا کفار مکہ پر اظہار افسوس 59
سیدنا عبداللہ بن ابوبکر ؓ کاکردار 59
عام بن فہیرہ مولیٰ ابی بکر ؓ کا کردار 60
راستہ بتلانے کے لیے ماہر گائیڈ کا اہتمام 60
ابوبکر ؓ کوغار میں بھی بنی کریم ﷺ کی حفاظت کیی فکر 60
سراقہ کا تعاقب اور ابوبکر ؓ نبی ﷺ کی حفاظت کے لیے مستعد 63
مدینہ منورہ آمد پر ابو بکر صدیق ؓ کا کردار 67
مدینہ میں رسو ل اللہ ﷺ کے استقبال کے شاندار مناظر 68
خضاب کا استعمال 68
اپنین بیوی ام بکر کو طلاق دینا 69
مدینہ منورہ پہنچ  سیدہ عائشہ ؓ کو بخار آنا 69
سیدنا ابوبکرؓ کو بخار آنا 69
جہادی میدانوں میں
ابوبکر صدیق ؓ میدان جہادمیں 73
جنگی معرکوں کی قیادت  کرتے ہوئے 73
ابوبکر ؓ میدان بدر میں 74
سب سے پہلے جہاد کے حق میں مشورہ دینے والے 74
فتح و نصرت کی بشارت اور رسو ل اللہﷺ کے پہلو بہ پہلو قتال 75
اسیران بدر کے بارے میں سیدنا ابوبکرؓ کی رائے 77
صدیق اکبر ؓ کؤمیدان اُحد میں 80
کفار کے تعاقب میں حمراء الا سد تک پیش قدمی 82
صدیق اکبر ؓ کی صلح حدیبیہ میں 84
بیت اللہ کی طرف پیش قدمی کا مشورہ 84
مصالحانہ گفتگو کے دوران سید نا ابو بکر ؓ کی غیر ت ایمانی 85
مزاج شناس رسو ل سیدنا ابوبکر ؓ 86
ابوبکر ؓ غزوہ خیبر کے پہلے علم بردار 86
صدیق اکبر ؓ سریہ نجدمیں 89
صدیق اکبرؓ سریہ نبو فزارہ میں 90
صدیق اکبر ؓ غزوہ ذات السلاسل میں 90
صدیق اکبر ؓ فتح مکہ میں 93
مکہ پر چڑھائی کا معاملہ صیغہ راز میں رکھا گیا 93
ابوقحا فہ ؓ کا قبو ل اسلام 93
ابو قحا جہ ؓ کی داڑھی کو رنگنے کاحکم 94
ابوبکر ؓ کی میدان حنین میں ثابت قدمی 95
رسو ل اللہ ﷺ کی موجودگی میں سیدنا ابوبکر ؓ کا فتویٰ 96
غزوہ تبو ک اور اللہ کی راہ میں مال کا عطیہ 99
رسو ل اللہ ﷺ سے مسلمانوں کے لیے بارش کی دعا کی درخواست 100
صدیق اکبرؓ بحیثیت امیر حج 102
صدیق اکبر ؓ حجۃ الو داع میں 103
مدنی معاشرے میں کردار اور بعض فضائل
مدنی معاشرے میں کردار اور بعض فضائل 107
سیدنا ابوبکر ؓ راز نبوی ﷺ کے محافظ 107
سیدنا ابو بکر ؓ اور نماز جمعہ کی آیت 108
احترام رسول اللہﷺ اور ابوبکر ؓ 109
رسو ل اللہﷺ کا ابوبکر ؓ سے کبرو غرور کی نفی فرمان ا 109
سیدنا ابوبکر ؓ کا زہد و ورع 110
سیدنا ابو بکر ؓ کی خشیت 111
نفاق کا خوف اور اس سے بیزاری 112
امر بالمعروف اور نہی عن المنکر کے داعی 113
مہمانوں  کی عزت و تکریم کرنےوالے 114
سیدنا ابو بکر ؓ کے فاقے کا ایک واقعہ 116
اے آل ابی بکر! یہ تمھاری پہلی بر کت نہیں ہے 117
رسو ل اللہ ﷺ کی طرف سے سیدنا ابو بکر ؓ کی حمایت 119
نبی ْﷺ کا ابوبکر ؓ پر بے مثال اعتماد 120
سیدنا ابوبکر ؓؓ کوغصے پر قابو رکھنے کی نبوی نصیحت 122
نبیﷺ کو سب سے زیادہ محبوب عائشہ اور ابوبکرؓ 123
زبان نبوت  سے جنت کی بشارت 124
سیدنا ابوبکرؓ کو جنت کےتمام دروازوں سے پکاراجائے گا 125
نبیﷺ کی ابوبکر ؓ کے لیے علم کی بشارت 126
سیدنا ابوبکر ؓ بنی ﷺ کی موجودگی میں معبر 127
نبی ﷺ کی موجودگی میں مصلیٰ نبویﷺ پر 129
واقعہ افک اور خاندان صدیق کا کردار 131
کیوں  نہیں ، واللہ ! یقینا میں چاہتا ہوں کہ اللہ مجھے بخش دے 138
اعلان براءت پر سید ہ عائشہ ؓ کا سر کا بوسہ لینا 139
سیدنا ابوبکر ؓ سے منقول ادعیہ 140
نماز میں آخری تشہد کی دعا 140
صبح و شا م کی دعا 141
وفات نبوی اور صدیق اکبرؓ 142
وفات نبوی کا اشارہ اور سیدنا ابوبکر ؓ کے آنسو 142
سیدہ عائشہ ؓ کا ابوبکر ؓ کا امام نہ بنانے کی درخواست کرنا 143
حکم نبوی کو ابوبکر لوگو ں کو نماز پڑھائیں 143
نبی ﷺ کا ابوبکر ؓ کی اقتدار میں نماز پڑھنے والوں پر اظہار مسرت 144
رسول اکرم ﷺ  کے چہر ہ انور کو بوسہ دینا 145
حادثہ دل فگار  ی ہولناک اور سیدنا ابو بکر ؓ کامو قف 146

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
5.2 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اسلام تراجم حدیث زبان سلفی طلاق قربانی

صحیح بخاری جلد ششم

صحیح بخاری جلد ششم

 

مصنف : محمد بن اسماعیل بخاری

 

صفحات: 804

 

امام بخاری  کی شخصیت اور  ان کی صحیح بخاری کسی تعارف کی  محتاج نہیں  سولہ سال کے طویل عرصہ میں امام  بخاری نے  6 لاکھ احادیث سے  اس کا انتخاب کیا اور اس کتاب کے ابواب کی ترتیب روضۃ من ریاض الجنۃ میں  بیٹھ کر فرمائی اور اس میں  صرف صحیح احادیث کو شامل کیا ۔ جسے اللہ تعالیٰ نے صحت کے اعتبار سےامت محمدیہ میں’’ اصح الکتب بعد کتاب اللہ‘‘ کادرجہ  عطا کیا بے شماراہل علم  اور ائمہ  حدیث  ننے  مختلف انداز میں  مختلف  زبانوں میں صحیح بخاری کی شروحات  لکھی ہیں  ان میں سے فتح الباری از ابن حافظ ابن حجر عسقلانی  کو  امتیازی مقام  حاصل  ہے  ۔اردو زبان میں سب سے پہلے  علامہ وحید الزمان نے  صحیح بخاری کا  ترجمہ کیا ہے ان کےبعد کئی شیوخ الحدیث  اور  اہل علم نے  صحیح بخاری  کا ترجمہ  حواشی اور شروح  کا کام  سرانجام دیا ۔ان میں سلفی منہج پر لکھی  جانے  والی فیض الباری  ازابو الحسن سیالکوٹی ، توفیق الباری  اور  حافظ عبدالستار حماد کی شرح بخاری  قابل ذکر ہیں ۔ زیر نظر  کتاب ’’ صحیح بخاری ‘‘ مو لانا  داؤد راز کے  ترجمے ساتھ سات مجلدات پر مشتمل یونیکوڈ  اور پی ڈی  ایف فارمیٹ میں  منفرد نوعیت  کی  حامل ہے ۔محترم سید شاہنواز حسن، محترم ابوطلحہ عبدالوحید بابر ،محترم محمد عامر عبدالوحید انصاری حفظہم  اللہ نے  بڑی محنت شاقہ سے اسے دعوتی  مقاصد کے لیے  تیا رکیا ہے  ۔کہ  جسے صحیح بخاری  مترجم سے  استفاد ہ کرنے کا تیز ترین سوفٹ وئیر کا درجہ حاصل ہے  ۔ اس پروگرام  میں  صحیح بخاری کے ابواب کی فہرست اور حدیث  نمبر پر کلک کرنے سے ایک  لمحہ میں  مطلوبہ باب  ،متنِ حدیث ، تک  پہنچ  کر  استفادہ کیا جاسکتاہے  ۔اور یونیکوڈ  فائل سے  کسی  بھی  مطلوبہ  حدیث کا  متن او راس کا ترجمہ کاپی کیا جاسکتا ہے ۔قارئین کی آسانی کی  کے پیش  نظر  حدیث کوتلاش کرنے کےلیے  صحیح بخاری کی احادیث کو سات حصوں میں  تقسیم  کر کے  فہارس  ابواب  اور حدیث نمبرز  پر لنک لگا  دئیے گئے  ہیں ۔اللہ تعالی ٰ کتاب ہذا کو تیار کرنے والوں کی تمام مساعی جمیلہ کو شرف  قبولیت سے  نوازے اور  اسے اہل اسلام کے  لیے نفع بخش بنائے ۔ (آمین)
سات حصوں میں موجود احادیث کی  تقسیم حسب  ذیل ہے ۔
حصہ 1 :  کتاب الوحی سے کتاب الجمعہ  احادیث:1سے941
حصہ2 :  کتاب صلاۃ الخوف سے کتاب فضائل مدینہ  احادیث 942 سے 1890
حصہ3 :  کتاب الصوم سے کتاب الوصایا  احادیث 8191سے 2781
حصہ4 :  کتاب الجھاد والسیر سے کتاب فضائل الصحابہ  احادیث 2782سے 3775
حصہ5 :  کتاب مناقب الانصار سے کتاب التفسیر  احادیث3776سے 4835
حصہ6 :  کتاب التفسیر (بقیہ) سے کتاب اللباس    احادیث4836سے 5969
حصہ7 :  کتاب الادب سے کتاب التوحید  احادیث5960سے 7563

 

عناوین صفحہ نمبر
قرآن پاک کی تفسیر کے بیان میں
کتاب قرآن کے فضائل کا بیان
کتاب نکاح کے مسائل کا بیان
کتاب طلاق کے مسائل کا بیان
کتاب خرچہ دینے کے بیان میں
کتاب کھانوں کے بیان میں
کتاب عقیقہ کے مسائل کا بیان
کتاب ذبیح اور شکار کے بیان میں
کتاب قربانی کے مسائل کا بیان
کتاب مشروبات کے بیان میں
کتاب امراض اور ان کے علاج کے بیان میں
کتاب دوا اور علاج کے بیان میں
کتاب لباس کے بیان میں

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
14 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam ادب اسلام اہل حدیث زبان زنا سلفی شروحات حدیث طلاق قربانی قرض معاملات نماز

صحیح بخاری (داؤد راز)۔جلد 4

صحیح بخاری (داؤد راز)۔جلد 4

 

مصنف : محمد بن اسماعیل بخاری

 

صفحات: 731

امام بخاری ﷫ کی شخصیت اور   ان کی صحیح بخاری کسی تعارف کی محتاج نہیں سولہ سال کے طویل عرصہ میں امام   بخاری نے 6 لاکھ احادیث سے اس کا انتخاب کیا اور اس کتاب کے ابواب کی ترتیب روضۃ من ریاض الجنۃ میں بیٹھ کر فرمائی اور اس میں صرف صحیح احادیث کو شامل کیا ۔ جسے اللہ تعالیٰ نے صحت کے اعتبار سےامت محمدیہ میں’’ اصح الکتب بعد کتاب اللہ‘‘ کادرجہ عطا کیا بے شماراہل علم اور ائمہ حدیث ننے   مختلف انداز میں مختلف زبانوں میں صحیح بخاری کی شروحات لکھی ہیں ان میں سے  فتح الباری از ابن حافظ ابن حجر عسقلانی ﷫ کو امتیازی مقام   حاصل ہے ۔اردو زبان میں سب سے پہلے علامہ وحید الزمان ﷫ نے صحیح بخاری کا ترجمہ کیا ہے ان کےبعد کئی شیوخ الحدیث اور اہل علم نے صحیح بخاری کا ترجمہ حواشی اور شروح کا کام سرانجام دیا ۔ان میں سلفی منہج پر لکھی جانے والی فیض الباری ازابو الحسن سیالکوٹی ، توفیق الباری اور   حافظ عبدالستار حماد ﷾ کی شرح بخاری قابل ذکر ہیں ۔ زیر تبصرہ صحیح بخاری کا سلیس ترجمہ مع مختصر فوائد بر صغیر پاک وہند کے مشہور ومعروف عالم دین شیخ الحدیث مولانا   محمدداؤد راز﷫ کا ہے جس کا لفظ لفظ قاری کومحظوظ کرتا ہے اور دامن دل کوکھینچتا ہے۔ مولانا نے اپنی زندگی میں ہی   1392ھ میں اسے   الگ الگ پاروں کی صورت میں شائع کروایا بعد ازاں 2004 ء میں مکتبہ   قدوسیہ نے بڑی محنت شاقہ سے کمپیوٹر ٹائپ کر کے بڑے اہتمام سے آٹھ   جلدوں شائع کیا تو اسے بہت قبول عام حاصل ہوا ۔ پھراس کے بعد کئی مکتبات نےبھی شائع کیا زیر تبصرہ نسخہ مرکزی جمعیت اہل حدیث ۔ہند کی طرف سے طبع شدہ ہے جسے انہوں نے مکتبہ قدوسیہ،لاہور کی اجازت سے ہندوستان سے شائع کیا ۔

 

فہرست مضامین
   کتاب الشرکۃ
19    دو دو کھجوریں ملا کر کھانا کسی کو جائز نہیں۔۔۔
19    مشترک چیزوں کی انصاف کے ساتھ ٹھیک قیمت۔۔۔
20    تقسیم میں قرعہ ڈال کر حصے لےنا
22    یتیم کا دوسرے وارثوں کے ساتھ شریک ہونا
23    زمین مکان وغیرہ میں شرکت کا بیان
23    جب شریک لوگ گھروں وغیرہ کو تقسیم۔۔۔
24    سونے، چاندی اور ان تمام چیزوں میں شرکت۔۔۔
25    مسلمان کا مشرکین اور ذمیوں کے ساتھ کھیتی کرنا
25    بکریوں کا انصاف کے ساتھ تقسیم کرنا
27    اناج وغیرہ میں شرکت کا بیان
27    غلام لونڈی میں شرکت کا بیان
29    قربانی کے جانوروں اور اونٹوں میں شرکت۔۔۔
   تقسیم میں ایک اونٹ کو دس بکریوں کے برابرسمجھنا
30    کتاب الرھن
32    آدمی اپنی بستی میں ہو اور گروی رکھے
32    زرہ کو گروی رکھنا
35    ہتھیار گروی رکھنا
35    گروی جانور پر سواری کرنا اور دودھ پینا۔۔۔
   یہود وغیرہ کے پاس کوئی چیز گروی رکھنا
   راہن اورمرتہن میں اگر اختلاف ہو۔۔۔
   کتاب العتق
37    غلام آزاد کرنے کا ثواب
38    کیسا غلام آزاد کرنا افضل ہے؟
39    سورج گرہن اور دوسری نشانیوں۔۔۔
39    اگر مشترک غلام یا لونڈی کو آزاد کر دے
42    اگر کسی شخص نے ساجھے کے غلام میں۔۔۔
43    اگر بھول چوک کر کسی کی زبان سے۔۔۔
44    ایک شخص نے آزاد کرنے کی نیت سے۔۔۔
46    ام ولد کا بیان
47    مدبر کی بیع کا بیان
48    ولاء بیچنا یا ہبہ کرنا
49    اگر کسی مسلمان کا مشرک بھائی۔۔۔
50    مشرک غلام کو آزاد کرنے کا ثواب۔۔۔
51    اگر عربوں پر جہاد ہو اور کوئی ان کو غلام بنائے۔۔۔
52    جواپنی لونڈی کو ادب اور علم سکھائے۔۔۔
56    غلام تمہارے بھائی ہیں پس ان کو بھی۔۔۔
57    جب غلام اپنے رب کی عبادت بھی اچھی۔۔۔
58    غلام پر دست درازی کرنا۔۔۔
59    جب کسی کا خادم کھانا لے کر آئے
60    غلام اپنے آقا کے مال کا نگہبان ہے۔۔۔
61    اگرکوئی غلام لونڈی کو مارے تو۔۔۔
62    کتاب المکاتب
63    لونڈی غلام کو زنا کی جھوٹی تہمت۔۔۔
64    مکاتب اور اس کی قسطوں کا بیان۔۔۔
65    مکاتب سے کونسی شرطیں کرنا درست ہیں۔۔۔
66    اگر مکاتب دوسروں سے مدد چاہے۔۔۔
67    جب مکاتب اپنے تئیں بیچ ڈالنے پر راضی ہو
68    اگر مکاتب کہے مجھ کوخرید کر آزاد۔۔۔
69    کتاب الہبہ
70    تھوڑی چیز ہبہ کرنا
71    جو اپنے دوستوں سے کوئی چیز تحفہ مانگے۔۔۔
72    پانی ( یا دودھ ) مانگنا
73    شکار کا تحفہ قبول کرنا
74    ہدیہ کا قبول کرنا
75    اپنے کسی دوست کو اس دن تحفہ بھیجنا۔۔۔
76    جو تحفہ واپس نہ کیا جانا چاہئے
77    جن کے نزدیک غائب چیز کا ہبہ کرنا درست ہے
78    ہبہ کا معاوضہ ( بدلہ ) ادا کرنا
79    اپنے لڑکے کو کچھ ہبہ کرنا
80    ہبہ کے اوپر گواہ کرنا
81    خاوند کا اپنی بیوی کو اور بیوی کا۔۔۔
82    اگر عورت اپنے خاوند کے سوا کسی کو کچھ ہبہ۔۔۔
83    ہدیہ کا اولین حقدار کون ہے؟
84    جس نے کسی عذر سے ہدیہ قبول نہیں کیا
85    اگر ہبہ یا ہبہ کا وعدہ کرکے کوئی مر جائے۔۔۔
86    غلام لونڈی اور سامان پر کیوں کر قبضہ۔۔۔
87    اگر کوئی ہبہ کرے اور موہوب لہ۔۔۔
88    اگر کوئی اپنا قرض کسی کو ہبہ کردے
89    ایک چیز کئی آدمیوں کو ہبہ کرے۔۔۔
90    جو چیز قبضہ میں ہو یا نہ ہو۔۔۔
91    اگر کئی شخص کئی شخصوں کو ہبہ کریں
92    اگر کسی کو کچھ ہدیہ دیا جائے۔۔۔
93    اگر کوئی شخص اونٹ پر سوار ہو۔۔۔
94    ایسے کپڑے کا تحفہ جس کا پہننا مکروہ ہو
95    مشرکین کا ہدیہ قبول کرلینا
96    مشرکوں کو ہدیہ دینا
97    کسی کے لیے حلال نہیں کہ اپنا دیا ہوا ہدیہ۔۔۔
98    جس نے کسی سے گھوڑا عاریتاً لیا
99    دلہن کے لیے کوئی چیز عاریتاً لینا
100    تحفہ منیحہ کی فضیلت کے بارے میں
101    عام دستور کے مطابق کسی نے۔۔۔
102    جب کوئی کسی شخص کو گھوڑا سواری۔۔۔
103    کتاب الشہادات
104    گواہیوں کا پیش کرنا مدعی کے ذمہ ہے
105    اگر ایک شخص دوسرے کے نیک عادات۔۔۔
106    جو اپنے تئیں چھپا کر گواہ بنا ہو۔۔۔
107    جب ایک یا کئی گواہ کسی معاملے کے۔۔۔
108    گواہ عادل معتبر ہونے ضروری ہیں
109    کسی گواہ کو عادل ثابت کرنے کے لیے۔۔۔
110    نسب اور رضاعت میں جو مشہور ہو۔۔۔
111    زنا کی تہمت لگانے والے اور چور اور حرام کار۔۔۔
112    اگر ظلم کی بات پر لوگ گواہ بننا چاہیں۔۔۔
113    جھوٹی گواہی دینا بڑا گناہ ہے
114    اندھے آدمی کی گواہی۔۔۔
115    عورتوں کی گواہی کا بیان
116    باندیوں اور غلاموں کی گواہی کا بیان
117    دودھ کی ماں کی گواہی کا بیان
118    عورتوں کا آپس میں ایک دوسرے۔۔۔
119    جب ایک مرددوسرے مرد کو اچھا کہے۔۔۔
120    کسی کی تعریف میں مبالغہ کرنا مکروہ ہے۔۔۔
121    بچوں کا بالغ ہونا اور ان کی شہادت کا بیان۔۔۔
122    مدعیٰ علیہ کو قسم دلانے سے پہلے۔۔۔
123    دیوانی اور فوجداری دونوں مقدموں۔۔۔
124    اگر کسی نے کوئی دعویٰ کیا۔۔۔
125    عصر کی نماز کے بعد۔۔۔
126    مدعیٰ علیہ پر جہاں قسم کھانے۔۔۔
127    جب چند آدمی ہوں اور ہر ایک قسم۔۔۔
128    اللہ تعالیٰ کا سورۃ آل عمران میں فرمان کہ
129    کیوں کر قسم لی جائے
130    جس مدعی نے قسم کھالینے کے بعد۔۔۔
131    جس نے وعدہ پورا کرنے کا حکم دیا
132    مشرکوں کی گواہی قبول نہ ہوگی
133    مشکلات کے وقت قرعہ اندازی کرنا
134    کتاب الصلح
135    لوگوں میں صلح کرانے کا ثواب
136    دو آدمیوں میں میل ملاپ کرانے۔۔۔
137    حاکم لوگوں سے کہے ہم کو لے چلو۔۔۔
138    اگر میاں بیوی صلح کرلیں تو۔۔۔
139    اگر ظلم کی بات پر صلح کریں۔۔۔
140    صلح نامہ میں لکھنا کافی ہے
141    مشرکین کے ساتھ صلح کرنا
142    دیت پر صلح کرنا۔۔۔
143    حسن ؓکے متعلق نبی کریم کا فرمان۔۔۔
144    کیا امام صلح کے لیے فریقین کو اشارہ۔۔۔
145    اگر حاکم صلح کرنے کے لیے اشارہ کرے۔۔۔
146    میت کے قرض خواہوں اور وارثوں میں صلح۔۔۔
147    کچھ نقد دے کر قرض کے بدلے صلح کرنا
148    کتاب الشروط
149    اسلام میں داخل ہوتے وقت شرطیں لگانا۔۔۔
150    پیوند لگانے کے بعد اگر کھجور کا درخت ۔۔۔
151    بیع میں شرطیں کرنے کا بیان
152    اگر بیچنے والے نے کسی خاص مقام۔۔۔
153    معاملات میں شرطیں لگانے کا بیان
154    نکاح کے وقت مہر کی شرطیں
155    مزارعت کی شرطیں جو جائز ہیں
156    جو شرطیں نکاح میں جائز نہیں ان کا بیان
157    جو شرطیں حدود اللہ میں جائز نہیں۔۔۔
158    اگر مکاتب اپنی بیع پر اس لیے راضی۔۔۔
159    طلاق کی شرطیں ( جو منع ہیں(
160    ولاء میں شرط لگانا
161    مزارعت میں مالک نے کاشکار۔۔۔
162    جہاد میں شرطیں لگانا۔۔۔
163    قرض میں شرط لگانا
164    مکاتب کا بیان اور جو شرطیں۔۔۔
165    اقرار میں شرط لگانا یا استثناء کرنا۔۔۔
166    وقف میں شرطیں لگانے کا بیان
167    کتاب الوصایا
168    اس بارے میں وصیتیں ضروری ہیں
169    اپنے وارثوں کو مالدار چھوڑنا۔۔۔
170    تہائی مال کی وصیت کرنے کا بیان
171    وصیت کرنے والا اپنے وصی سے کہے۔۔۔
172    اگر مریض اپنے سر سے کوئی اشارہ۔۔۔
173    وارث کے لئے وصیت کرنا جائز نہیں ہے
174    موت کے وقت صدقہ کرنا
175    اللہ تعالیٰ کا ( سورۃ نساء میں ) یہ فرمانا کہ۔۔۔
176    اللہ تعالیٰ کے ( سورۃ نساء میں ) یہ فرمانے۔۔۔
177    اگر کسی نےعزیزوں پر کوئی چیز وقف کی۔۔۔
178    کیا عزیزوں میں عورتیں اور بچے۔۔۔
179    کیا وقف کرنے والا اپنے وقف سے۔۔۔
180    اگر وقف کرنے والا مال وقف کو۔۔۔
181    اگر کسی نے یوں کہا کہ میرا گھر اللہ کی راہ۔۔۔
182    کسی نے کہا کہ میری زمین یا باغ ماں کی طرف۔۔۔
183    اپنی کوئی چیز یا لونڈی غلام یا جانور صدقہ ۔۔۔
184    اگر صدقہ کے لئے کسی کو وکیل کرے۔۔۔
185    اگر کسی کو اچانک موت آجائے۔۔۔
186    وقف اور صدقہ پر گواہ کرنا
187    اللہ تبارک وتعالٰی کا ارشاد کہ یتیموں کو ان کا مال۔۔۔
188    اللہ تبارک وتعالٰی کا ارشاد کہ یتیموں کی آزمائش۔۔۔ .
189    وصی کے لئے یتیم کے مال میں تجارت۔۔۔
190    اللہ تبارک وتعالٰی کا ارشاد کہ جو یتیموں کا مال ظلم۔۔۔ .
191    اللہ تبارک وتعالٰی کا ارشاد کہ لوگ یتیموں کے بارے میں۔۔۔ .
192    سفر اور حضر میں یتیم سے کام لینا۔۔۔
193    اگر کسی نے ایک زمین وقف کی۔۔۔

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
15 MB ڈاؤن لوڈ سائز

Categories
Islam اہل بیت حج حلال و حرام طلاق نماز وضو

منہیات کا انسائیکلو پیڈیا ۔۔ رک جائیے

منہیات کا انسائیکلو پیڈیا ۔۔ رک جائیے

 

مصنف : الشیخ ابوذرمحمدعرفان

 

صفحات: 247

 

شریعت اسلامی کا بہترین اور مختصر قانون یہ ہے کہ جو رسول اللہ ﷺ فرمان جاری فرمائیں اس کو مان لو اور جس سے روکنے کا حکم سنائیں اس سے رک جاؤ۔ آپ ﷺ اطاعت و فرمانبرداری ہی فقط وہ چیز ہے جس کی بدولت آدمی راہ راست پر چل کر جنت تک پہنچ سکتا ہے ورنہ ذلت و رسوائی اس کا مقدر بن جائے گی۔ اس کتاب میں وہ تمام منہیات جو قرآن میں یا صحیح احادیث میں آئی ہیں، یعنی وہ تمام امور جن سے اللہ اور اس کے رسول ﷺ نے ہم مسلمانوں کو روکا ہے، کو جمع کر دیا گیا ہے۔ یہ بلاشبہ نہایت ہی عظیم ذخیرہ ہے۔ آج اگر ہم خود سے وعدہ کر لیں کہ اللہ اور اس کے رسول ﷺ نے جس جس چیز سے منع کیا ہے، ہم اسے اپنی زندگی سے نکال باہر کریں گے، تو صرف اس کتاب کا مطالعہ ہی ان شاء اللہ کافی رہے گا۔

عناوین صفحہ نمبر
مقدمہ 19
اطاعت ہوتو ایسی 27
نبی ﷺکی اتباع میں کانوں میں انگلیاں 27
اتباع سےاعراض وگمراہی 28
مدینہ کی گلیوں میں شراب بہنے لگی 28
کپڑ ے دیواروں سےالجھ گئے 28
آپ ﷺکی محبت میں رشتوں کی قربانیاں 29
جنت میں رفاقت رسول  ﷺپانےوالے 29
امیر المومنین مسکر ادیئے 30
صحابی نےانگوٹھی پھینک  دی 31
صحابہ  رضوان اللہ علیہم اجمعین نے ہانڈیاں الٹادیں 31
خریم اسدی واقع کمال تھے 31
قباء والوں نےنماز میں قبلہ بدل لیا 32
صحابہ نےانگوٹھیاں بنوالیں 33
عبداللہ بن عمر ؓاور اتباع نبی ﷺ 33
ابن عمر ؓ نبی ﷺکے عبادت کےمقامات پرعبادت کرتے تھے 34
عبداللہ بن عمر ؓ سواری کی طر ف منہ کرکے نماز ادارکرتے تھے 35
نبی ﷺکے سکھائے ہوئے کلمات سے کچھ ردوبدل نہیں 35
ابن عمر ؓ حج میں آپﷺ کے نقش قدم پر 36
نبی ﷺکےاشارے پرقرض معاف 36
صحابی نےنماز کے آگے سے گزرنے والے کودھکادے دیا 37
سیدناعمر ؓ نے حجر اسودکو بوسہ کیوں دیا 38
المنہیات من القرآن کریم 39
المنہیات من الاحادیث النبویﷺ 66
آئینہ مضامین 67
کتاب الطہارۃ (طہارت کےمسائل ) 68
قضائے حاجت کے لیےقبلے کی جانب منہ یاپشت کرنے کی ممانعت 69
ہڈی اور گوبرسےاستنجاکرنے کی ممانعت 69
کوئلے سےاستنجاکر نے کی ممانعت 70
برتن میں سانس لینے اور داہنےہاتھ سے استنجارکرنے کی ممانعت 70
کھڑے پانی میں پیشاب کرنے اور پھراس میں غسل کرنے کی ممانعت 71
کھڑے ہوکر پیشاب کرناممنوع ہے 72
قضائے حاجت کےوقت قبلہ کی طرف منہ کرنے کی ممانعت 72
کسی جانور کی بل میں پیشاب کرنے کی ممانعت 73
غسل خانے میں پیشاب کرنے کی ممانعت 74
شرمگاہ کو دائیں ہاتھ سےچھونے کی ممانعت 74
کیاعورت کےبچے ہوئے پانی سےوضوکرناممنوع ہے؟ 75
عورت  کےبچے ہوئے پانی سےغسل کرنے کی ممانعت 76
کھڑے پانی میں پیشا ب کرنے کی ممانعت 76
بول وبراز  روک کر نماز پڑھنے کی ممانعت 77
المنہیات 78
طہارت کےبغیر نماز قبول نہیں ہوتی 78
قضائے حاجت کےوقت زمین کےقریب ہونے سے پہلے کپڑانہیں اٹھاناچاہیے 78
دوران قضائے حاجت باتیں کرنامنع ہے 78
وہ جگہیں جہاں قضائے حاجت کے لیے بیٹھنامنع ہے 79
حائضہ عورت کانماز پڑھنامنع ہے 79
حالت حیض میں عورت کاروزہ رکھنامنع ہے 79
حائضہ سےہمبستر ی کرنامنع ہے 79
حالت حیض میں طلاق دینا منع ہے 79
کتاب الصلوۃ (نماز کےمسائل ) 81
طلوع آفتاب اور غروب آفتاب کےوقت نماز پڑھنے کی ممانعت 82
نماز کےمکروہ اوقا ت 82
عصر کےبعدنماز پڑھنےکی ممانعت 83
دونوں پہلوؤں پرہاتھ رکھ کر نماز پڑھنے کی ممانعت 84
نماز میں کپڑالٹکانے اور منہ ڈھانپنے کی ممانعت 85
نماز میں کوے کی طر ح ٹھونگیں مارنے کی ممانعت 85
حالت نماز میں احتباء کی ممانعت 86
حالت نماز میں سامنےاور دائیں جانب تھوکنے کی ممانعت 87
نماز میں ہاتھ پرٹیک لگاکر بیٹھنے کی ممانعت 87
جوڑاباندھ کر نماز پڑھنے کی ممانعت 88
باتیں کرنےوالے کےپیچھے نماز پڑھنے کی ممانعت 88
ریشم پہن کرنماز پڑھنے اور رکوع میں قرآن  پڑھنے کی ممانعت 89
کیاآدمی فقط ازار باندھ کر نماز پڑھ سکتاہے؟ 90
نماز میں بازوبچھانااور نماز کے لیےمسجدمیں مخصوص جگہ متعین کرنے کی ممانعت 91
نماز جمعہ سےقبل مسجدمیں حلقہ بناکے بیٹھنے کی ممانعت 92
کسی کو اٹھاکر خوداس کی جگہ بیٹھنے کی ممانعت 92
جمعہ کےدن گوٹ مارکر بیٹھنے کی ممانعت 93
مسجدمیں گمشدہ چیز کااعلان کرناجائزنہیں 94
مساجدمیں اشعار کی ممانعت 94
مسجدمیں خریدوفروخت کی ممانعت 95
مساجدمیں حدودقائم کرناحرام ہے 96
کچالہسن اور پیازکھاکر مسجدمیں آنے کی ممانعت 96
المنہیات 98
قبرستان میں نماز پڑھنامنع ہے 98
حمام میں نما ز پڑھنامنع ہے 98
اونٹوں کےباڑے میں نماز پڑھنامنع ہے 98
مسجدمیں تیز چل کر آنامنع ہے 98
ثواب کی غرض سےتین مساجد کے علاوہ سفر کرنامنع ہے 99
نمازی کےآگے سےگزرنامنع ہے 99
رکو ع اور سجدےمیں قرآن پڑھنامنع ہے 99
دوران نماز آسمان کی طر ف دیکھنا منع ہے 99
نماز کے لیے وضو کے بعد تشبیک منع ہے 100
نماز میں ادھر ادھر جھانکناممنوع ہے 100
دوران نماز انگلیاں چٹخانامنع ہے 100
دوران نماز کھاناپینامنع ہے 100
اقامت کےبعدنفل نماز پڑھناممنوع ہے 101
عورتوں کاخوشبولگاکر مسجدمیں آناممنوع ہے 101
دوران خطبہ جمعتہ المبارک باتیں کرناممنوع ہے 101
کتاب الجنائز (جنازے کے مسائل ) 102
قبروں پرلیپ کرنے اور کچھ لکھ کرلگانے کی ممانعت 103
قبرپرعمارت(گنبد،قبہ )بنانے کی ممانعت 104
قبروں پربیٹھنے اورقبروں کو پختہ بنانے کی ممانعت 104
موت کی تمناکرنے کی ممانعت 105
جس جنازہ میں نوحہ کرنےوالیاں موجودہوں اس جنازے میں شرکت کی ممانعت 106
میت پرمرثیہ خوانی کرنےکی ممانعت 106
میت پرنوحہ کرنےکی ممانعت 107
المنہیات 109
قریب المرگ کےلیے ثلث مال سے زائدمیں وصیت کرناممنوع ہے 109
ورثاء کےلیے وصیت جائز نہیں 109
جاہلیت کےطر یقہ سے موت کی خبر دیناممنو ع ہے 109
آگ کے ساتھ جنازہ میں شرکت ممنوع ہے 109
جنازہ رکھنے سے قبل بیٹھناممنوع ہے 110
جنازہ کےساتھ چلتے ہوئے اونچی آواز میں ذکر کرنامنع ہے 110
تین وقتوں میں تدفین ممنو ع ہے 110
مجبوری کے بغیر رات کو تدفین ممنوع ہے 110
قبروں کو مسجدیں بناناممنوع ہے 111
کسی کی قبر کو عیدمیلہ گاہ بناناممنوع ہے 111
کتاب الزکوۃ (زکوۃ کے مسائل) 112
زکو ۃ میں بہت عمدہ مال لینے کی ممانعت 113
المنہیات 114
زکو ۃ میں بوڑھا،بھینگا،عیب دار جانور دینے کی ممانعت 114
گھٹیااور ردی قسم کی اشیاء زکوۃ میں دیناجائز نہیں 114
بنوہاشم اہل بیت پرزکوۃ حرام ہے 114
بھیک مانگنے کاپیشہ بنالینے کی ممانعت 115
زکو ۃ میں حیلہ اختیار کرنےکی ممانعت 115

ڈاؤن لوڈ 1
ڈاؤن لوڈ 2
3.6 MB ڈاؤن لوڈ سائز